Friday , April 27 2018
Home / کھیل کی خبریں / گرانڈ ہوم کی جارحانہ بیٹنگ، پاکستان کو پھر شکست

گرانڈ ہوم کی جارحانہ بیٹنگ، پاکستان کو پھر شکست

 

ہملٹن ۔16 جنوری (سیاست ڈاٹ کام )کولن ڈی گرانڈ ہوم کی جارحانہ بیٹنگ کی بدولت نیوزی لینڈ نے پاکستان کو چوتھے ونڈے میچ میں شکست دے کر سیریز میں 4-0 کی برتری حاصل کر کے مہمان ٹیم کیلئے کلین سوئپ کا خطرہ پیدا کردیا ہے۔ہملٹن میں کھیلے گئے سیریز کے چوتھے ون ڈے میچ میں پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا جو ایک مرتبہ پھر درست ثابت نہ ہو سکا۔پاکستان نے میچ کیلئے ٹیم میں ایک تبدیلی کرتے ہوئے اظہر علی کی جگہ حارث سہیل کو شامل کیا اور فہیم اشرف کو اوپننگ کروانے کا جوکھم لیا جو کامیاب نہ ہو سکا اور وہ صرف ایک رن بنانے کے بعد پویلین لوٹے۔بابر اعظم کی ناکامیوں کا سلسلہ چوتھے میچ میں بھی جاری رہا اور تین رنز بنا کر ٹم ساوتھی کی گیند پر آؤٹ ہوئے تو ٹیم صرف 11 رنز پر دوکھلاڑیوں سے محروم ہو چکی تھی۔اس موقع پر فخر زمان کا ساتھ دینے حارث سہیل آئے اور دونوں نے تیسری وکٹ کیلئے 86 رنز کی شراکت قائم کر کے ابتدائی نقصان کا ازالہ کردیا لیکن اس سے قبل کہ یہ شراکت خطرناک ثابت ہوتی، مچل سینٹنر نے54 رنز بنانے والے فخر کی وکٹیں بکھیر دیں۔دورے میں پہلا میچ کھیلنے والے حارث نے اپنا انتخاب درست ثابت کرتے ہوئے نصف سنچری مکمل کی لیکن 50 رنز بنانے کے بعد کیوی کپتان کین ولیمسن کی وکٹ بن گئے۔شعیب ملک کا وکٹ پر قیام بھی مختصر رہا اور کین ولیمسن نے ان کی اننگز کا بھی چھ رنز پر خاتمہ کر کے پاکستان کو پانچواں نقصان پہنچایا۔130 رنز پر آدھی ٹیم آؤٹ ہونے کے بعد ایک مرتبہ پھرپاکستانی ٹیم کے جلد پویلین لوٹنے کا خطرہ محسوس ہونے لگا لیکن اس مرحلے پر سرفراز احمد اور محمد حفیظ بولروں کے خلاف ڈٹ گئے۔دونوں کھلاڑیوں نے چھٹی وکٹ کیلئے 98 رنز جوڑ کر بہتر اسکور تک رسائی کی راہ ہموار کی، سرفراز 46 گیندوں پر تین چھکوں اور اتنے ہی چوکوں کی مدد سے 51 رنز بنانے کے بعد آؤٹ ہوئے جبکہ حسن علی بھی صرف ایک رن بنا سکے۔تاہم دوسرے سرے پر موجود حفیظ نے اختتامی اوورز میں جارحانہ انداز اپنایا اور خصوصاً اننگز کے آخری اوور میں 22 رنز بٹور کر پاکستان کو 262 رنز اسکور کیا۔پاکستان نے آٹھ وکٹوں کے نقصان پر 262 رنز بنائے اور اننگز کی آخری گیند پر رن آؤٹ ہونے والے حفیظ نے 81 رنز بنائے۔نیوزی لینڈ کی جانب سے ٹم ساؤتھی تین وکٹیں لے کر سب سے کامیاب رہے جبکہ کین ولیمسن نے دو کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔نیوزی لینڈ نے نشانہ کا تعاقب شروع کیا تو اوپنرز کولن منرو اور مارٹن گپٹل نے اپنی ٹیم کو 14 اوورز میں 88 رنز کا آغاز فراہم کیا جس سے ایسا محسوس ہوا کہ یہ دونوں جلد ہی یہ میچ پاکستان کی پہنچ سے دور لے جائیں گے۔تاہم اسپنر شاداب خان اپنے ابتدائی دو اوورز میں دونوں اوپنرز کو آوٹ کر کے پاکستان کو میچ میں واپس لے آئے جبکہ رومان رئیس نے 200 واں ونڈے میچ کھیلنے والے روس ٹیلر کی اننگز کا ایک رن پر خاتمہ کر کے ٹیم کو تیسری کامیابی دلائی۔154 رنز پر پانچ وکٹیں گرنے کے بعد میچ پاکستان کی گرفت میں نظر آتا تھا جبکہ نیوزی لینڈ کو تقریباً سات رنز فی اوور کی اوسط سے رنز درکار تھے لیکن گرانڈ ہوم نے جارحانہ بیٹنگ کرتے ہوئے کیریئر کی پہلی نصف سنچری اسکور کر کے اپنی ٹیم کو فتح سے ہمکنار کرادیا۔انہوں نے نکولس کے ساتھ محض 65 گیندوں پر 109 رنز کی شراکت قائم کر کے اپنی ٹیم کو میچ میں فتح سے ہمکنار کروانے کے ساتھ ساتھ سیریز میں 4-0 کی برتری دلا دی۔گرانڈ ہوم نے 40 گیندوں پر پانچ چھکوں اور سات چوکوں کی مدد سے 74 رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیلی اور مین آف دی میچ قرار پائے ۔

TOPPOPULARRECENT