Thursday , November 23 2017
Home / دنیا / ہلاری کلنٹن شخصی ای میل سرور جسٹس ڈپارٹمنٹ کے حوالہ کریں گی

ہلاری کلنٹن شخصی ای میل سرور جسٹس ڈپارٹمنٹ کے حوالہ کریں گی

عدالت میں ہلاری کے دروغ گوئی سے کام لینے کا ادعا، ہلاری اور جیل کے درمیان صرف ایک ای میل حائل : جندال

واشنگٹن 12 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام) اب جبکہ امریکی صدارتی انتخابات کے لئے ڈیموکریٹک پارٹی کی امیدوار ہلاری کلنٹن کے شخصی ای میل کا معاملہ پیچیدہ سے پیچیدہ تر ہوتا جارہا ہے وہیں انھوں نے محکمہ انصاف کو ایک ایسا سرور حوالے کیا ہے جس میں انتہائی خفیہ قسم کی معلومات اپ لوڈ کی گئی ہیں جو ای میلز کے ذریعہ ضبط تحریر میں لائی گئی ہیں جبکہ ری پبلکن حریف اور لوئشیانہ کے گورنر پابی جندال ہلاری کلنٹن کے بارے میں کوئی اچھی رائے نہیں رکھتے اور یہ الزام عائد کیاکہ انھیں (ہلاری) اب جیل جانے سے کوئی روک نہیں سکتا۔ وہ جیل سے صرف ایک ای میل کے فاصلہ پر ہیں۔ بابی جندال کا استدلال ہے کہ اگر ہلاری کلنٹن یہ کہتی ہیں کہ اُنھوں نے اپنے تمام ای میلز سے دستبرداری اختیار کرلی ہے تو اس کا واضح مطلب یہ ہوا کہ اگر ایسا نہیں ہوا تو انھوں نے عدالت میں بھی بے شک دروغ گوئی سے کام لیا۔ جندال اس وقت انتخابی مہم چلارہے ہیں جہاں سے جاری ایک بیان میں یہ تک کہا گیا کہ ہلاری کلنٹن اور جیل کے درمیان صرف ایک ای میل حائل ہے۔ جندال کے ریمارکس ایک ایسے وقت منظر عام پر آرہے ہیں جب ہلاری کلنٹن پر اُن کے شخصی ای میلز سے دستبردار ہونے دباؤ ڈالا جارہا ہے۔

اُس سرور کو انھوں نے اُس وقت استعمال کیا تھا جب وہ امریکہ کی وزیر خارجہ تھیں۔ دوسری طرف ہلاری کی مہماتی ترجمان نک میریل نے کہاکہ وہ (ہلاری) حکومت کی سکیوریٹی جانچ پڑتال میں وہ اپنا بھرپور تعاون پیش کریں گی۔ اس کے باوجود بھی شک و شبہات کا اظہار کرتے ہوئے مزید سوالات کئے گئے تو اُن کا بھی اطمینان بخش جواب دیا جائے گا۔ یاد رہے کہ ہلاری کلنٹن کے ای میلز اُس وقت سے جانچ پڑتال کی زد میں آگئے تھے جب یہ انکشاف ہوا تھا کہ وہ ایک خانگی سرور کا استعمال کررہی ہیں۔ ایف بی آئی خانگی سرور کی سکیوریٹی کا جائزہ لے رہی ہے اور یہ معلوم کرنے کی کوشش کررہی ہے کہ آیا ہلاری نے ایک غیر محفوظ سسٹم پر کہیں انتہائی خفیہ نوعیت کی معلومات حاصل کی یا اُنھیں روانہ تو نہیں کیا۔ دریں اثناء اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ ترجمان جان کربی نے بتایا کہ انٹلی جنس کمیونٹی نے یہ سفارش کی ہے کہ چار ای میلز کے منجملہ دو ای میلز کے متن کی نشاندہی کرلی گئی ہے اور اس کے بارے میں انٹلی جنس کمیونٹی کے انسپکٹر جنرل کو پوری معلومات فراہم کی جائے گی۔ ڈپارٹمنٹ کے ملازمین نے غیر محفوظ سسٹم پر ای میلز کو 2009 ء تا 2011 ء کے درمیان گشت کروایا اور کچھ ای میلز ہلاری کلنٹن تک بھی پہنچ گئے لیکن اُن پر ’’انتہائی خفیہ‘‘ جیسا کوئی انتباہ تحریر نہیں تھا۔

TOPPOPULARRECENT