Sunday , November 19 2017
Home / Top Stories / ہند۔چین حکمت عملی کی ساجھیداری کو مستحکم بنانے پر زور

ہند۔چین حکمت عملی کی ساجھیداری کو مستحکم بنانے پر زور

مودی ۔ژی ملاقات سے تعلقات کو نئی جہت‘ بیجنگ میں وی کے سنگھ اور وانگ ای کی بات چیت

بیجنگ۔18جون ( سیاست ڈاٹ کام) نیوکلیئرسپلائرس گروپ ( این ایس جی) میں ہندوستان کی رکنیت اور 50ارب امریکی ڈالر مالیتی چین پاکستان اقتصادی راہداری کے بشمول مختلف مسائل پر جاری اختلافات کے درمیان ہندوستان اور چین نے آج بات چیت کی ۔ نئی دہلی نے کہا کہ وہ بیجنگ کے ساتھ باہمی مذاکرات اور حکمت عملی کی ساجھیداری کو مزید مستحکم بنانے کا خواہشمند ہے ۔ مملکتی وزیر خارجہ وی کے سنگھ نے برازیل ‘ ہند ‘ چین اور جنوبی افریقہ پر مشتمل تنظیم ( بریکس) وزرائے خارجہ اجلاس کے موقع پر میزبان وزیر خارجہ وانگ ای سے ملاقات کی ۔ بریکس وزرائے خارجہ چینی شہر زیامن میں ستمبر کے دوران منعقد شدنی بریکس چوٹی کانفرنس کے ایجنڈہ کو قطعیت دینے کے مقصد سے اس اجلاس میں شرکت کررہے ہیں ۔ ہند و چین کے وزراء نے وزیراعظم نریندر مودی اور چین کے صدر ژی جن پنگ کی آستانہ میں ہوئی حالیہ ملاقات کے موقع پر اختیار کردہ بات چیت کے مطابق حکمت عملی کی ساجھیداری کو مزید مستحکم بنانے کے اقدامات پر تبادلہ خیال کیا ۔ وانگ نے وزیراعظم مودی اور صدر ژی کی ملاقات کو بامقصد اور ثمرآور قرار دیا ۔ وی کے سنگھ نے کہا کہ وزیر خارجہ سشما سوراج بیجنگ کے دورہ کی خواہاں تھیں لیکن صحت اور دیگر وجوہات کی بناء پر وہ دورہ نہیں کرسکیں ۔ ’’ ( سشما سوراج ) آپ سے ملاقات کی متمنی تھیں ‘‘ ۔ وی کے سنگھ نے مزید کہا کہ ژی اور مودی ہمارے لئے جہت طئے کئے ہیں اور موجودہ میکانزم کو بہتر بنانے کیلئے دونوں ممالک باہمی احترام اور تعاون کے راستہ پر پیش قدمی کرسکتے ہیں ۔ تاکہ تجارت اور عوام سے عوام کے رابطوں میں مزید اضافہ ہوسکے ۔ وی کے سنگھ نے کہا کہ ’’ ہم دونوں ایشیائی پڑوسی اور ابھرتی ہوئی معیشتیں ہیں اور ہمارے مابین زمانہ قدیم سے گہرے تعلقات ہیں ‘‘ ۔ وی کے سنگھ اس موقع پر دونوں ممالک کے مابین اختلافات یا متنازعہ مسائل کا حوالہ دینے سے گریز کیا ۔

TOPPOPULARRECENT