Monday , November 20 2017
Home / Top Stories / گجرات میں سومناتھ مندر اور اہم تنصیبات پر سکیورٹی

گجرات میں سومناتھ مندر اور اہم تنصیبات پر سکیورٹی

پاکستان سے دہشت گرد گھس آنے کی انٹلیجنس اطلاع ، کچھ میں کئی مقامات پر دھاوے

احمدآباد۔ 6 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) گجرات میں آج دس لشکر طیبہ اور جیش محمد سے وابستہ دہشت گردوں کے گھسنے کی انٹلیجنس اطلاعات کے بعد انتہائی سخت چوکسی اختیار کرلی گئی۔ ریاست کے مختلف مقامات بشمول ’’کچھ‘‘ میں دھاوے اور اہم تنصیبات و حساس علاقوں میں سکیورٹی بڑھادی گئی۔ اس کے علاوہ این ایس جی ٹیموں کو تیار رہنے کا حکم دیا گیا ہے۔ تمام پولیس ملازمین بشمول عہدیداروں کی رُخصت منسوخ کی جارہی ہے اور ریاستی حکومت نے کل مہاشیوراتری تہوار کے پیش نظر تمام اہم منادر میں سکیورٹی بڑھا دی ہے۔ پولیس ذرائع نے بتایا کہ ساؤتھ کچھ پولیس سپرنٹنڈنٹ مارکنڈ چوہان کی زیرقیادت پولیس ٹیم نے بڑے پیمانے پر سکیورٹی آپریشن شروع کیا اور آج صبح پاکستانی سرحد سے متصل ضلع کچھ کے بھوج تعلقہ میں وارفورا گاؤں میں دھاوے کئے گئے۔ کچھ پولیس نے بھوج میں نورانی محل ہوٹل اور مسلم جماعت خانہ پر بھی دھاوے کئے۔ ریاستی حکومت کو کل مرکز سے یہ سنگین اطلاع ملی کہ دہشت گرد گجرات میں داخل ہوگئے ہیں۔ گجرات کے مملکتی وزیر داخلہ رجنی پاٹل نے بتایا کہ ہم نے فوری اجلاس منعقد کیا جس میں تمام اقدامات کے بارے میں جائزہ لیا گیا تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہ آئے۔ ریاستی حکومت نے کل مہاشیوراتری تہوار کے پیش نظر تمام اہم منادر کی سکیورٹی بڑھا دی ہے۔ رجنی پاٹل نے کہا کہ کل مہاشیوراتری کے موقع پر لاکھوں ’’بھگت‘‘ جوناگڑھ، سومناتھ اور دیگر مندوں کو جاتے ہیں چنانچہ ہم نے ان مندروں پر سخت سکیورٹی اقدامات کی ہدایت دی ہے۔ نیشنل سکیورٹی گارڈ (این ایس جی) کی دو ٹیموں کو جو تقریباً 200 افراد عملہ پر مشتمل ہے، دہلی سے گجرات روانہ کیا گیا ہے تاکہ کسی بھی امکانی صورتِ حال سے نمٹا جاسکے۔ سرکاری ذرائع نے یہ بات بتائی۔ پولیس اہلکاروں کو آج صبح سے ہی قومی شاہراہوں پر گشت کرتے دیکھا جارہا ہے۔ ایرفورس اور فوجی اڈوں کی سکیورٹی بھی بڑھادی گئی ہے ۔
رجنی پاٹل نے کہا کہ مرکز نے ہر ممکن مدد کی پیشکش کی ہے اور ٹاسک فورس یہاں پہنچ گئی جسے اس وقت اہم اور حساس مقامات کے بارے میں واقف کرایا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ’’کچھ‘‘ کے قریب ساحلی اور بارڈر پولیس کو چوکس کردیا گیا ہے۔ مقامی پولیس کو بھی ہدایت دی گئی ہے کہ وہ بی ایس ایف کے ساتھ ربط میں رہے۔ انہوں نے کہا کہ اب تک کوئی مشتبہ شخص کا پتہ نہیں چلا لیکن جو بھی اطلاعات ملی ہیں، وہ انتہائی سنگین نوعیت کی ہیں اور ہم اس سے نمٹنے کیلئے تمام تر ضروری اقدامات کررہے ہیں۔ ریاستی ڈائریکٹر جنرل پولیس پی سی ٹھاکر نے کل رات احکامات جاری کرتے ہوئے تمام ملازمین پولیس کی رُخصت منسوخ کردی۔ انہوں نے کہا کہ پولیس کسی بھی صورتحال کا سامنا کرنے تیار ہے۔ ہم پوری طرح چوکس ہیں اور کسی بھی صورتِ حال سے نمٹنے کیلئے تیار ہیں۔ مختلف مقامات پر تلاشی مہم شروع کردی گئی ہے اور حساس مقامات پر کڑی نظر رکھی جارہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT