Tuesday , November 21 2017
Home / Top Stories / ہائیکورٹ میں جیٹلی اور جیٹھ ملانی کی زبانی تکرار

ہائیکورٹ میں جیٹلی اور جیٹھ ملانی کی زبانی تکرار

جیٹھ ملانی کے ایک لفظ استعمال کرنے پر ارون جیٹلی برہم ، لفظ حذف کرنے کا مطالبہ
نئی دہلی ۔ 17 مئی ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی وزیر ارون جیٹلی اور سینئر ایڈوکیٹ رام جیٹھ ملانی کے درمیان دہلی ہائیکورٹ میں برہمی کے عالم میں زبانی تکرار کے مناظر دیکھے گئے ، جبکہ چیف منسٹر اروند کجریوال کے ہتک عزت مقدمہ کے سلسلے میں جراح جاری تھی ۔ جیٹلی کے بیان کو ریکارڈ کیا جارہا تھا جو دس کروڑروپئے کے ہتک عزت مقدمہ کے سلسلے میں تھا ، جس میں کجریوال اور دیگر عام آدمی پارٹی کارکنوں نے مرکزی وزیر کے اعتراض پر کہ اُن کے خلاف استعمال کیا ہوا ایک لفظ حذف کردیا جائے ، جبکہ چیف منسٹر اروند کجریوال کی نمائندگی کرتے ہوئے نامور قانون داں نے یہ لفظ استعمال کیا تھا ۔ مرکزی وزیر فینانس جو جوائنٹ رجسٹرار دیپالی شرما کے اجلاس پر حاضر تھے اپنا صبر و تحمل کھو بیٹھے اور جیٹھ ملانی سے سوال کیا کہ کیا جو لفظ اُنھوں نے استعمال کیا ہے کجریوال کی ہدایت کے مطابق ہے ؟ اگر ایسا ہے تو اُس سے مدعی علیہ (کجریوال ) کے خلاف الزامات مزید سنگین ہوجاتے ہیں ۔ ارون جیٹلی نے کہاکہ شخصی بے عزتی کی بھی ایک حد ہوتی ہے ۔ سینئر ایڈوکیٹس راجیو نائر اور سندیپ سیٹھی نے جو جیٹلی کی نمائندگی کررہے تھے کہا کہ جیٹھ ملانی ایسے سوالات کررہے ہیں جن سے اسکینڈل پیدا ہوسکتے ہیں۔ انھیں چاہئے کہ غیرمتعلق سوالات کرنے سے گریز کریں، کیونکہ یہ مسئلہ ارون جیٹلی بمقابلہ اروند کجریوال ہے اور جیٹھ ملانی بمقابلہ ارون جیٹلی نہیں ہے ۔ اس پر جیٹھ ملانی نے کہا کہ اُنھوں نے یہ لفظ کجریوال کی ہدایت پر استعمال کیا ہے ۔ وکلاء کے گروپ نے بشمول جیٹھ ملانی جو عام آدمی پارٹی قائدین کی پیروی کررہا ہے یہ بھی کہا کہ جیٹلی دس کروڑ روپئے کا دعویٰ کرنے کا اختیار نہیں رکھتے کیونکہ اُن کی مبینہ ہتک عزت اتنی قیمتی نہیں ہے ۔ جیٹلی نے دیوانی ہتک عزت دعویٰ دائر کیا ہے اور دس کروڑ روپئے تاوان کجریوال اور دیگر پانچ عام آدمی پارٹی قائدین راگھو چڈھا ، کمار وشواس ، اشوتوش ، سنجئے سنگھ اور دیپک راجپال سے طلب کیا ہے ۔ انھوں نے الزامات عائد کئے ہیں کہ ارون جیٹلی نے ڈی ڈی سی اے میں مالیاتی کرپشن کا ارتکاب کیا ہے جبکہ وہ 2000 تا 2010 ء ڈی ڈی سی اے کے صدر تھے ۔

TOPPOPULARRECENT