Wednesday , December 19 2018

گریٹر حیدرآباد میں پراپرٹی ٹیکس وصولی میں شدت

ٹیکس دہندگان کے سست ردعمل پر ٹیکس وصولی کی انوکھی مہم

ٹیکس دہندگان کے سست ردعمل پر ٹیکس وصولی کی انوکھی مہم
حیدرآباد /12 فروری (سیاست نیوز) مالیاتی سال کے اواخر میں گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کی جانب سے پراپرٹی ٹیکس وصولی کے سلسلے میں اچانک تیزی پیدا کردی گئی ہے۔ قبل ازیں بلدیہ کی جانب سے عوامی شعور بیدار کیا گیا اور نوٹسیں جاری کی گئیں، تاہم ٹیکس دہندگان کے سست ردعمل کے خلاف پراپرٹی ٹیکس وصول کرنے کے لئے انوکھی مہم شروع کی گئی ہے۔ بلدیہ حیدرآباد کی جانب سے ٹیکس وصولی کی مہم جاری ہے، لیکن مقررہ نشانہ تک پہنچنے میں خاطر خواہ کامیابی نہیں ملی۔ دریں اثناء گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کے عہدہ داروں نے آج اس سلسلے میں دونوں شہروں کے مختلف علاقوں میں خصوصی مہم کا آغاز کرتے ہوئے 9 لاکھ روپئے پراپرٹی ٹیکس ادا نہ کرنے کے سبب اسٹیٹ بینک آف انڈیا کاروان برانچ کو مقفل کردیا اور بینک کے سامنے کچرے دان رکھ دیئے۔ اسی طرح پنجہ گٹہ اور سوماجی گوڑہ کے رہائشی اپارٹمنٹس کے ٹیکس ادا نہ کرنے والوں کے خلاف خصوصی کارروائی کرتے ہوئے باب الداخلہ پر کچرے دان رکھ دیئے گئے اور عابڈس کے علاقہ میں تین شو رومس مقفل کردیئے گئے۔ لنگر حوض کے علاقہ سے بھی بلدیہ کی خصوصی مہم کی اطلاعات ملی ہیں۔ واضح رہے کہ دونوں شہروں میں سوائن فلو سے تقریباً 40 افراد فوت ہو چکے ہیں، جب کہ سیکڑوں افراد علاج کے لئے اسپتالوں سے رجوع ہوئے۔ ایسے میں پراپرٹی ٹیکس کی وصولی کے لئے بلدیہ کی کچرے دان رکھنے کی مہم سے عوام کی صحت متاثر ہونے کے خدشات پیدا ہو گئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT