Sunday , July 22 2018
Home / Top Stories / کے ٹی آر کے بعد اندرا کرن ریڈی کو عوامی برہمی کا سامنا

کے ٹی آر کے بعد اندرا کرن ریڈی کو عوامی برہمی کا سامنا

ریاستی وزیر کے آبائی مقام ایلاپلی میں ڈبل بیڈ روم مکانات کی افتتاحی تقریب کا بائیکاٹ

حیدرآباد ۔ 5 ۔ اپریل : ( سیاست نیوز ) وزیر ہاوزنگ اندرا کرن ریڈی کو اپنے آبائی مقام ایلا پلی ضلع نرمل میں عوامی برہمی کا سامنا کرنا پڑا ہے ۔ ڈبل بیڈروم مکانات کی افتتاحی تقریب کا مقامی عوام نے بائیکاٹ کیا دور نہ جانے کی وزیر ہاوزنگ نے اپیل کی مگر عوام ان کے قریب نہیں آئے ۔ عوامی ناراضگی پر اندرا کرن ریڈی نے کنٹراکٹرس پر اپنا غصہ اتارا ۔ ٹی آر ایس کے انتخابی منشور میں غریب عوام کو ڈھائی لاکھ سے زیادہ ڈبل بیڈروم مکانات تعمیر کر کے دینے کا وعدہ کیا گیا تاہم 4 سال کے دوران حکومت نے صرف 10 ہزار مکانات ہی تعمیر کر کے دئیے جس سے عوام میں ناراضگی پائی جاتی ہے ۔ دو دن قبل کتہ گوڑم میں چیف منسٹر کے سی آر کے فرزند وزیر بلدی نظم و نسق کے ٹی آر کا طلبہ نے گھیراؤ کرکے ان کے اور حکومت کے خلاف نعرے بازی کی تھی جس سے انہیں پریشانی کا سامنا کرنا پڑا تھا ۔ اسمبلی حلقہ نرمل کی نمائندگی کرنے والے وزیر ہاوزنگ اندرا کرن ریڈی کو خود ان کے آبائی مقام ایلاپلی میں 45 ڈبل بیڈ روم مکانات کی افتتاحی تقریب میں عوامی ناراضگی کا سامنا کرنا پڑا ہے ۔ عوام نے وزیر موصوف پر صرف اپنے چند حامیوں کو ڈبل بیڈروم مکانات دینے کا الزام عائد کرتے ہوئے احتجاج کیا ۔ ڈبل بیڈ روم مکانات کیلئے دوسرے عوام اہل ہونے کے باوجود انہیں نظر انداز کرنے پر شدید ناراضگی جتائی ۔ عوام نے الزام عائد کیا کہ وزیر ہاوزنگ کے آبائی مقام پر غریب اور اہل افراد کے ساتھ مکانات کی تقسیم میں انصاف نہیں ہوا تو ریاست کے دوسرے مقامات پر انصاف کی کیسے توقع کی جاسکتی ہے ۔ شہ نشین سے خطاب کرنے والے وزیر ہاوزنگ اندرا کرن ریڈی نے تمام اہل افراد سے انصاف کرنے کا وعدہ کیا ۔ دور نہ جانے کی عوام سے اپیل کی مگر عوام ان کے قریب نہیں آئے ۔ افتتاحی تقریب کے اختتام کے بعد وزیر ہاوزنگ ناراض عوام کے پاس خود پہنچے اور انصاف کرنے کا تیقن دیا ۔ بعدازاں نرمل میں ڈبل بیڈ روم مکانات کی تعمیرات پر جائزہ اجلاس طلب کیا ۔ کنٹراکٹرس پر اپنی ناراضگی کا اظہار کیا ۔ جس پر کنٹراکٹرس نے وزیر موصوف کو بتایا کہ لوہے اور سمنٹ کی قیمتوں میں زبردست اضافہ ہوگیا ہے جس سے تعمیری مصارف بڑھ گئے ہیں اگر طئے شدہ قیمت پر مکانات تعمیر کئے جاتے ہیں تو انکے پاس سواء خود کشی کے دوسرا راستہ نہیں رہے گا ۔

TOPPOPULARRECENT