Thursday , December 14 2017
Home / Top Stories / ہر مسلمان کو دہشت گرد ہونا چاہئیے ، اسامہ بن لادن کی تائید

ہر مسلمان کو دہشت گرد ہونا چاہئیے ، اسامہ بن لادن کی تائید

آئی آر ایف پر امتناع کی حکومت کی جانب سے مدافعت
نئی دہلی ۔ /17 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) مبلغ اسلام ذاکر نائک نے اسامہ بن لادن کی ستائش کی اور ان کا موقف یہ تھا کہ ہر مسلمان کو دہشت گرد ہونا چاہئیے ۔ انہوں نے یہ بھی دعویٰ کیا تھا کہ اگر اسلام پر فی الواقع عمل کیا جاتا تو 80 فیصد ہندوستانی آج ہندو نہ ہوتے ۔ حکومت نے گزٹ اعلامیہ میں یہ وضاحت کرتے ہوئے ان کی تنظیم آئی آر ایف پر امتناع کو درست قرار دیا ۔ مرکزی کابینہ نے غیرقانونی سرگرمیوں کی روک تھام سے متعلق قانون کے تحت اسلامک ریسرچ فاؤنڈیشن (آئی آر ایف) پر امتناع عائد کرنے کا فیصلہ کیا تھا ۔ دو دن بعد وزارت داخلہ نے گزٹ اعلامیہ جاری کرتے ہوئے کہا کہ آئی آر ایف اور اس کے ارکان بالخصوص بانی و صدر ذاکر نائک اپنے حامیوں کو مذہبی بنیادوں پر غیر مذاہب کے ماننے والوں کے ساتھ غیر ہم آہنگی و مخاصمت اور نفرت کی حوصلہ افزائی کررہے ہیں ۔ مرکزی حکومت کو یہ اطلاعات موصول ہوئی کہ ذاکر نائک کے بیانات اور تقاریر قابل اعتراض اور تخریبی نوعیت کے ہیں ۔ انہوں نے دہشت گردوں جیسے اسامہ بن لادن کی تعریف کرتے ہوئے کہا تھا کہ ہر مسلمان کو دہشت گرد ہونا چاہئیے ۔ اگر اسلام فی الواقعی چاہتا تو آج ہندوستان کی 80 فیصد آبادی ہندو نہ ہوتی ۔ کیونکہ اگر ہم چاہتے تو انہیں تلوار کے ذریعہ اسلام قبول کرنے پر مجبور کرتے ۔ اسی طرح انہوں نے ہندو دیوتاؤں کے خلاف بھی قابل اعتراض تبصرے کئے ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT