Monday , December 18 2017
Home / شہر کی خبریں / کے ٹی آر ناکام وزیر ‘ کارکردگی میں زیرو ‘ تشہیر میں ہیرو

کے ٹی آر ناکام وزیر ‘ کارکردگی میں زیرو ‘ تشہیر میں ہیرو

ناکامیوں کا ایوارڈ پیش کیا جانا چاہئے ۔ قائد اپوزیشن کونسل محمد علی شبیر کی پریس کانفرنس
حیدرآباد 26 ستمبر ( سیاست نیوز ) قائد اپوزیشن تلنگانہ قانون ساز کونسل محمد علی شبیر نے کے ٹی آر کو ناکام وزیر قرار دیتے ہوئے آئندہ ماہ اکٹوبر میں ہونے والے اسمبلی و کونسل اجلاس میں این آر آئی بل پیش کرنے کا حکومت سے مطالبہ کیا ۔ کل جماعتی وفد کو خلیجی ممالک کا دورہ کرواتے ہوئے حکام اور این آر آئیز سے ملاقات کروانے پر زور دیا ۔ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے محمد علی شبیر نے کہا کہ کے ٹی آر کام کے معاملے میں زیرو اور پبلسٹی کے معاملے میں ہیرو ہیں ۔ بحیثیت وزیر صنعت ناکام ہیں ۔ بتکماں کی ساڑیوں کی تقسیم میں بھی ناکام ہیں ۔ سرسلہ میں ساڑیاں تیار کرنے کا اعلان کرتے ہوئے سورت و دیگر مقامات سے غیر معیاری ناقص ساڑیاں منگوائی گئی ۔ این آر آئیز امور کی وزارت میں کے ٹی آر یکسر ناکام ہیں ۔ اقلیتوں کے صنعتی شعبہ کی حوصلہ افزائی میں ناکام ہیں ۔ حیدرآباد میں ایپل کمپنی لانے میں ناکام ہیں ۔ مجموعی طور پر کے ٹی آر عمل آوری میں ناکام اور حصول ایوارڈز میں کامیاب ہیں ۔ قائد اپوزیشن نے ناکام وزیر کے معاملے میں کے ٹی آر کو ایوارڈ کا مستحق قرار دیا ۔ انہوں نے کہا کہ سعودی اور یمن میں جنگ اور قطر سے تعلقات خراب ہونے کے بعد خلیجی ممالک میں مالیاتی بحران ہے ۔ کریم نگر ، نظام آباد ، عادل آباد ، محبوب نگر ، قطر ، کویت ، بحرین کے علاوہ دوسرے خلیجی ممالک میں کام کرنے والے تلنگانہ کے باشندے کئی مسائل سے دوچار ہیں ۔ انہیں ملازمت سے برطرف کردیا گیا ہے ۔ مناسب تنخواہیں اور بقایا جات ادا نہیں کی گئی اور کئی مزدور جیلوں میں بند ہیں اور وہاں سے انہیں فون پر اپنی مشکلات سنا رہے ہیں لیکن تلنگانہ حکومت پریشان حال این آر آئیز کے مسائل کو حل کرنے میں پوری طرح ناکام ہوگئی ۔ بن لادن کمپنی کے کئی یونٹس بند ہوجانے سے 76 ہزار مزدور بیروزگار ہوگئے ہیں جن میں 30 ہزار مزدوروں کا تعلق تلنگانہ سے ہے ۔ 2008 میں جب وہ وزیر این آر آئی امور تھے تب انہوں نے خلیجی ممالک پہونچکر سرکاری مصارف پر 25 ہزار مزدوروں کو ہندوستان لایا تھا جس میں دوبئی کے اجمیرا جیل میں بند 10 ہزار مزدور بھی شامل تھے ۔ تلنگانہ تحریک میں این آر آئیز نے ہر لحاظ سے ٹی آر ایس سے تعاون کیا اقتدار حاصل کرنے کے بعد ٹی آر ایس نے این آر آئیز کو فراموش کردیا ۔ محمد علی شبیر نے آئندہ ماہ منعقد ہونے والے اسمبلی و کونسل کے اجلاس میں این آر آئیز بل پیش کرنے کا حکومت سے مطالبہ کیا ۔ ساتھ ہی واپس ہونے والے این آر آئیز کے لیے راحت کاری کا پیاکیج پیش کرنے پر زور دیا ۔ این آر آئیز کے آفس کو سکریٹریٹ سے باہر منتقل کرنے کابھی مطالبہ کیا ۔ اسمبلی سیشن کے بعد ارکان اسمبلی ارکان قانون ساز کونسل پر مشتمل کل جماعتی وفد کو اسٹیڈی ٹور پر خلیجی ممالک روانہ کرنے وہاں کے حکام اور این آر آئیز سے ملاقات کرانے کا مطالبہ کیا ۔

TOPPOPULARRECENT