Friday , September 21 2018
Home / Top Stories / کے سی آر حکومت کیخلاف جنگ شروع : کانگریس

کے سی آر حکومت کیخلاف جنگ شروع : کانگریس

ٹی آر ایس کو دفن کرکے رہیں گے: اتم کمار ریڈی
’’کے سی آر ہٹاؤ ، تلنگانہ بچاؤ ‘‘کے نعرے
کے سی آر تلنگانہ کیلئے ’’منحوس‘‘
تلنگانہ کی تشکیل صرف ایک خاندان کیلئے نہیں کی گئی
کانگریس ارکان کی 48 گھنٹے طویل بھوک ہڑتال ختم

حیدرآباد۔ 15 مارچ (سیاست نیوز) صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی اتم کمار ریڈی نے کہا کہ حکومت کے خلاف کانگریس کی جنگ شروع ہوچکی ہے۔ ٹی آر ایس کو قبر میں دفنانے تک ختم نہیں ہوگی۔ ایک خاندان کیلئے علیحدہ تلنگانہ ریاست تشکیل نہیں دی گئی۔ کے سی آر کو اقتدار سے بے دخل کرنے کیلئے سماج کے تمام طبقات سے متحد ہوجانے کی اپیل کی۔ صدرنشین تلنگانہ جوائنٹ ایکشن کمیٹی پروفیسر کودنڈا رام نے گاندھی بھون پہنچ کر کانگریس کی بھوک ہڑتال سے اظہار یگانگت کیا۔ اسمبلی کی رکنیت سے محروم ہونے والے دو کانگریس کے ارکان اسمبلی کے وینکٹ ریڈی اور سمپت کمار کی 48 گھنٹوں کی بھوک ہڑتال کے اختتام کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے اتم کمار ریڈی نے کانگریس کے ارکان اسمبلی سے وضاحت طلب کیلئے بغیر رکنیت منسوخ کرنے کی کارروائی کو غیرقانونی اور غیردستوری قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس کے خلاف کانگریس پارٹی قانونی کارروائی کرے گی۔ کانگریس کے دور حکومت میں موجودہ گورنر پر ہریش راؤ نے خطبہ کی کاپی پھاڑ کر منہ پر پھینکی، ٹیبل پر چڑھ کر ان پر مائیک پھینکا تھا۔ وہ سب بھول کر اسی ہریش راؤ نے کانگریس کے دو ارکان اسمبلی کی رکنیت منسوخ کرنے اور باقی ارکان اسمبلی کو معطل کرنے کی قرارداد منظور کی ہے جس پر کانگریس نے حکومت کے خلاف جنگ کا اعلان کردیا ہے۔ ٹی آر ایس کو اقتدار سے بے دخل کرنے تک کانگریس کی جدوجہد جاری رہے گی۔ اس موقع پر صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی اتم کمار ریڈی قائدین اپوزیشن کے جانا ریڈی (اسمبلی)، محمد علی شبیر (کونسل)، پی اے سی صدرنشین گیتا ریڈی نے 48 گھنٹوں کی بھوک ہڑتال کرنے والے کانگریس کے دو ارکان اسمبلی کو لیمو کا جوس پلاتے ہوئے بھوک ہڑتال ختم کرائی۔ کانگریس قائدین و کارکنوں نے ’’کے سی آر ہٹاؤ ، تلنگانہ بچاؤ‘‘ کی نعرہ بازی کی۔ اتم کمار ریڈی نے چیف منسٹر کے سی آر کو تلنگانہ کیلئے ’’منحوس‘‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ سونیا گاندھی نے صرف ایک خاندان کیلئے علیحدہ تلنگانہ ریاست تشکیل نہیں دیا ہے بلکہ تلنگانہ کیلئے زندگیاں قربان کرنے کی تمنا رکھنے والے نوجوانوں کو خوشحال زندگی فراہم کرنے سماج کے تمام طبقات سے انصاف کرنے، تلنگانہ جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے صدرنشین پروفیسر کودنڈا رام، انقلابی شاعر غدر اور ویملا اکا کے علاوہ تحریک میں شامل تمام تنظیموں کے جذبات کا احترام کرنے کیلئے علیحدہ تلنگانہ ریاست تشکیل دی گئی ہے۔ جھوٹے وعدوں کے ذریعہ اقتدار حاصل کرنے والے کے سی آر نے 4 سال کے دوران ایک وعدے کو بھی پورا نہیں کیا۔ ریاست میں دوسری جماعتوں سے منتخب 25 ارکان اسمبلی کو حکمراں ٹی آر ایس میں شامل کرلیا۔ ان کے خلاف تین سال سے اسپیکر اسمبلی کے پاس شکایت زیرالتواء ہے جس کو مدھوسدن چاری نے کبھی کوئی جائزہ نہیں لیا اور نہ ہی کسی رکن اسمبلی کو سمن جاری کیا۔ کانگریس کے دو ارکان اسمبلی کی رکنیت صرف ایک دن میں منسوخ کردی گئی۔ کانگریس پارٹی اسپیکر سے اس دن کے واقعہ کی ویڈیو فوٹیج تحریری طور پر طلب کی ہے جس پر ابھی تک کوئی ردعمل کا اظہار نہیں کیا گیا۔ اتم کمار ریڈی نے کہا کہ ریاست کی ترقی کانگریس کی مرہون منت ہے۔ چیف منسٹر نے کانگریس کے خلاف جو بھی الزامات عائد کیا ہے، وہ مضحکہ خیز ہے۔ ٹی آر ایس حکومت کی ریاست میں الٹی گنتی شروع ہوچکی ہے۔ ریاست میں جب بھی انتخابات منعقد ہوں گے، کانگریس بھاری اکثریت سے کامیابی حاصل کرے گی۔ اتم کمار ریڈی نے کہا کہ کانگریس معطل کرنے یا رکنیت ختم کرنے سے ڈرنے گھبرانے والی نہیں ہے۔ اینٹ کا جواب پتھر سے دینا جانتی ہے۔ حکومت کی ناکامیوں کا کانگریس پردہ فاش کرے گی۔ ٹی آر ایس کو اقتدار سے بے دخل کرنے تک آرام نہیں کرے گی۔ کانگریس پارٹی کا ہر کارکن ، سپاہی کی طرح کام کرے گا۔ اس موقع پر ورکنگ پریسیڈنٹ ملو بٹی وکرامارک ، کانگریس کے ارکان اسمبلی ریونت ریڈی ، پدماوتی ریڈی، ڈی مادھو ریڈی، رام موہن ریڈی، جی چنا ریڈی، صدر پردیش کانگریس اقلیت ڈپارٹمنٹ محمد خواجہ فخرالدین، جنرل سیکریٹریز ایس کے افضل الدین، سید عظمت اللہ حسینی، عظمیٰ شاکر ، کانگریس قائدین فیروز خان ، محمد امتیاز کے علاوہ دوسرے موجود تھے۔بعدازاں کانگریس کارکنوں نے کے سی آر کا ’’ارتھی جلوس‘‘ بھی نکالا۔

TOPPOPULARRECENT