Sunday , December 17 2017
Home / Top Stories / ہانڈوارہ میں اسکولی لڑکی کا بیان دوبارہ قلمبند

ہانڈوارہ میں اسکولی لڑکی کا بیان دوبارہ قلمبند

فوج پر الزام عائد کرنے سے گریز ، دو اسکولی بچوں کیخلاف شکایت
سرینگر ۔ /17 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) ہانڈوارہ میں سکیورٹی فورس کے ہاتھوں بدسلوکی و دست درازی کے تنازعہ مرکز توجہ ایک لڑکی نے چیف جوڈیشیل مجسٹریٹ کے اجلاس پر اپنا بیان قلمبند کروایا لیکن وہ اپنے قبل ازیں دیئے گئے اس بیان پر بدستور قائم رہی جس میں اس نے کہا تھا کہ کسی فوجی سپاہی نے منگل کو اس سے بدسلوکی یا دست درازی نہیں کی تھی ۔ یہ لڑکی کل شام اپنے والد کے ساتھ ہانڈوارہ کے چیف جوڈیشیل مجسٹریٹ کے اجلاس پر پہونچی جہاں اس کا بیان قلمبند کیا گیا ۔ پولیس نے کہا کہ ’’اس لڑکی نے جوڈیشیل مجسٹریٹ کے اجلاس پر بیان قلمبند کرواتے ہوئے کہا کہ انکشاف کیا کہ وہ 12-04-2016 کو اسکولی اوقات کے بعد اپنی سہیلیوں کے ہمراہ گھر واپس ہورہی تھی کہ ضرورت سے فارغ ہونے کیلئے مرکزی چوک ہانڈوارہ کے قریب ایک سرکاری بیت الخلاء میں داخل ہوئی تھی ‘‘ ۔ پولیس کے مطابق اس لڑکی نے اپنے بیان میں یہ انکشاف بھی کیا کہ ’’جیسے ہی وہ بیت الخلاء سے باہر نکلی دو لڑکوں سے اُس کا سامنا ہوگیا جنہوں نے اس کو گھسیٹتے ہوئے زدوکوب کیا اور اس کا اسکول بیاگ بھی چھین لیا گیا ۔ ان دو کے منجملہ ایک لڑکا اسکول یونیفارم میں ملبوس تھا ‘‘۔ اس لڑکی کی ماں کی طرف سے دائر کردہ درخواست پر جموں و کشمیر ہائی کورٹ نے گزشتہ روز احکام جاری کئے تھے جس پر تعمیل کرتے ہوئے پولیس نے اس (لڑکی) کو چیف جوڈیشیل مجسٹریٹ کے اجلاس پر پیش کیا ۔

TOPPOPULARRECENT