Thursday , September 20 2018
Home / شہر کی خبریں / گھٹکیسر میں 65 سال بعد قطب شاہی مسجد آباد

گھٹکیسر میں 65 سال بعد قطب شاہی مسجد آباد

نماز جمعہ میں کثیر تعداد شریک ، مسجد اور درگاہ کے تحت موقوفہ اراضی کے تحفظ کا مطالبہ

نماز جمعہ میں کثیر تعداد شریک ، مسجد اور درگاہ کے تحت موقوفہ اراضی کے تحفظ کا مطالبہ
حیدرآباد ۔ 20 ۔ فروری : ( نمائندہ خصوصی ) : اگر کوئی نیک کام عزم مصمم اور یکسوئی کے ساتھ کیا جائے تو اللہ تعالیٰ کی مرضی بھی اس میں شامل حال ہوجاتی ہے ۔ اور پھر کامیابی بندے کا مقدر بن جاتی ہے ۔ ایسے ہی آج گھٹکیسر کے مسلمانوں نے ایک نیک کام کی شروعات کی ہے جس کی تکمیل میں یقینا اللہ تبارک و تعالیٰ کی مدد شامل حال رہے گی ۔ دراصل ضلع رنگاریڈی کے تعلقہ گھٹکیسر کے موضع امرکنٹہ میںا یک غیر آباد مسجد ہے ۔ یہ مسجد قطب شاہی دور کی تقریبا 450 سالہ قدیم ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ پولیس ایکشن کے بعد سے ہی یہ مسجد غیر آباد تھی ۔ جس میں آج نماز جمعہ ادا کرتے ہوئے اس مسجد کو آباد کرنے کا عزم مصمم کیا گیا ۔ مقامی ذرائع نے بتایا کہ شرپسندوں نے تقریبا دو سال قبل اس مسجد کو شہید کرنے کی ناپاک کوشش بھی کی تھی مگر مقامی مسلمانوں نے اس ناپاک کوشش کو ناکام بنادیا تھا ۔ پھر بھی مسجد کا وجود تقریبا ختم ہوگیا ہے۔ صرف دو طرف دیواروں کا کچھ حصہ باقی ہے جب کہ اس میں چھت کا وجود مکمل طور پر ختم ہوچکا ہے ۔ تاہم اس قدر قدیم ترین مسجد کے تحفظ کا معاملہ اس وقت سنگین رخ اختیار کر گیا جب ایک پاپ ریڈی نامی بلڈر کی بری نظر اس موقوفہ اراضی پر پڑی جو اس مسجد کے اطراف پلاٹنگ کررہا ہے ۔ جب کہ ایک مقامی بزرگ شخصیت 70 سالہ محمد یعقوب علی قادری نے بتایا کہ اس مسجد سے متصل ایک بزرگ کا مزار مبارک بھی ہے اور قریب میں ہی ایک چھلہ مبارک بھی موجود ہے ۔ یعقوب علی صاحب کے مطابق اس کے تحت 24 ایکڑ موقوفہ اراضی ہونے کا امکان ہے ۔ مگر مقامی ذرائع کا کہنا ہے کہ تقریبا اراضی پر پلاٹنگ ہوچکی ہے ۔ چند گز اراضی ہی بچی ہوئی ہے ۔ ان حالات کو دیکھتے ہوئے مقامی مسلم آبادی نے ٹی آر ایس قائدین کی مدد سے متعلقہ محکمہ اور پولیس کی مدد حاصل کرتے ہوئے آج اس مسجد میں نماز جمعہ کا اہتمام کیا اور مسجد سے متصل شامیانہ نصب کرتے ہوئے نماز جمعہ ادا کی ۔ ان لوگوں نے عہد کیا ہے کہ وہ اس مسجد کی از سر نو تعمیر کرتے ہوئے اس میں نماز پنجگانہ کا اہتمام کریں گے ۔ مقامی مسلمانوں اور ٹی آر ایس قائدین نے چیف منسٹر اور ڈپٹی چیف منسٹر محمود علی سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس مسجد اور مزار سے متصل موقوفہ اراضیات کا جلد سے جلد سروے کراتے ہوئے وقف املاک کے تحفظ کو یقینی بنائیں ۔ مذکورہ قدیم ترین مسجد کو از سر نو آباد کرنے میں جن افراد نے سرگرم رول ادا کیا ان میں محمد یعقوب علی قادری ، عبدالحفیظ ، محمد جہانگیر اور دیگر مقامی ٹی آر ایس ارکان کے ساتھ ساتھ ضلع رنگاریڈی کے ٹی آر ایس پریسیڈنٹ اور اسٹیٹ جنرل سکریٹری مایناریٹی سیل ، عبدالمقیت محی الدین چندا ، اور لیگل اڈوائزر یسین ایوبی شامل ہیں ۔ اس موقع پر مسٹر چندا نے مقامی مسلم آبادی کو یقین دلایا کہ اس مسجد اور موقوفہ اراضی کے تحفظ کے لیے ٹی آر ایس ہر ممکن کوشش کرے گی اور تمام رکاوٹیں دور کرنے میں مدد فراہم کرے گی اور انہوں نے کہا کہ انشاء اللہ اس مسئلے کو ہم ڈپٹی چیف منسٹر سے رجوع کرتے ہوئے اس کے تحفظ کو یقینی بنائیں گے ۔۔

TOPPOPULARRECENT