Sunday , May 27 2018
Home / Top Stories / ’ہندوستان آہستگی کے ساتھ خانہ جنگی کی سمت بڑھ رہا ہے ‘

’ہندوستان آہستگی کے ساتھ خانہ جنگی کی سمت بڑھ رہا ہے ‘

فسادات اب شہروں تک محدود نہیں ، عوام کے گھروں میں داخل ہورہے ہیں : کنہیا کمار

ممبئی ۔ /9 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام ) جواہر لعل نہرو یونیورسٹی اسٹوڈنٹس یونین کے لیڈرکنہیا کمار نے آج کہا کہ ہندوستان آہستگی کے ساتھ خانہ جنگی کی سمت بڑھ رہا ہے ۔ کیونکہ فسادات اب محض بڑے شہروں تک محدود نہیں رہے ہیں بلکہ آہستہ آہستہ عوام کے گھروں میں داخل ہورہے ہیں ۔ کنہیا نے اس بات پر گہرے افسوس اور حیرت کا اظہار کیا کہ تشدد اب روزمرہ کا معمول بن گیا ہے جبکہ روٹی ، کپڑا اور مکان ، صحت ، تعلیم اورکسانوںکے مسائل جیسے بنیادی سوالات پس پشت ڈال دیئے گئے ہیں اور ان پر مطلوبہ توجہ مرکوز نہیں کی جارہی ہے ۔ کنہیا کمار نے یہاں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’ہندوستان آہستگی سے خانہ جنگی کی سمت بڑھ رہا ہے ۔ جبکہ ہم اس کو صاف طور پر نہیں دیکھ پارہے ہیں ۔ فسادات اب محض شہروں کا ہی مسئلہ نہیں رہے ہیں (بلکہ ) فسادات اب عوام کے گھروں میں داخل ہورہے ہیں ۔ ڈنر ٹیبلس دو حصوں میں تقسیم ہوچکے ہیں ۔اگر کوئی باپ سیکولرزم کے حق میں موقف اختیار کرتا ہے تو بیٹا اس (باپ) کو پاکستان کا حامی کہتا ہے ‘‘ ۔ جواہر لعل نہرو یونیورسٹی طلبہ یونین کے سابق صدر کنہیا کمار نے کہا کہ دیہاتوں اور گھروںمیں (تقسیم کی) لکیریں کھینچی جاچکی ہیں ۔ مسلم غالب آبادی والے محلہ جات ’’ منی پاکستان‘‘ کہلائے جارہے ہیں ۔ کنہیا نے مزید کہا کہ ’’فرقہ پرستی اس حد تک زہر آلود ہوچکی ہے کہ آر ایس ایس بھی اب دیہاتوں کو تقسیم کرنے کے قابل ہوگئی ہے ۔ فسادات بھڑکانے کیلئے عوام کو اب باہر کے افراد کی ضرورت نہیں رہی ۔ مقامی افراد بھی یہ کام کرنے لگے ہیں ۔جو نوجوان آپس میں کرکٹ کھیلا کرتے تھے ۔ ایک ہی اسکول میں پڑھے تھے۔ اب کہہ رہے ہیں کہ ان کے (یہ ) دوست پاکستانی ہیں ‘‘ ۔ انہوں نے کہا کہ ’’مجموعی گھریلو پیداوار کی شرح میں اگر ترقی ہوئی ہے تو اس میں زراعت، پارچہ اور تعمیرات کو شامل نہیں کیا گیا ہے ۔ (اعداد اور ہندسوںکی الٹ پھیر) ایک بڑا مسئلہ ہے ‘‘ ۔ کنہیا نے کہا کہ ’’اگر کسان خودکشی کرتے ہیں اور ایک سال میں 12000 کسان اپنی زندگیوں کو ختم کرلیتے ہیں تو انہیں انشورنس فراہم کرنے والی کمپنیاں 10,000 کروڑ روپئے کا منافع کماتی ہیں ۔ یہ ایک بڑا مسئلہ ہے ۔] کنہیا نے کہا کہ موجودہ حکومت محض تقریروں اور پروپگنڈہ سے چلائی جارہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کالے دھن اور جعلی کرنسی کے خاتمہ کیلئے حکومت نے نوٹ بندی کی تھی لیکن نوٹ بندی کے ایک ماہ کے اندر ہی 10 لاکھ روپئے کے نقلی نوٹ دستیاب ہوئے ۔

TOPPOPULARRECENT