Saturday , September 22 2018
Home / شہر کی خبریں / ہریش راؤ اور جگدیش ریڈی کے خلاف طلباء کا احتجاج

ہریش راؤ اور جگدیش ریڈی کے خلاف طلباء کا احتجاج

حیدرآباد۔/22جولائی، ( سیاست نیوز) عثمانیہ یونیورسٹی کے طلباء نے ریاستی وزراء ہریش راؤ اور جگدیش ریڈی کے مبینہ مخالف طلباء ریمارکس کے خلاف آج احتجاج منظم کیا۔ عثمانیہ یونیورسٹی میں گذشتہ چند دنوں سے طلباء مسلسل احتجاج کررہے ہیں اور تلنگانہ حکومت سے کنٹراکٹ ملازمین کی خدمات باقاعدہ بنانے سے متعلق فیصلہ سے دستبرداری کی مانگ کی جارہی

حیدرآباد۔/22جولائی، ( سیاست نیوز) عثمانیہ یونیورسٹی کے طلباء نے ریاستی وزراء ہریش راؤ اور جگدیش ریڈی کے مبینہ مخالف طلباء ریمارکس کے خلاف آج احتجاج منظم کیا۔ عثمانیہ یونیورسٹی میں گذشتہ چند دنوں سے طلباء مسلسل احتجاج کررہے ہیں اور تلنگانہ حکومت سے کنٹراکٹ ملازمین کی خدمات باقاعدہ بنانے سے متعلق فیصلہ سے دستبرداری کی مانگ کی جارہی ہے۔ تلنگانہ کابینہ نے 40 ہزار کنٹراکٹ ملازمین کی خدمات کو باقاعدہ بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔ طلباء اس فیصلہ سے دستبرداری کی مانگ کررہے ہیں۔ گذشتہ دنوں ریاستی وزراء ہریش راؤ اور جگدیش ریڈی کے گھیراؤ کی کوشش کی گئی۔ اس موقع پر طلباء اور ریاستی وزراء کے درمیان بحث تکرار ہوگئی۔ عثمانیہ یونیورسٹی میں وزراء کے ریمارکس کے خلاف طلباء نے آرٹس کالج سے ایک ریالی منظم کی۔ جب یہ ریالی تارناکہ پولیس اسٹیشن کے قریب پہنچی تو

وہاں پولیس نے ریالی کو آگے بڑھنے سے روک دیا۔ طلبہ نے سڑک پر راستہ روکو احتجاج منظم کیا اور پولیس کے ساتھ ان کی بحث تکرار ہوگئی۔ اس موقع پر صورتحال کشیدہ ہوگئی۔ طلباء نے حکومت اور چیف منسٹر کے خلاف نعرہ بازی کی۔ انہوں نے ریاستی وزراء کی گرفتاری کا مطالبہ کیا جنہوں نے تلنگانہ طلباء کی توہین کی ہے۔ طلباء کے اس احتجاج کو دیکھتے ہوئے پولیس نے عثمانیہ یونیورسٹی کے اطراف سخت صیانتی انتظامات کئے ہیں۔ پولیس کے بھاری دستوں کو عثمانیہ یونیورسٹی کے اہم باب الداخلہ پر تعینات کردیا گیا ہے۔ یونیورسٹی کے طلباء نے احتجاج میں مزید شدت پیدا کرنے کا اعلان کیا۔اسی دوران مختلف سیاسی جماعتوں اور تلنگانہ تنظیموں نے عثمانیہ یونیورسٹی طلباء کے احتجاج کی تائید کرتے ہوئے ٹی آر ایس حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ کنٹراکٹ ملازمین سے متعلق اپنے فیصلہ پر نظرثانی کرے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT