Monday , June 25 2018
Home / شہر کی خبریں / گڑمبے کا کاروبار چھوڑنے والوں کے لیے 5 کروڑ روپئے کی اسکیم

گڑمبے کا کاروبار چھوڑنے والوں کے لیے 5 کروڑ روپئے کی اسکیم

نئی اسکیم کے تحت 400 افراد کی باز آبادکاری ، ڈپٹی کمشنر محکمہ آبکاری و نشہ بندی ایم ایم اے فاروقی سے بات چیت

نئی اسکیم کے تحت 400 افراد کی باز آبادکاری ، ڈپٹی کمشنر محکمہ آبکاری و نشہ بندی ایم ایم اے فاروقی سے بات چیت
حیدرآباد ۔ 8 ۔ مئی : سماج میں پھیلی برائیوں کو دور کرنا ہر ایک شہری اور خصوصا ہر ایک مسلمان کا ایک اہم فریضہ ہے اور روزنامہ سیاست اپنی خبروں اور خصوصی رپورٹس کے ذریعہ سماج میں موجود برائیوں اور اس کے اثر سے متاثر ہورہے خاندان کی فلاح و بہبود کے لیے ہمیشہ ہی سرگرم رہتا ہے اور اسی کی ایک کڑی 2 مئی 2014 کو شائع کردہ ایک خصوصی رپورٹ ’ شہر میں گڑمبہ کا کاروبار عروج پر ‘ پیاکٹوں کی آزادانہ فروخت ‘ کے عنوان سے شائع کی تھی جس میں گڑمبہ کے ناجائز اور غیر قانونی کاروبار سے متاثر ہورہے غریب خاندانوں کی فلاح و بہبود کے لیے محکمہ آبکاری اور نشہ بندی کے ارباب مجاز تک عوام کی اپیل کو پہنچایا تھا ۔ جس کا مثبت اثر چند یوم میں ہی مل گیا جیسا کہ اس رپورٹ کا اثر لیتے ہوئے محکمہ آبکاری و نشہ بندی کے ڈپٹی کمشنر ایم ایم اے فاروقی نے روزنامہ سیاست سے خصوصی ملاقات میں نہ صرف شہر کے اہم علاقوں میں اس غیر قانونی اور غیر سماجی کاروبار کے عروج پر ہونے کا اعتراف کیا ۔ بلکہ محکمہ کی جانب سے اس کاروبار میں ملوث افراد کی باز آبادکاری اور انہیں سماج میں بہتر طریقہ اور دوسرے کاروبار کے آغاز کے لیے حکومت کی جانب سے فراہم کئے جانے والے قرضہ جات کی تفصیلات سے واقف کروایا ۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ شہر میں گڑمبہ کا کاروبار اپنے عروج پر ہونے کی وجہ سے کئی غریب خاندان اس سے متاثر ہورہے ہیں ۔ گڑمبہ مافیا اس کاروبار کے لیے زیادہ تر بیواؤں اور یتیم بچوں کو استعمال کررہا ہے جو کہ مجبور ہونے کی وجہ سے اس کاروبار کو اپنا ذریعہ معاش بناتے ہیں۔ محکمہ آبکاری و نشہ بندی کی جانب سے شہر میں گڑمبہ کے کاروبار کو ختم کرنے کے لیے جو اقدامات ہورہے ہیں اس کو یقینی بنانے کے لیے حیدرآباد میں 11 آبکاری و نشہ بندی کے پولیس اسٹیشن کے علاوہ ایک انفورسمنٹ وینگ ، 3 سپرنٹنڈنٹس اور ایک اسسٹنٹ کمشنر شہر میں موجود ہیں ۔ محکمہ کی جانب سے ہر مہینہ 350 مقدمات درج اور تقریبا 75 گاڑیوں کو ضبط کیا جاتا ہے ۔ ایم ایم اے فاروقی جو کہ ایک اعلیٰ عہدہ پر فائز ہونے کے علاوہ وہ خود ہفتہ میں 2 مرتبہ غیر قانونی کاروبار کے سدباب کے لیے دھاوے کرتے ہیں ۔ محکمہ آبکاری و نشہ بندی کے گڑمبہ کاروبار کو ختم کرنے کے لیے سخت اقدامات کے علاوہ اس بات کا اعتراف کیا ہے کہ دھول پیٹ اور منگل ہاٹ میں گڑمبہ کے کاروبار سے 2 ہزار افراد جڑے ہیں ۔ حکومت ان کی باز آبادکاری کے لیے کونسلنگ سیشن منعقد کرنے کے علاوہ جو افراد اس غیر قانونی کاروبار کو چھوڑ کر سماجی دھارے میں شامل اور ایک عزت یافتہ پیشہ اختیار کرنے کے خواہش مند ہوتے ہیں انہیں حکومت کی جانب سے لون بھی فراہم کیا جارہا ہے ۔ ایم ایم اے فاروقی کے بموجب حکومت نے اس کے لیے 5 کروڑ روپئے کا لون بجٹ منظور کر رکھا ہے جس سے تاحال 400 افراد استفادہ بھی حاصل کرچکے ہیں ۔ محبوب نگر سے تعلق رکھنے والے ایم ایم اے فاروقی نے 2011 سے ڈپٹی کمشنر کے عہدے پر فائز ہیں ۔ ان کا کہنا ہے کہ گڑمبہ کے کاروبار کے خاتمہ کے لیے اس میں ملوث افراد کے خلاف سخت اقدامات کرتے ہوئے انہیں سلاخوں کے پیچھے پہنچانا ناکافی ہے کیوں کہ اس کاروبار میں ملوث افراد کی باز آبادکاری اور انہیں حصول معاش کے لیے دوسرا راستہ فراہم کرنے کے لیے قرضہ جات بھی فراہم کرنا ضروری ہے اور یہی مراعات حکومت کی جانب سے دستیاب ہیں ۔ انہوں نے عوام سے کہا کہ ان کے تعاون کے بغیر گڑمبہ کاروبار کے خلاف مطلوبہ نتائج حاصل نہیں کئے جاسکتے ۔ ڈپٹی کمشنر نے اس موقع پر عوام کی سہولت کے لیے مختلف مقامات کے اسٹیشن کے نمبرات بھی فراہم کئے ہیں جن کی تفصیلات یہ ہیں : سنٹرل کنٹرول روم : 24737780 ۔ چارمینار اسٹیشن : 9440902307 ۔ دھول پیٹ اسٹیشن : 24821122 ۔ ڈپٹی کمشنر نے صاف الفاظ میں یہ بھی کہا کہ محکمہ آبکاری و نشہ بندی کا دفتر جو کہ نمائش میدان ، نامپلی پر ہے یہاں ان سے راست ملاقات بھی کرسکتے ہیں ۔۔

TOPPOPULARRECENT