Wednesday , December 13 2017
Home / شہر کی خبریں / ہائی کورٹ کی تقسیم کیلئے دہلی میں تلنگانہ وکلاء کا احتجاج

ہائی کورٹ کی تقسیم کیلئے دہلی میں تلنگانہ وکلاء کا احتجاج

ٹی آر ایس ارکان پارلیمنٹ کی شرکت، وکلاء کے مطالبات کی تائید
حیدرآباد۔/22جولائی، ( سیاست نیوز) ہائی کورٹ کی تقسیم کا مطالبہ کرتے ہوئے تلنگانہ ایڈوکیٹس کی جانب سے آج نئی دہلی میں جنتر منتر پر دھرنا منظم کیا گیا۔ ٹی آر ایس کے ارکان پارلیمنٹ اور قائدین نے دھرنا میں حصہ لیتے ہوئے وکلاء کے مطالبات کی تائید کی۔ ٹی آر ایس ارکان راجیہ سبھا ڈی سرینواس اور کیپٹن لکشمی کانت راؤ نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ تلنگانہ ہائی کورٹ کی عاجلانہ تشکیل کے اقدامات کریں۔ ڈی سرینواس نے کہا کہ جنتر منتر پر دھرنا منظم کرنے تک مرکزی حکومت ملک کو درپیش مسائل سے واقف نہیں ہورہی ہے لہذا وکلاء نے اپنے دیرینہ مطالبہ کی یکسوئی کیلئے جنتر منتر پر دھرنا منظم کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آندھرا پردیش کی تقسیم سے متعلق قانون کی منظوری کے موقع پر یہ تیقن دیا گیا تھا کہ ہائی کورٹ دو ریاستوں میں تقسیم کی جائے گی لیکن دو سال گذرنے کے باوجود آج تک اس سلسلہ میں کوئی پیشرفت نہیں کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ وہ اس مسئلہ کو راجیہ سبھا میں پیش کرتے ہوئے حکومت کی توجہ مبذول کرائیں گے۔ کیپٹن لکشمی کانت راؤ نے تلنگانہ کے ساتھ ناانصافیوں کا الزام عائد کیا اور کہا کہ ہائی کورٹ کی عدم تقسیم سے تلنگانہ وکلاء کے ساتھ ناانصافی ہورہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے اس سلسلہ میں وزیر اعظم نریندر مودی اور دیگر مرکزی وزراء سے ایک سے زائد مرتبہ نمائندگی کی۔ ٹی آر ایس کے ارکان پارلیمنٹ نے لوک سبھا اور راجیہ سبھا میں اس مسئلہ کو موضوع بحث بنایا لیکن مرکزی حکومت صرف تیقنات کے ذریعہ مسئلہ کو ٹالنے کی کوشش کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہائی کورٹ کی تقسیم میں اہم رکاوٹ آندھرا پردیش کی چندرا بابو نائیڈو حکومت ہے اور مرکز چندرا بابو نائیڈو کے دباؤ میں تقسیم سے گریز کررہا ہے۔ ارکان پارلیمنٹ نے سوال کیا کہ ہائی کورٹ کی تقسیم کے سلسلہ میں تلنگانہ کے تیار ہونے کے بعد آندھرا پردیش کیوں انکار کررہا ہے۔ ارکان پارلیمنٹ نے تلنگانہ میں آندھرائی جونیر اور سیول ججس کے تقررات کا الزام عائد کیا۔ گذشتہ 30سال سے تقررات میں تلنگانہ کے وکلاء کے ساتھ ناانصافی ہورہی ہے۔ ارکان پارلیمنٹ بی بی پاٹل، وشویشور ریڈی، سیتا رام اور کے پربھاکر ریڈی نے دھرنا میں حصہ لیتے ہوئے وکلاء کے مطالبات کی مکمل تائید کا اعلان کیا۔

TOPPOPULARRECENT