Wednesday , January 17 2018
Home / سیاسیات / ہندو راشٹرا سینا پر امتناع کا جائزہ : آر آر پاٹل

ہندو راشٹرا سینا پر امتناع کا جائزہ : آر آر پاٹل

ممبئی۔ 14 جون (سیاست ڈاٹ کام) حکومت ِ مہاراشٹرا حال ہی میں آئی ٹی پروفیشنل محسن شیخ کے پونے میں قتل کے واقعہ کی بنا ہندو تنظیم ’ہندو راشٹرا سینا‘ پر امتناع کے امکان کا جائزہ لے رہی ہے۔ وزیر داخلہ آر آر پاٹل نے ایم ایل سی کپل پاٹل کی تحریک ِ توجہ دہانی کے جواب میں کہا کہ ’ہم اس بات کا جائزہ لیں گے کہ کیا تنظیم پر امتناع عائد کیا جاسکتا ہ

ممبئی۔ 14 جون (سیاست ڈاٹ کام) حکومت ِ مہاراشٹرا حال ہی میں آئی ٹی پروفیشنل محسن شیخ کے پونے میں قتل کے واقعہ کی بنا ہندو تنظیم ’ہندو راشٹرا سینا‘ پر امتناع کے امکان کا جائزہ لے رہی ہے۔ وزیر داخلہ آر آر پاٹل نے ایم ایل سی کپل پاٹل کی تحریک ِ توجہ دہانی کے جواب میں کہا کہ ’ہم اس بات کا جائزہ لیں گے کہ کیا تنظیم پر امتناع عائد کیا جاسکتا ہے‘۔ ایم ایل سی نے یہ جاننا چاہا کہ آئی ٹی پروفیشنل کے قتل کے پس پردہ کونسی طاقتیں کارفرما ہیں۔ وزیر داخلہ نے بتایا کہ پولیس اس تنظیم اور اسکے سربراہ دھننجئے دیسائی کے تعلق سے کافی سنجیدہ ہے۔ اب تک 23 افراد کو قتل کے سلسلے میں گرفتار کیا گیا ہے۔

اور دیسائی کے خلاف سنگین دفعات درج رجسٹر کی گئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس پہلو کی تحقیقات کی جارہی ہے کہ کیا آئی ٹی پروفیشنل قتل کا گزشتہ سال اگست میں پونے میں نریندر دابھولکر قتل واقعہ سے کوئی تعلق ہے؟ پاٹل نے کہا کہ ہندو راشٹرا سینا نے اقلیتی فرقہ میں دہشت پیدا کر رکھی ہے اور اس کی وجہ سے اقلیتیں خوف کے عالم میں ہیں۔ کونسل صدرنشین شیواجی راؤ دیشمکھ نے کہا کہ اگر ایسے قتل کے واقعات قابل مذمت ہیں۔ 28 سالہ آئی ٹی پروفیشنل کو پرتشدد ہجوم نے 2 جون کو مضافاتی ہداسپور میں دن دھاڑے قتل کردیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT