Tuesday , July 17 2018
Home / کھیل کی خبریں / ہند۔افریقہ آج پانچواں ونڈے

ہند۔افریقہ آج پانچواں ونڈے

پورٹ الزبتھ۔12 فبروری (سیاست ڈاٹ کام ) ہندوستانی کرکٹ ٹیم اپنی غلطیوں سے گذشتہ مقابلہ گنوایا ہے جس سے میزبان جنوبی افریقہ کو رواں ونڈے سیریز میں واپسی کا موقع مل گیا، لیکن کل یہاں پانچویں ونڈے میں اس کے پاس غلطیوں سے سبق حاصل کرتے ہوئے سریز پر قبضہ کو یقینی بنانے کا دوبارہ موقع رہے گا۔ہندوستانی ٹیم جنوبی افریقہ کی زمین پر اپنا آخری ٹسٹ اور چھ میچوں کی سیریز کے ابتدائی تینوں ونڈے جیتنے کے بعد بہترین فام میں دکھائی دے رہی تھی لیکن گلابی جرسی میں افریقی ٹیم لاجواب ہوگئی اور اس نے 3-1کے ساتھ واپسی کا اشارہ دے دیا۔اگرچہ کپتان ویراٹ کوہلی کی ٹیم کے پاس25 برسوں میں جنوبی افریقہ کی زمین پر اپنی پہلی سریز جیت کر تاریخ رقم کرنے کے ابھی دو موقع ہیں، لیکن بہتر ہوگا کہ ٹیم یہ کام پورٹ الزبتھ میں مکمل کرلے۔ جوہانسبرگ میں ہندستانی فیلڈرز نے بارش سے متاثرہ میچ میں کئی کیچ چھوڑے ، نو بال اس کے لیے جی کا جنجال بن گئی تو گزشتہ تین میچوں کے ہیرو کلدیپ یادو اور یجویندر چہل کی اسٹار اسپن جوڑی نے مل کر11.3 اوورس میں 119رنز لٹا دیئے ۔کوہلی اس کارکردگی سے اتنے خفا دکھائی دیئے کہ انہوں نے صاف الفاظ میں کہا کہ ہندوستان اس میچ میں جیت کا حقدار نہیں تھا۔ایک بات صاف ہے کہ ٹیم اپنی غلطیوں اور کوتاہیوں کو جانتی ہے ، اور اس کی کوشش اسے دہرانے سے بچنے کی ہوگی۔بولنگ میں جہاں دونوں اسپنر پہلی مرتبہ مہنگے ثابت ہوئے تو وہیں فاسٹ بولروں نے پھر سے اپنی افادیت ثابت کر دی ۔بھونیشور کمار اور جسپریت بمراہ نے سنبھلتے ہوئے27اور21رنز دیے اور ان کے حصے میں ایک وکٹ بھی آئی۔ کوہلی کے ساتھ ٹیم انتظامیہ کا بھی دونوں نوجوان اسپنروں پر اعتماد اور ورلڈ کپ ٹیم میں تقریبا اپنی جگہ پکی کر چکے ان بولروں سے آگے بھی وکٹوں کی امید کی جا سکتی ہے ۔کلدیپ اور چہل نے اب تک 12۔12 وکٹ لئے ہیں وہیں بمراہ (پانچ وکٹ) دوسرے کامیاب بولر ہیں۔ہندستانی ٹیم کے لیے یقینا پورٹ الزبتھ میچ کافی اہم ہو گا تاکہ اسے چھٹے میچ تک دباؤ نہ جھیلنا پڑے ۔ایسے میں ٹیم کے انتخاب پر بھی توجہ دینا ہو گی۔کیپ ٹاؤن میں زخمی ہوئے کیدار جادھو مکمل طور پر فٹ نہیں ہیں اور ٹیم کے پاس اسپن بولنگ میں اس سے کوئی ایک متبادل کم ہو جاتا ہے ۔ان کی شمولیت پر ہنوز سوالیہ نشان ہے وہیں آل راؤنڈر ہاردک پانڈیا نے اب تک چار میچوں میں ایک ہی وکٹ لیا ہے اور صر26 رنز ہی بنا سکے ہیں۔دوسری طرف بیٹنگ میں بھی ٹیم کے لئے روہت شرما باعث تشویش ہیں جو اچھی شروعات دلانے میں ناکام رہے ہیں اور چار میچوں میں 40رنز ہی بنا پائے ہیں جس میں20 رنز ان کا اعظم ترین اسکور ہے ۔ اجنکیا رہانے نے بھی واپسی کے بعد سے بہت متاثر نہیں کیا۔انہوں نے79 رن کی نصف سنچری اننگز کے بعد گزشتہ دو میچوں میں 08 اور11رنز ہی بنائے ہیں۔ مڈل آرڈر میں ٹیم کا سب سے زیادہ انحصار مہندر سنگھ دھونی پر کر سکتی ہے ۔دوسری طرف جنوبی افریقہ ٹیم جہاں مسلسل اپنے کھلاڑیوں کے زخمی ہونے سے پریشان تھی اسے اپنے تجربہ کار اے بی ڈی ولیرس کی واپسی سے اعتماد ملا ہے وہیں پچھلا میچ پانچ وکٹ سے جیتنے کے بعد وہ اور بھی بلند حوصلے کے ساتھ واپسی کا دعوی کر رہی ہے ۔پورٹ الزبتھ کی پچ اسپنروں کے لیے مددگار مانی جاتی ہے ایسے میں عمران طاہر، تبریز شمسی، آرون فیگسو اہم ثابت ہو سکتے ہیں۔ساتھ ہی میزبان ٹیم نے اس گراؤنڈ پر32 میں سے 11میچ ہارے ہیں جبکہ ہندستان نے بھی یہاں پانچ ونڈے میں شکست کھائی ہے ۔ایسے میں دونوں ٹیموں کے لیے یہاں برابری کے مقابلے کی توقع کی جا سکتی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT