Tuesday , January 23 2018
Home / کھیل کی خبریں / ہندوستان اور انگلینڈ کے درمیان آج پانچویں ٹسٹ کا آغاز

ہندوستان اور انگلینڈ کے درمیان آج پانچویں ٹسٹ کا آغاز

لندن۔14اگست(سیاست ڈاٹ کام ) گذشتہ دو مقابلوں میں شرمناک ناکامیوں کے بعد ہندوستان سیریز کے پانچویں اور آخری ٹسٹ میں کل انگلینڈ کا پھر ایک مرتبہ سامنا کرے گاتاہم مہیندر سنگھ دھونی کی زیرقیادت مہمان ٹیم کو اس مقابلہ میں کامیابی ضروری ہے تاکہ سیریز کو 2-2سے برابر کرسکے ۔ لارڈس میں یادگار کامیابی حاصل کرنے کے بعدہندوستانی ٹیم اچانک سیری

لندن۔14اگست(سیاست ڈاٹ کام ) گذشتہ دو مقابلوں میں شرمناک ناکامیوں کے بعد ہندوستان سیریز کے پانچویں اور آخری ٹسٹ میں کل انگلینڈ کا پھر ایک مرتبہ سامنا کرے گاتاہم مہیندر سنگھ دھونی کی زیرقیادت مہمان ٹیم کو اس مقابلہ میں کامیابی ضروری ہے تاکہ سیریز کو 2-2سے برابر کرسکے ۔ لارڈس میں یادگار کامیابی حاصل کرنے کے بعدہندوستانی ٹیم اچانک سیریز سے باہرہوگئی ہے جیسا کہ اسے ساؤتھمپٹن اور مانچسٹر میں یکے بعد دیگرے شرمناک شکست برداشت کرنی پڑی جس کے بعد اب وہ سیریز میں 1-2سے پیچھے ہے ۔ ہندوستان کا نوجوان بیٹنگ شعبہ انگلش بولروں کے خلاف تاش کے پتوں کے طرح بکھر گیا ۔ ہندوستان کیلئے آخری مقابلہ میں خوشخبری یہ ہے کہ اس کے دراز قد اور ان فام بولر ایشانت شرما آخری مقابلہ کیلئے دستیاب ہیں ‘ لیکن ٹیم انتظامیہ کو قطعی 11کھلاڑیوں کے انتخاب میں مسائل کا سامنا ہے ۔ ناقص فام کا شکار رویندر جڈیجہ کو ٹیم سے خارج کیا جاسکتا ہے ۔ ہندوستانی بیٹنگ شعبہ میں ویراٹ کوہلی اور چیٹیشور پجارا اپنی صلاحیتوں اور معیار کے مطابق مظاہرہ کرنے میں ناکام ہیں جس کا ٹیم کو شدید نقصان اٹھانا پڑرہا ہے ۔ پجارا چونکہ ونڈے ٹیم کے رکن نہیں ہے

لہذا ان کے لئے اس دورہ پر آخری موقع ہے کہ وہ اس ٹسٹ میں بہتر مظاہرہ کرتے ہوئے خود کو بیرونی وکٹوں پر بھی بہتر بیٹسمین ثابت کریں ۔ ہندوستانی اوپنر گوتم گمبھیر کافی دباؤ میں ہیں کیونکہ انہیں دہلی شہر کے ساتھی اوپنر شکھر دھون کے مسلسل ناکام ہونے کے بعد ٹیم میں شامل کیا گیا ہے تاہم وہ گذشتہ مقابلہ میں کامیاب نہیں ہوپائے ہیں۔ ایشانت شرما کا مکمل صحت یاب ہونا ٹیم کیلئے خوش آئند ہے کیونکہ لارڈس ٹسٹ کی کامیابی میں انہوں نے کلیدی رول ادا کیا تھا ۔ قوی امکانات ہے کہ ایشانت شرما ایک اور فاسٹ بولر پنکج سنگھ کے مقام پر ٹیم میں شامل کئے جائیں گے کیونکہ ورن ارون نے گذشتہ مقابلہ میں کافی متاثرکن مظاہرہ کیا ہے ۔

جڈیجہ کا ٹیم میں مقام انتہائی خطرہ میں پڑچکا ہے کیونکہ مانچسٹر میں وہ بحیثیت پانچویں بولر اپنی موجودگی کا احساس دلانے میں کامیاب نہیں ہوپائے ہیں اور ان کے مقام پر آل راؤنڈر اسٹیورٹ بنی کے نام پر پھر مرتبہ غور کیا جارہا ہے ۔ بنّی کا مقابلہ روی چندرن اشون سے بھی ہے کیونکہ سلپ میں اشون کو ایک بہتر کھلاڑی مانا جاتا ہے کیونکہ سیریز کے دوران اس مقام پر ہندوستانی فیلڈروں نے کیچس چھوڑے ہیں ۔ ٹیم انتظامیہ نے اشارہ دیا ہے کہ قطعی 11کھلاڑیوں میں پانچ بولروں کا فارمولہ برقرار رکھا جائے گا ۔ لارڈس ٹسٹ میں 95رنز کی کامیابی کے بعد ہندوستان کیلئے ہر شعبہ میں نتائج بہتر حاصل ہورہے تھے لیکن اچانک ساؤتھمپٹن اورمانچسٹر میں شرمناک ناکامیوں کے بعد مہیندر سنگھ دھونی کی ٹیم کو اب سیریز بچانے کیلئے آخری مقابلہ میں کامیابی ضروری ہے ۔ دھونی بیرونی ممالک ناکامیوں کے منفی ریکارڈس کے سمت آگے بڑھ رہے ہیں جیسا کہ انہیں 13مقابلوں میں شکست برداشت کرنی پڑی ہے۔ دوسری جانب انگلینڈ سیریز میں حاصل کردہ سبقت کو برقرار رکھتے ہوئے کامیابی کیلئے کوشاں ہیں۔ علاوہ ازیں اسٹیورٹ براڈ صحت یاب ہوکر قطعی 11کھلاڑیوں میں شامل کئے جاچکے ہیں ۔ انگلینڈ کواوپنر سیم رابسن کے علاوہ بڑی مشکل سے کوئی دوسرا مسئلہ درپیش ہیں۔

دھونی کی قیادت غیرمنطقی:مارٹن
ویلنگٹن ۔14اگست ( سیاست ڈاٹ کام) نیوزی لینڈ کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان مارٹن کرو نے ٹسٹ کرکٹ میں ہندوستانی کرکٹ ٹیم کے کپتان مہیندرسنگھ دھونی کی قیادت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ان کی حکمت عملی غیرمنطقی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ دھونی ٹسٹ کرکٹ کو خیرباد کہہ دیں تو ہندوستانی ٹیم کو ان کی کمی محسوس نہیں ہوگی ۔ مارٹن کرو کے بموجب دھونی کی حکمت عملی محدود اوورس کیلئے بہتر ہے لیکن ٹسٹ کرکٹ کیلئے وہ بہتر کپتان نہیں ہیں۔دھونی تاحال 87 ٹسٹ مقابلوں میں شرکت کرچکے ہیں لیکن اس طرح وہ کب تک ہندوستانی ٹیم کی نمائندگی کرتے رہیں گے ۔ مارٹن کرو نے کہا کہ دھونی کو اب آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ میں منعقد شدنی ورلڈ کپ میں خطاب کے دفاع پر تمام توجہ مرکوز کرنی چاہیئے ۔

TOPPOPULARRECENT