Monday , December 11 2017
Home / Top Stories / ہندوستان ، ہندوؤں کا ملک ہے : موہن بھاگوت

ہندوستان ، ہندوؤں کا ملک ہے : موہن بھاگوت

اس کا یہ مطلب نہیں کہ وہ ’دوسروں‘ کا ملک نہیں ہے ، مادر ہند کے تمام سپوت ہندوستانی ہیں
اندور ۔ /28 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) آر ایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت نے کہا ہے کہ ہندوستان ، ہندوؤں کا ملک ہے لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ یہ ’دوسروں‘ کا (ملک) نہیں ہے ۔ بھاگوت نے کالجوں میں زیرتعلیم آر ایس ایس کارکنوں کے ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے گزشتہ روز کہا کہ صرف حکومت ہی تن تنہا ترقی نہیں لاسکتی اور اس کو سماج میں تبدیلی لانے کی ضرورت ہے ۔ بھاگوت نے کہا کہ ’’جرمن کس کا ملک ہے ؟ یہ جرمنوں کا ملک ہے ۔ برطانیہ ، برطانیوں کا ملک ہے ۔ امریکہ ، امریکیوں کا ملک ہے اور اسی طرح ہندوستان بھی ہندوؤں کا ملک ہے لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ یہ ’دوسروں‘ کا ملک نہیں ہے ‘‘ ۔ آر ایس ایس کے سربراہ نے کہا کہ ’’ہندو کی اصطلاح ‘‘ ان تمام کا احاطہ کرتی ہے جو بھارت ماتا (مادر ہند) کے سپوت ہیں اور ان کے آباء و اجداد ہندوستانی تھے اور وہ ہندوستانی تہذیب کے مطابق زندگی بسر کیا کرتے ہیں ‘‘ ۔ انہوں نے کہا کہ کوئی بھی لیڈر یا پارٹی ملک کو عظيم نہیں بناسکتی لیکن اس کے لئے ایک تبدیلی لانے کی ضرورت ہے اور اس مقصد کیلئے ہمیں سماج کو تیار کرنا ہوگا ۔ بھاگوت نے کہا کہ ’’پرانے زمانہ میں ترقی کے لئے عوام خدا کی طرف دیکھا کرتے تھے ۔ لیکن کل یگ (عصر حاضر) میں عوام ، حکومت کی طرف دیکھا کرتے ہیں ۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ حکومت صرف اتنی دور ہی جاسکتی ہے جہاں تک سماج جاسکتا ہے ‘‘ ۔ آر ایس ایس کے سربراہ نے کہا کہ ’’سماج کو حکومت کا پدر سمجھا جاتا ہے اور حکومت سماج کی خدمت تو کرسکتی ہے لیکن وہ سماج میں تبدیلی نہیں لاسکتی ۔ سماج جب اپنے طور پر کوئی تبدیلی لاتی ہے تو نظام و حکومت میں اس تبدیلی کی جھلک نظر آسکتی ہے ‘‘ ۔ بھاگوت نے مزید کہا کہ ہندوستان کو خوشحال ، طاقتور اور ’وشواگرو‘ (عالمی استاذ) بنانے کیلئے دیش واسیوں کو چاہئے کہ وہ اپنے دلوں کو کسی بھی بنیاد پر ’’امتیاز و تعصب‘‘ کے خیال سے نجات

TOPPOPULARRECENT