Sunday , December 17 2017
Home / دنیا / ’’ہم ہندوستان اور چین سے ملازمتیں دوبارہ امریکہ لے آئینگے‘‘

’’ہم ہندوستان اور چین سے ملازمتیں دوبارہ امریکہ لے آئینگے‘‘

آخری مقابلہ صرف میرے اور ہلاری کے درمیان ہوگا اور میں جیتوں گا: ڈونالڈ ٹرمپ
واشنگٹن ۔ 22 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) ری پبلکن کے متنازعہ صدارتی امیدوار ڈونالڈ ٹرمپ نے آج الزام عائد کیا کہ چین اور ہندوستان جیسے ممالک امریکہ سے ملازمتیں چھین رہے ہیں۔ انہوں نے عزم کیا کہ اگر وہ صدر کے عہدہ پر فائز ہوئے تو وہ ان ملازمتوں کو دوبارہ امریکی شہریوں کیلئے واپس لائیں گے۔ انہوں نے یہ ریمارک کرتے ہوئے اس بات کو بھی یقینی قرار دیا کہ انہیں افریقی نژاد امریکی ووٹرس کی زبردست تائید حاصل رہے گی۔ سی این این سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آپ سب کے سامنے وہ کہانیاں ضرور آئی ہوں گی جہاں افریقی نژاد امریکی قائدین یہ کہتے آرہے ہیں کہ افریقی نژاد عوام ٹرمپ کو حقیقی طور پر چاہتے ہیں کیونکہ میں (ٹرمپ) نہ صرف چین بلکہ ہندوستان، میکسیکو، جاپان اور ویتنام سے امریکی شہریوں کیلئے ملازمتوں کا بھنڈار واپس لائیں گے کیونکہ مندرجہ بالا ممالک کے عوام نے ہی امریکی شہریوں کی ملازمتوں پر قبضہ کرلیا ہے۔ آج صورتحال یہ ہیکہ افریقی نژاد امریکی بیروزگار نوجوانوں کا تناسب 58 فیصد ہے۔ 69 سالہ ٹرمپ نے بتایا کہ آج سفید فام امریکی شہریوں کا معاشی موقف افریقی نژاد امریکی نوجوانوں کے موقف سے کہیں بہتر ہے کیونکہ اول الذکر باروزگار ہیں اور آخرالذکر بیروزگار۔ ٹرمپ کو ان کی بے باکانہ تنقیدوں کے لئے جانا جاتا ہے خصوصی طور پر چین، میکسیکو اور جاپان کے خلاف انہوں نے بغیر کسی ہچکچاہٹ کے اپنی کئی تقاریر میں انہیں تنقیدوں کا نشانہ بنایا ہے۔ روزگار سے متعلق انہوں نے کل جنوبی کیرولینا پرائمری میں کامیابی کے بعد ہی لب کشائی کی اور اس طرح اب ٹرمپ کے پاس دو کامیابیاں اور پہلی تین پرائمریز میں سے ایک میں دوسرا مقام حاصل ہے۔ انہوں نے یہ پیش قیاسی بھی کی کہ دیگر تمام امیدوار یکے بعد دیگرے یا تو دستبردار ہوتے چلے جائیں گے یا پھر شکست سے دوچار ہوں گے جیسا کہ آج جیب بش دستبردار ہوگئے۔ اپنی بات جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آخری اور کانٹے کا مقابلہ صرف ان کے اور ہلاری کلنٹن کے درمیان ہی ہوگا اور اب کی بار ووٹرس کی اتنی زیادہ تعداد پولنگ بوتھس تک پہنچے گی جو امریکہ کی تاریخ میں آج تک نہیں ہوا ہوگا۔ ٹرمپ نے کہا کہ دوسرے ممالک میں جب بھی انتخابات منعقد ہوئے ہیں تو وہاں ووٹرس کی تعداد بہت زیادہ ہوتی ہے۔ ان ممالک کے مقابلے امریکہ میں رائے دہی کا اتنا زیادہ چلن نہیں ہے جتنا ہونا چاہئے لیکن امریکہ میں اب کی بار ایسا نہیں ہوگا۔ امریکی ووٹرس اب ایک نئی تاریخ رقم کریں گے بشرطیکہ مقابلہ میں صرف وہ (ٹرمپ) اور ہلاری ہی باقی رہ جائیں اور اس کے بعد جیت ان کا (ٹرمپ) مقدر بن جائے گی۔ سابق ریالٹی ٹی وی اسٹار ٹرمپ نے کہا کہ وہ پارٹی کے جولائی میں منعقد شدنی کنونشن سے قبل پرامید ہیں کہ وہ ان کی جیت کیلئے درکار مندوبین کو جیتتے ہوئے ری پبلکن نامزدگی کے عمل کی تکمیل بھی کرلیں گے۔ انہوں نے یہ پیش قیاسی بھی کی کہ امریکہ کی دو ریاستیں نیویارک اور مشی گن ان کی جھولی میں ہوں گے۔ یہی نہیں بلکہ وہ ان ریاستوں میں بھی غلبہ حاصل کریں گے جن ریاستوں کے بارے میں ری پبلکنس نے تصور بھی نہیں کیا ہوگا۔

TOPPOPULARRECENT