Friday , May 25 2018
Home / سیاسیات / گجرات انتخابات میں بی جے پی کی بآسانی کامیابی کی امید

گجرات انتخابات میں بی جے پی کی بآسانی کامیابی کی امید

پارٹی کوئی خطرہ نہیں ۔ لوک سبھا اور اسمبلیوں کے بیک وقت انتخابات کی حمایت ۔ چیف منسٹر بہار نتیش کمار کی صحافیوں سے بات چیت
پٹنہ 13 نومبر ( سیاست ڈاٹ کام ) چیف منسٹر بہار نتیش کمار نے آج پیش قیاسی کی کہ گجرات اسمبلی کے مجوزہ انتخابات میں بی جے پی بآسانی کامیابی حاصل کرلے گی ۔ انہوں نے کہا کہ ہوسکتا ہے کہ ریاست کے عوام اس جذبہ سے کام لیں کہ ملک کا وزیر اعظم ان کی ریاست سے تعلق رکھتا ہے ۔ نتیش کمار نے اپنے ہفتہ وار لوک سمواد پروگرام کے موقع پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ وہ نہیں سمجھتے کہ گجرات انتخابات میں بی جے پی کیلئے کوئی خطرہ ہے ۔ یہ میرا اپنا تجزیہ ہے ۔ انہوں نے خود سوال کیا کہ آیا عوام اس جماعت کے خلاف ووٹ دینگے جس کے تعلق سے ان کے ذہن میں یہ بات ہو کہ ان کی اپنی ریاست سے تعلق رکھنے والا فرد ملک کا وزیر اعظم ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں عوام کے اس جذبہ کو ذہن میں رکھنے کی ضرورت ہے ۔ جے ڈی یو صدر نے تاہم کانگریس کے نائب صدر راہول گاندھی کے تیور میں موثر تبدیلی اور ان کی عوامی مقبولیت میں اضافہ کے تعلق سے سوال کا جواب دینے سے گریز کیا ۔ راہول گاندھی گجرات اسمبلی انتخابات کی مہم میں جارحانہ تیور کے ساتھ میدان میں اترے ہیں۔ نتیش کمار نے کہا کہ انہوں نے راہول گاندھی کوطویل وقت سے دیکھا ہے ۔ وہ نہیں جانتے کہ اب ان کے موقف اور تیور میں کیا تبدیلی آئی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جے ڈی یو نے گجرات انتخابات میں تنہا مقابلہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور وہ کچھ نشستوں پر اپنے امیدوار نامزد کریگی ۔ نتیش کمار جے ڈی یو کے سربراہ ہیں اور وہ بہار میں بی جے پی کے ساتھ مخلوط حکومت کی قیادت کرتے ہیں۔ ان سے گجرات اسمبلی انتخابات کے تعلق سے سوال کیا گیا تھا جس کو 2019 کے لوک سبھا انتخابات سے قبل سیمی فائنل قرار دیا جا رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں ایسی صورتحال ہے جب ہر سال کسی نہ کسی حصے میں انتخابات ہوتے ہیں اور ہر انتخاب کو سیمی فائنل قرار دیا جاتا ہے یہ صورتحال اسی وقت بدل سکتی ہے جب پارلیمانی ‘ اسمبلی اور مجالس مقامی انتخابات بیک وقت منعقد کئے جائیں جیسا بہت پہلے ہوتا تھا ۔ ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے نتیش کمار نے کہا کہ وہ شخصی طور پر پارلیمنٹ اور ریاستی اسمبلیوں کے بیک وقت انتخابات کے حامی ہیں لیکن مستقبل قریب میں ایسا ہونا ممکن نظر نہیں آتا ۔ انہوں نے کہا کہ گذشتہ برسوں میں کئی ریاستوں میں وسط مدتی انتخابات منعقد ہوئے جن کے نتیجہ میں شیڈول متاثر ہوگیا ۔ لوک سبھا انتخابات کے اعلان کے وقت اگر کسی ریاستی اسمبلی کی معیاد پوری نہ ہو تو وہ بیک وقت انتخابات کیلئے تیار نہیں ہوسکتی ۔ تاہم یہ ایسا مسئلہ ہے جس پر قومی سطح پر مباح ہونے چاہئیں۔ اس سلسلہ میں دستوری امکانات کا بہرصورت جائزہ لیا جانا چاہئے ۔ گجرات اسمبلی کیلئے دو مراحل میں 9 اور 14 ڈسمبر کو رائے دہی ہوگی ۔ ووٹوں کی گنتی کا کام 18 ڈسمبر کو کیا جائیگا ۔ ایک اور سال کا جواب دیتے ہوئے نتیش کمار نے کہا کہ ایودھیا ‘ دفعہ 370 اور یکساں سیول کوڈ جیسے مسائل پر ان کی پارٹی کے موقف میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے ۔ نتیش نے 2013 میں بی جے پی سے قطع تعلق کرلیا تھا تاہم اب انہوں نے دوبارہ بی جے پی سے اتحاد کرتے ہوئے اپنی حکومت کو برقرار رکھا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ گئو رکھشا کے مسئلہ پر بھی انہوں نے وزیر اعظم سے بات کی ہے اور مودی نے ان کے اس خیال سے اتفاق کیا ہے کہ جو لوگ قانون کی خلاف ورزی کرتے ہیں ان کے خلاف قانون کے مطابق سخت کارروائی کی جانی چاہئے ۔

TOPPOPULARRECENT