Wednesday , November 22 2017
Home / ہندوستان / گلبرگ واقعہ بی جے پی لیڈر کی کارستانی

گلبرگ واقعہ بی جے پی لیڈر کی کارستانی

کانگریس کا ردعمل۔ فسادات میں سازش تسلیم کرنے سے بی جے پی کا انکار
نئی دہلی۔/17جون، ( سیاست ڈاٹ کام ) گلبرگ سوسائٹی قتل عام کیس میں عدالتی فیصلہ نے آج بی جے پی اور کانگریس کے درمیان لفظی جنگ چھیڑ دی ہے۔ جبکہ دنوں جماعتوں نے سیاسی فائدہ حاصل کرنے کیلئے ایک دوسرے پر الزام تراشی شروع کردی ہے۔ خصوصی تفتیشی ٹیم کی عدالت نے آج 11مجرمین کی عمر قید کی سزا سنائی ہے جس پر تبصرہ کرتے ہوئے گجرات کانگریس کے ترجمان منیش دوشی نے بتایا کہ جو لوگ بی جے پی لیڈروں کے ہاتھ کٹھ پتلی بن گئے تھے  وہ اب جیل کی سلاخوں کے پیچھے چلے گئے ہیں لیکن اصل ملزمین اقتدار کا مزہ لوٹ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جو لوگ بعض سیاسی لیڈروں کے ہاتھ میں کھلونا بن گئے تھے اب انہیں جیل کی ہوا کھانی پڑے گی اور جن لوگوں نے سیاسی مقاصد کیلئے انہیں اُکسایا تھا وہ اب اقتدار پر قابض ہیں۔ کانگریس ترجمان نے کہا کہ گلبرگ سوسائٹی کے واقعات انتہائی بربریت ناک اور غیرانسانی تھے اور عوام کو تحفظ فراہم کرنے کے بجائے بی جے پی حکومت پرتشدد ہجوم کو کھلی چھوٹ دے دی تھی اور اسوقت حکومت دستوری فرائض انجام دینے میں ناکام ہوگئی اور جبکہ بی جے پی لیڈروں نے بعض لوگوں کو تشدد پر اُکسایا تھا ان لیڈروں نے تشدد کو حصول اقتدار کا ہتھیار بنایا تھا۔ دوسری طرف گجرات بی جے پی کے ترجمان بھرت پانڈیہ نے کانگریس کے الزامات کو مضحکہ خیز قرار دیا اور کہا کہ گلبرگ قتل عام واقعہ کے پسِ پردہ کوئی سازش نہیں تھی۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ کانگریس پارٹی اور سماجی جہد کار تیستا ستیلواد نے سیاسی اورذاتی مفاد کیلئے سازش کا نظریہ پیش کیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ آج عدلیہ کے فیصلہ کا خیرمقدم کرتے ہیں۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT