Monday , December 18 2017
Home / ہندوستان / گوا اعلامیہ میں پاکستانی دہشت گردی کی عدم شمولیت

گوا اعلامیہ میں پاکستانی دہشت گردی کی عدم شمولیت

مودی حکومت پر کانگریس کی سخت تنقید ، تعصب پھیلانے کا الزام
نئی دہلی ۔ 17 اکتوبر ۔ (سیاست ڈاٹ کام ) کانگریس نے آج مودی حکومت پر گوا اعلامیہ میں جو بریکس چوٹی کانفرنس کے اختتام پر جاری کیا گیا ہے ، پاکستانی دہشت گردی کی شمولیت سے قاصر رہنے پر سخت تنقید کی ۔ منوہر پاریکر کو آر ایس ایس کی سرحد پار سرجیکل حملوں کا ذمہ دار قرار دیکر ستائش کرنے پر تنقید کا نشانہ بنایا ۔ کانگریس کے ترجمان منیش تیواری نے کہا کہ دہشت گردی کے بارے میں لفاظی اور پاکستان کو الگ تھلگ کردینے کے دعویٰ کے باوجود مودی حکومت بریکس رکن ممالک کو پاکستان کی دہشت گردی کو مشترکہ اعلامیہ میں شریک کروانے سے قاصر رہی ۔ کانگریس کی جانب سے سرجیکل حملوں کا ثبوت طلب کرنے کے بارے میں ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے منیش تیواری نے کہا کہ پارٹی کے کسی بھی رکن نے اس کارروائی کا ثبوت کبھی بھی طلب نہیں کیا ۔ انھوں نے کہاکہ بریکس گوا اعلامیہ صرف دہشت گردی کا تذکرہ کرتا ہے اور تمام بریکس ممالک میں دہشت گردی کی ہر نوعیت کی مذمت کرتا ہے ، لیکن حکومت اپنی لفاظی کے باوجود پاکستان کی ہندوستان کی سرزمین پر دہشت گرد کارروائیوں کو اعلامیہ میں شامل کروانے سے قاصر رہی ۔ کانگریس نے آج مودی حکومت پر الزام عائد کیا کہ وہ ملک گیر سطح پر تعصب پھیلارہی ہے تاکہ کوئی بھی آواز اُس کے خلاف اُٹھ نہ سکے ۔ کوئی بھی آواز حکومت کے خلاف اُٹھنے پر اُسے قوم دشمن ، بی جے پی دشمن اور بغاوت پر اُکسانے والا قرار دیا جاتا ہے ۔ کانگریس کے ترجمان منیش تیواری نے کہا کہ 28 ماہ کے دورہ ٔ اقتدار میں حکومت نے ملک کیلئے جدوجہد کرنے والے کسی بھی شخص کا ڈاک ٹکٹ جاری نہیں کیا ۔ یہ حکومت اقلیتی رائے کو کچل رہی ہے اور اُس کی یہ کارروائیاں پریشان کن ہے ۔ کانگریس نے بی جے پی پر الزام عائد کیا کہ وہ مغربی بنگال میں فرقہ وارانہ جذبات بھڑکارہی ہے اور ریاستی حکومت کو معمول کے حالات بحال کرنے میں مدد دینے کا تیقن دے رہی ہے ۔ ساتھ ہی ساتھ ایسے واقعات کے ذمہ داروں کو انصاف کے کٹھہرے میں کھڑا کرنے اور اُن کے خلاف سخت کارروائی کرنے کے مطالبہ کرتے ہوئے ریاست میں حساس صورتحال پیدا کررہی ہے۔ معین قریشی کے ہندوستان کے فرار ہوجانے کے بارے میں سوال کا جواب دیتے ہوئے منیش تیواری نے کہا کہ وجئے ملیا کی طرح معین قریشی بھی ملک سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا، اس قسم کی کہانی پردہ پوشی کی کوششیں قابل مذمت ہیں اور بی جے پی یہی کررہی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT