Tuesday , November 21 2017
Home / Top Stories / ’’ ہندوستان کو توڑنے‘‘ کے خواہشمندوں کی تائید کاراہول گاندھی پر الزام

’’ ہندوستان کو توڑنے‘‘ کے خواہشمندوں کی تائید کاراہول گاندھی پر الزام

مرکزی وزیر فینانس کا نائب صدر کانگریس کے خلاف بیان‘ طلبہ لیڈر کنہیا کمار کی تقریر ‘ ’’ہماری فتح ‘‘ جیٹلی کا ادعا
ورنداون۔6مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی وزیر فینانس ارون جیٹلی نے آج راہول گاندھی پر سخت تنقید کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے ایسا لوگوں کے ساتھ ’’ہمدردی‘‘ کی ہے جو ’’ہندوستان کو توڑنے کیلئے نعرہ بازی کررہے تھے ‘‘ ۔ انہوں نے کہا کہ نائب صدر کانگریس کا نظریاتی کھوکھلا پن ہے کہ وہ ایسا کام کررہے ہیں جو اندرا گاندھی اور راجیو گاندھی نے کبھی نہیں کیا تھا ۔ سینئر بی جے پی قائد نے جواہر لال نہرو یونیورسٹی طلبہ یونین کے قائد کنہیا کمار کی تقریر کو جو ضمانت پر ان کی رہائی کے بعد کی گئی تھی ’’ ہماری فتح ‘‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ وہ ہند دشمن نعرہ بازی کیلئے جیل گئے تھے لیکن جب باہر آئے تو انہوں نے ’’ جئے ہند‘‘ کا نعرہ لگایا اور ترنگا لہرایا ۔ بھارتیہ جنتا یووا مورچہ کے کنونشن کے اختتامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ارون جیٹلی نے کہا کہ یہ ملک کی بدقسمتی ہے کہ نائب صدرکانگریس جہادیوں کے چھوٹے گروپ اور ماؤسٹوں کے بڑے گروپ کی کارروائیوں سے ہمدردی رکھتے ہیں ۔ کانگریس نے ہمیشہ اُن افراد کے خلاف جنگ کی ہے جنہوں نے ملک کو توڑنے کی کوشش کی ۔

گذشتہ 100سال سے قوم پرست اور قوم دشمن طاقتوں کے درمیان جنگ جاری ہے ۔ جیٹلی نے راہول پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ایک نئے رجحان کا آغاز ہوا ہے ۔ بعض لوگ چاہتے ہیں کہ ایسی تقریب منعقد کریں جو یعقوب میمن کی یاد میں منعقد کی جارہی ہو اور بعض افضل گرو کی یاد منانا چاہتے ہیں ۔ یہ لوگ جہادیوں کا چھوٹا گروپ ہے ‘ جب کہ بڑا گروپ ماؤسٹوں کا ہیں ۔ ملک کو توڑنے کی تائید میں نعرہ بازی کی گئی تھی اور یہ ملک کی بدقسمتی تھی کہ کانگریس کا ایک قائد جو اب تک اصل دھارے میں شامل تھا اُن سے ہمدردی کرنے کیلئے پہنچ گیا ۔ مہاتما گاندھی نے ایسا کبھی نہیں کیا تھا ‘ نہ امبیڈکر نے ‘ نہ جواہر لال نہرو نے ‘ نہ اندرا گاندھی نے اور نہ راجیو گاندھی نے ‘یہ نظریاتی کھوکھلا پن ہے ۔ بی جے پی کے نوجوانوں کے شعبہ کے کنونشن کے اختتام اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سینئر بی جے پی قائد نے کہا کہ یہ قومی ذمہ داری ہے اور ہمیشہ فاتح بن کر ابھرتی ہے ۔ وہ کنہیا کی تقریر کا ان کا نام لئے بغیر حوالہ دے رہے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ بائیں بازو کی یہ تاریخی روایت ہے کہ وہ ہمیشہ قومی مفاد کے خلاف بات کرتے ہیں لیکن کانگریس ہمیشہ ملک کو توڑنے کی سازش کے خلاف رہی ہے ‘ صرف ایمرجنسی کے دنوں میں اس سے انحراف کیا گیا تھا اور سی پی آئی کی تائید کی گئی تھی ۔ انہوں نے کہا کہ جواہر لال نہرو یونیورسٹی کا تنازعہ اور مودی حکومت اور بی جے پی پر تنقید دو روزہ بی جے وائی ایم چوٹی کانفرنس کا سرفہرست موضوع تھا ۔ اس اجلاس سے قومی صدر بی جے پی امیت شاہ ‘ بی جے پی زیر اقتدار ریاستوں کے چیف منسٹرس اور مرکزی وزراء نے قوم پرستی کے موضوع پر کانگریس پر خاص طور پر راہول گاندھی پر سخت تنقید کی ۔ملک گیر سطح پر تبدیلی کا دعویٰ کرتے ہوئے ارون جیٹلی نے کہا کہ مودی حکومت اپنی ذمہ داریاں پوری کرے گی ۔

TOPPOPULARRECENT