Monday , December 18 2017
Home / شہر کی خبریں / ہر ضلع چار تا پانچ اسمبلی حلقوں پر مشتمل ہوگا

ہر ضلع چار تا پانچ اسمبلی حلقوں پر مشتمل ہوگا

l  اضلاع کی تنظیم جدید عوام کی سہولت کے لیے ہوگی
l  میڈیا رپورٹس کو اہمیت نہ دینے چیف منسٹر کی عہدیداروں کو ہدایت
حیدرآباد ۔ 24 ۔ مئی : ( سیاست نیوز ) : تلنگانہ میں نئے اضلاع نئے ریونیو ڈیویژنس اور نئے منڈلوں کا قیام دسہرہ تہوار سے ہوگا ۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے یہ واضح اشارہ دیتے ہوئے کہا کہ حکومت کو نئے انتظامی یونٹس قائم کرنے میں کوئی جلدی نہیں ہے ۔ ضلعی فیصلہ 2 جون کے بعد کیا جائے گا جب کہ ایک ورکشاپ منعقد ہوگا ۔ فیصلہ ان تجاویز کی بنیاد پر ہوگا جو چیف سکریٹری کی سرکردگی میں قائم کمیٹی اور ضلع کلکٹرس نے الگ الگ پیش کی ہیں ۔ چندر شیکھر راؤ نے کہا کہ اضلاع کی تنظیم جدید کے ساتھ اضلاع کی تعداد بڑھ کر 24 یا 25 ہوجائے گی ۔ بنیادی پیمانہ یہ ہوگا کہ ہر ضلع چار تا پانچ اسمبلی حلقوں پر مشتمل ہوگا ۔ ہر ضلع اوسطاً 20 منڈلوں پر مشتمل ہوگا ۔ تنظیم جدید قانون کے تحت تلنگانہ اسمبلی کے حلقوں کی تعداد موجودہ 119 سے بڑھ کر 153 ہوجائے گی ۔ اضلاع کی تنظیم جدید بالکلیہ طور پر انتظامی سہولت پیش نظر رکھتے ہوئے کی جارہی ہے تاکہ عوام کو سہولت اور راحت ہو موجودہ اضلاع کافی بڑے ہیں ۔ چھوٹے اضلاع عوام کے مفاد میں ہوں گے ۔ چیف منسٹر نے ڈسٹرکٹ کلکٹرس کانفرنس میں واضح کردیا کہ اضلاع کی تشکیل سیاسی پارٹیوں اور سیاسی قائدین کے مطالبہ پر نہیں بلکہ عوام کی سہولت کے لیے ہوگی ۔ حکومت حیدرآباد کے بشمول اضلاع کی تنظیم جدید کرتے ہوئے تمام مسائل کا سائنٹفک انداز میں جائزہ لے رہی ہے ۔ چیف منسٹر نے عہدیداروں سے کہا کہ وہ نئے اضلاع سے متعلق میڈیا کی رپورٹس سے پریشان نہ ہوں اور اپنا کام جاری رکھیں اور نقشوں کے ساتھ سائنٹفک تجاویز تیار کریں ۔ حکومت ہر نئے ضلع کے لیے ایک سو کروڑ روپئے مختص کرے گی تاکہ انفراسٹرکچر بشمول سرکاری دفاتر کلکٹریٹ پولیس آفیس اور دیگر عمارتوں کی تعمیر میں سہولت ہوسکے ۔۔

TOPPOPULARRECENT