Friday , January 19 2018
Home / شہر کی خبریں / ہندوچین کی معاشی ترقی سے ترقیاتی پر مبنی نظام حکمرانی کی جھلک

ہندوچین کی معاشی ترقی سے ترقیاتی پر مبنی نظام حکمرانی کی جھلک

دونوں ممالک کی ترقی میں آبادیوں کا اہم رول ، امریکی ادارہ کے منیجنگ ڈائرکٹر کا خطاب

دونوں ممالک کی ترقی میں آبادیوں کا اہم رول ، امریکی ادارہ کے منیجنگ ڈائرکٹر کا خطاب
حیدرآباد 12 سپٹمبر (سیاست نیوز) ہند ۔ چین معیشت کے استحکام کی بنیادی وجوہات ترقیاتی نظریات کا حامل نظام حکمرانی ثابت ہورہا ہے۔ امریکہ معاشی استحکام کیلئے اِن ممالک کی پالیسیوں و منصوبہ بندیوں کا مطالعہ کررہا ہے۔ مسٹر ولیم جے انتھولس منیجنگ ڈائرکٹر بروکنگس انسٹی ٹیوشنس (امریکہ) گزشتہ دو برسوں کے دوران ہند ۔ چین کے مطالعاتی دورہ پر تھے اور اُنھوں نے آج حیدرآباد میں منتھن و قونصل خانہ امریکہ متعینہ حیدرآباد کے زیراہتمام منعقدہ ایک مذاکرہ سے خطاب کے دوران اپنے تجربات سے واقف کروایا۔ اِن کی کتاب “Inside out India and China” ہندوستان میں شائع ہوچکی ہے جس میں اُنھوں نے اپنے مطالعاتی دورے کی تفصیلات درج کی ہیں۔ بروکنگس کے منیجنگ ڈائرکٹر مسٹر انتھولس نے بتایا کہ چین میں اُنھوں نے یہ بات محسوس کی کہ چینی افواج کا معیشت پر کنٹرول نہیں ہے اور چینی معیشت مستحکم ہونے کی بنیادی وجوہات میں محنت اور منصوبہ بندیاں شامل ہیں۔ اُنھوں نے بتایا کہ ملک کی معاشی ترقی کے لئے منصوبہ بندی کا عمل انتہائی تیز رفتار ہونا چاہئے۔ اُنھوں نے چین میں برقی پیداوار کے علاوہ دیگر اُمور کا احاطہ کرتے ہوئے بتایا کہ ہندوستان اور چین کی ترقی میں جو عنصر نمایاں ہے اِن میں دونوں ممالک کی آبادیاں ہیں جوکہ ملک کی ترقی میں کلیدی کردار ادا کررہی ہیں۔ اُنھوں نے بتایا کہ دہلی اور بیجنگ دو ایسے مقامات ہیں جہاں سے دنیا کی ایک تہائی آبادی پر حکمرانی کی جاتی ہے۔ اُنھوں نے اپنے لیکچر کے دوران نریندر مودی کے گجرات ماڈل کا تذکرہ کرتے ہوئے کہاکہ تحقیق کے دوران اُنھوں نے پایا کہ گجرات ماڈل کو قابل عمل بنانے کیلئے کرپشن سے پاک نظام حکمرانی کو یقینی بنایا۔ مسٹر جے ولیم انتھولس نے بتایا کہ چین اور ہندوستان دنیا بھر میں دو ایسے ممالک ہیں جن کے روشن مستقبل کی پیش قیاسی کی جاسکتی ہے۔ اُنھوں نے ہندوستان میں ریاستوں کے نظام حکمرانی کا تذکرہ کرتے ہوئے کہاکہ گزشتہ چند برسوں میں ہندوستانی سیاست میں ایک خصوصی تبدیلی نوٹ کی جارہی ہے۔ حالیہ عرصہ میں ہندوستان بھر میں علاقائی جماعتوں کو قوت حاصل ہوئی ہے اور قومی سطح پر نریندر مودی نے 2014 ء انتخابات میں جو کامیابی حاصل کی ہے وہ یہ واضح پیغام دے رہی ہے کہ نریندر مودی کو ترقی اور ویژن رکھنے والی سیاست کے خواہشمندوں نے منتخب کرنے میں اہم رول ادا کیا ہے۔ جبکہ شناخت کی سیاست کو اِن انتخابات میں شکست ہوئی۔ اُنھوں نے ہندوستان اور چین کو درپیش چیالنجس کا بھی تفصیلی احاطہ کرتے ہوئے کہاکہ نریندر مودی کو ریاستوں کے حالات کو بہتر بنانے کی بھی منصوبہ بندی کرنی ہوگی۔ علاوہ ازیں ہندوستان کی سرحدوں سے جڑے ممالک سے تعلقات کو استوار رکھنے پر بھی خصوصی توجہ مرکوز کرنی ہوگی۔ اِس موقع پر مسٹر جے ولیم انتھولیس نے شرکاء کے سوالوں کے جواب بھی دیئے۔ لکچر میں امریکی قونصل خانہ حیدرآباد میں متعین قونصل برائے عوامی اُمور مسز اپریل وِل، نائب قونصل مسٹر سلیل قادر کے علاوہ دیگر موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT