Sunday , June 24 2018
Home / ہندوستان / ہندوستان سے چائے اور ادویہ کی درآمدات کیلئے ایران کی دلچسپی

ہندوستان سے چائے اور ادویہ کی درآمدات کیلئے ایران کی دلچسپی

نئی دہلی ۔ 14 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) ایران نے ہندوستان سے چائے اور ادویات کی درآمدات میں اضافہ کی خواہش ظاہر کی ہے اور دونوں ممالک کے باہمی تجارتی روابط کو ایک نئی جہت عطا کرنے کیلئے رضامندی کا اظہار کیا ہے۔ وزارت کامرس کے ایک سرکردہ عہدیدار نے یہ بات بتائی۔ سکریٹری کامرس راجیو کھیر کے حالیہ دورہ تہران کے موقع پر دونوں ممالک نے چائے او

نئی دہلی ۔ 14 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) ایران نے ہندوستان سے چائے اور ادویات کی درآمدات میں اضافہ کی خواہش ظاہر کی ہے اور دونوں ممالک کے باہمی تجارتی روابط کو ایک نئی جہت عطا کرنے کیلئے رضامندی کا اظہار کیا ہے۔ وزارت کامرس کے ایک سرکردہ عہدیدار نے یہ بات بتائی۔ سکریٹری کامرس راجیو کھیر کے حالیہ دورہ تہران کے موقع پر دونوں ممالک نے چائے اور ادویات کی تجارت میں اضافہ کے امکانات تلاش کئے۔ اس وقت ایران یہ دو اشیاء ہندوستان سے درآمد کرتا ہے لیکن اس کی قدر کافی کم ہے۔ چائے کی ایران کو برآمدات اس لئے کم ہے کیونکہ ایران میں بین الاقوامی قواعد (Codex) کا اطلاق ہوتا ہے جبکہ ہندوستانی مینوفیکچررس اس پر عمل نہیں کرتے۔ جہاں تک ادویات کا تعلق ہے، ایران اسے امریکہ اور یوروپی ممالک سے درآمد کرتا ہے۔ اب ایرانی تاجرین نے ہندوستانی جنرک ادویہ کی اہمیت کو تسلیم کیا ہے

اور انہوں نے ہندوستان سے درآمدات میں اضافہ کی خواہش ظاہر کی ہے۔ کھیر نے بتایا کہ ایران اب اس حقیقت کو تسلیم کرتا ہے کہ جنرک ادویہ کی تیاری کے معاملہ میں ہندوستان سب سے آگے ہے۔ ہم نے ایران کے فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن ریگولیٹر کو ہندوستان کا دورہ کرتے ہوئے اس بارے میں معلومات حاصل کرنے کی دعوت دی ہے۔ اس کے علاوہ ہندوستان نے چائے کے ماہرین کو بھی مدعو کیا ہے اور ان سے کہا ہیکہ وہ یہاں کے چائے کے باغات کا مشاہدہ کریں۔ ساتھ ہی ساتھ فیکٹریز کا بھی دورہ کرتے ہوئے چائے کی تیاری اور اس کے معیار کا جائزہ لیں۔ اس دوران گرین پیس انڈیا کی ہندوستانی چائے کے بارے میں رپورٹ کا بھی ملک کی برآمدات پر اثر پڑا ہے۔ گرین پیس انڈیا نے ایک تحقیقاتی رپورٹ شائع کی تھی

جس میں یہ دعویٰ کیا گیا تھا کہ ہندوستانی چائے میں مہلک اجزاء پائے جاتے ہیں۔ ہندوستانی عہدیداروں نے ایران سے خواہش کی ہیکہ وہ اس رپورٹ پر بھروسہ نہ کریں۔ صنعتی شعبہ کے ایک ماہر نے کہا ہیکہ ایران میں ہندوستانی چائے اور فارماسیوٹیکل شعبہ کیلئے کافی مواقع موجود ہیں۔ فیڈریشن آف انڈین ایکسپورٹس آرگنائزیشن کے ڈائرکٹر جنرل اور سی ای اواجئے سہائے نے کہا کہ ایران کو چائے برآمد کرنے والے دو اہم ممالک سری لنکا اور کینیا ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستانی کمپنیاں اپنے معیار میں بہتری لاتے ہوئے چائے کی برآمد میں اضافہ کرسکتی ہیں۔ ایران کو برآمدات میں اضافہ کے نتیجہ میں تجارتی خسارہ کم کرنے میں بھی مدد ملے گی۔ سال 2013-14ء میں ہندوستانی برآمدات 4.97 بلین ڈالرس رہی جبکہ درآمدات 10.3 بلین ڈالرس تھیں۔

TOPPOPULARRECENT