Saturday , November 18 2017
Home / Top Stories / گجرات کے 2002ء مسلم کش فسادات

گجرات کے 2002ء مسلم کش فسادات

نئی دہلی۔ 20 اگست (سیاست ڈاٹ کام) گجرات کے 2002ء مسلم کش فسادات کے خلاف اس وقت کے چیف منسٹر نریندر مودی اور خطرناک حکومت کے خلاف آواز اٹھانے والے جرأت مند بہادر و سابق آئی پی ایس آفیسر سنجیو بھٹ کے فرزند شانتانو بھٹ نے اپنے والد کی اس تخریبی نظام کے خلاف جاری لڑائی کی پرزور حمایت کرتے ہوئے ان کی حوصلہ افزائی کی ہے اور اپنے والد کے حوصلوں و عزائم کو سلیوٹ (سلام) کیا ہے۔ حکومت نے انہیں غیرمجاز فحش حرکتوں کی بنیاد پر حال ہی میں ملازمت سے برطرف کیا ہے۔ ان کے فرزند شانتانو نے اپنے والد کی اس برطرفی پر جمعرات کے دن جذباتی احساسات کے ساتھ حوصلہ افزاء پیام روانہ کیا ہے۔ سنجیو بھٹ نے اپنے فرزند کے اس مکتوب کے بارے میں بتایا کہ میرے فرزند شانتانو لندن کے کنگس کراس اسٹیشن میں تھے جب انہیں سرویس سے برطرفی کی اطلاع ملی۔ انہوں نے اسٹیشن سے ہی مجھے پیام روانہ کیا ہے۔

جن کے جذبہ محبت پر مجھے اور شویتا کو بڑا فخر ہے۔ انہوں نے اپنے پیام میں لکھا ہے کہ انہیں یہ جان کر صدمہ ہوا ہے کہ جمہوری ہندوستان اپنے دوراندیش، دانشمند، ذہین ، دیانت دار، اصول پسند اور جرأت مند آفیسروں میں سے ایک آفیسر سے محروم ہوگیا۔ ڈیڈ (والد)! میں آپ کو آپ کی جرأت مندی پر سلیوٹ کرتا ہوں۔ آپ کے حوصلے کو سلام کرتے ہوئے آپ کا ممنون و مشکور ہوں کہ آپ کے فرزند کی حیثیت سے ایک تعلیم یافتہ فرد کے طور پر میں اس شاندار ملک کے بیدار اور ذمہ دار شہری کی حیثیت سے یہ کہتا ہوں کہ آپ نے جو کچھ کیا وہ درست تھا۔ آپ نے یہ غور کئے بغیر کہ ایک انڈین پولیس سرویس آفیسر کی حیثیت سے اپنے اور اپنے کیریئر کے ساتھ کیا انجام ہوگا، سچائی کا ساتھ دیا۔ میں ان تمام افراد کا بھی مشکور ہوں جنہوں نے آپ کے حق میں آواز اٹھائی اور احتجاج کیا۔ جن کے احتجاج کا اس بہرے سسٹم پر کوئی اثر نہیں ہوا۔ میں آپ کو آج یہ بتانا چاہوں کہ مجھے آپ پر بخر فخر ہے کہ آپ ایک طاقتور اور خطرناک تخریبی نظام کے خلاف پوری قوت اور حوصلے کے ساتھ نبردآزما ہیں۔ آپ پر میں یہ بھی واضح کرنا چاہتا ہوں کہ آپ کی یہ لڑائی ابھی ختم نہیں ہوئی ہے۔

یہ تو آغاز ہے ، آگے چل کر مزید خطرناک صورتحال پیدا ہوگی تو آپ ثابت قدمی کے ساتھ ڈٹ کر ان حالات کا مقابلہ کریں گے۔14 سال پہلے  2002ء میں جہاں آپ کھڑے تھے ، ہنوز وہیں مضبوطی سے ڈٹے ہوئے ہیں۔ آپ کا یہی حوصلہ، جرأت ، بے خوفی نے آپ کو خطرناک طاقتوں کے خلاف مقابلہ آرائی کا عزم عطا کیا ہے۔ 27 سال قبل آپ نے انڈین پولیس سرویس میں شامل ہوکر خطرناک سے خطرناک حالات کا سامنا کرنے کا عہد کیا تھا اور وہ اسی کے مطابق طاقتور اور خطرناک حکومت سے نبردآزما رہے ہیں اور یہی جذبہ جمہوری ملک کے لئے قابل فخر ہے۔ ہم بحیثیت فردِ خاندان ہمیشہ آپ کے ساتھ ہیں۔ آپ کی حمایت کرتے ہیں، اور آپ کو اسی طرح عزم مصمم کے ساتھ دیکھنا چاہتے ہیں۔ میں آپ کو مبارکباد دیتا ہوں کہ اس ظالم اور خطرناک حکومت کے چنگل سے آپ کو آزادی ملی ہے۔ اب آپ ان طاقتوں کے خلاف پہلے سے زیادہ مضبوط ارادے کے ساتھ مقابلہ کریں گے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ آپ کی زندگی کا نیا باب روشن اور تابناک ہوگا اور آپ کو اپنے کاموں سے خوشی اور اطمینان ملے گا۔ پورا خاندان اس وقت آپ کے ساتھ ہے اور آپ کے ہر فیصلے کی حمایت کرتا ہے۔ شانتانو بھٹ نے آکاشی بھٹ کے ساتھ آخر میں اپنے والد سے محبت کا اظہار کرتے ہوئے تحریر مکمل کی۔ سنجیو بھٹ نے بتایا کہ ملازمت سے میری برطرفی یقینی تھی کیونکہ ان لوگوں نے مکمل جانبدارانہ تحقیقات کرتے ہوئے مجھے پھانسنے کی کوشش کی اور اس میں کامیاب رہے۔ وزارت داخلہ سے مجھے برطرفی کا مکتوب موصول ہوا ہے۔ گجرات کے چیف سیکریٹری جی آر الوریا نے سنجیو بھٹ کی برطرفی کی توثیق کی ہے۔

TOPPOPULARRECENT