Friday , November 24 2017
Home / شہر کی خبریں / ہائی کورٹ اور ماتحت عدالتوں میں چار فیصد تحفظات پر عمل ندارد

ہائی کورٹ اور ماتحت عدالتوں میں چار فیصد تحفظات پر عمل ندارد

مسلم ویمنس ویلفیر سوسائٹی سنگاریڈی کا چیف جسٹس آف انڈیا کو مکتوب
حیدرآباد ۔ 18 ۔ جنوری (سیاست نیوز) مسلم ویمنس ویلفیر سوسائٹی سنگاریڈی کی جانب سے چیف جسٹس آف انڈیا کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے تلنگانہ میں ہائیکورٹ اور دیگر ماتحت عدالتوں کے تقررات میں 4 فیصد مسلم تحفظات پر عمل آوری نہ کئے جانے کی شکایت کی گئی۔ سوسائٹی کی صدر ڈاکٹر عظمیٰ شاہین  نے چیف جسٹس آف انڈیا کو روانہ کردہ مکتوب میں اپیل کی کہ اس سلسلہ میں ہائیکورٹ کو ہدایت جاری کی جائے تاکہ بی سی ای زمرہ سے تعلق رکھنے والے امیدواروں کو تقررات میں 4 فیصد تحفظات فراہم ہوسکیں۔ انہوں نے کہا کہ ریاست میں مسلمانوں کی صورتحال انتہائی پسماندہ ہے جس کی بنیاد پر متحدہ آندھراپردیش کی حکومت نے 4 فیصد تحفظات فراہم کئے ہیں۔ جس پر ہائیکورٹ کی ہدایت کے مطابق عمل آوری جاری ہے ۔ مسلمانوں کو تعلیم اور روزگار میں تحفظات پر ڈاکٹر وائی ایس راج شیکھر ریڈی دور حکومت میں عمل آوری کی گئی ۔ تلنگانہ تحریک کے دوران بھی اس پر عمل کیا گیا ۔ تاہم نئی ریاست کی تشکیل کے بعد مسلم ویمنس ویلفیر سوسائٹی نے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ اور ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی سے نمائندگی کی۔ تلنگانہ حکومت نے بھی عمل آوری کا وعدہ کیا لیکن جوڈیشل ڈپارٹمنٹ میں عمل آوری نہیں کی جارہی ہے ۔ میدک ضلع میں پرنسپل ڈسٹرکٹ جج اور سیشن کورٹ سنگاریڈی میں مختلف جائیدادوں پر تقررات کئے گئے۔ تاہم اعلامیہ میں 4 فیصد مسلم تحفظات کا تذکرہ نہیں کیا گیا جو مسلمانوں کے ساتھ شدید ناانصافی ہے۔ مکتوب کی نقل سپریم کورٹ کے مختلف ججس کو روانہ کی گئی۔

TOPPOPULARRECENT