Tuesday , April 24 2018
Home / شہر کی خبریں / گورنر پر کانگریس کی تنقید، نچلی سیاست کا نتیجہ

گورنر پر کانگریس کی تنقید، نچلی سیاست کا نتیجہ

نرسمہن نے دستوری فرائض انجام دیئے، رکن کونسل پربھاکر کا بیان
حیدرآباد 22 جنوری (سیاست نیوز) ٹی آر ایس ایم ایل سی کے پربھاکر نے کانگریس کی جانب سے گورنر نرسمہن پر تنقیدوں کو نچلی سیاست کا نتیجہ قرار دیا اور کہا کہ دستوری عہدہ پر فائز شخصیت کو تنقید کا نشانہ بنانا مناسب نہیں ہے۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے پربھاکر نے کہا کہ حکومت کے اچھے کاموں کی ستائش کرنا کیا گورنر کی غلطی ہے ۔ کانگریس چاہتی ہے کہ گورنر ہمیشہ حکومت پر تنقید کریں اور اپوزیشن کی آواز میں آواز ملاکر حکومت کو نشانہ بنائیں۔ انہوں نے کہا کہ گورنر کے فرائض میں شامل ہے کہ وہ عوام کی فلاح و بہبود والی اسکیمات اور پراجکٹس پر نظر رکھیں ۔ گورنر نے عام آدمی کی طرح پراجکٹس کا دورہ کیا اور معلومات حاصل کیں وہ چاہتے تو راج بھون سے معلومات حاصل کرسکتے تھے ۔ ان کے دورہ سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ نرسمہن ریاست کی ترقی میں کس حد تک دلچسپی رکھتے ہیں۔ پربھاکر نے کہا کہ اپوزیشن کیلئے ہر ترقیاتی کام میں رکاوٹ پیدا کرنا فیشن بن چکا ہے ۔ ایسے اقدامات سے عوامی تائید کی بجائے اپوزیشن کو عوامی ناراضگی کا سامنا کرنا پڑیگا ۔ انہوں نے کہا کہ گورنر نے جس انداز میں پراجکٹس کی تعریف کی ، اس سے کانگریس بوکھلاہٹ کا شکار ہوچکی ہے۔ پربھاکر نے کہا کہ نرسمہن دستوری فرائض انجام دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس نے کالیشورم پراجکٹ میں 5000 کروڑ کی بے قاعدگیوں کا الزام عائد کیا ۔ مشن کاکتیہ میں 2000 کروڑ بے قاعدگیوں کا الزام عائد کیا تھا ۔ پارٹی نے تین برسوں میں اپنے ایک بھی الزام کا ثبوت پیش نہیں کیا ۔ صرف الزام تراشی سے حکومت کو بدنام کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ گورنر کے عہدہ کی توہین کانگریس نے کی تھی اور اس عہدہ کو سیاسی اغراض کیلئے استعمال کیا تھا ۔ 1984 میں اس وقت کے گورنر رام لال کے ذریعہ این ٹی آر حکومت کو بے دخل کیا گیا ۔ راج بھون کو گاندھی بھون میں تبدیل کرنے والی کانگریس کو موجودہ گورنر پر تنقید کا کوئی حق نہیں۔

TOPPOPULARRECENT