ہند۔ پاک معاشی تعلقات ‘ سیاست کا شکار : یشونت

نئی دہلی 2 فبروری ( سیاست ڈاٹ کام ) یہ واضح کرتے ہوئے کہ ہندوستان و پاکستان کے مابین معاشی تعلقات سیاست کی وجہ سے متاثر رہے ہیں سابق وزیر فینانس یشونت سنہا نے آج کہا کہ دونوں ملکوں کے مابین تجارت 12 تا 15 بلین ڈالرس سالانہ تک پہونچ سکتی ہے اگر اس سلسلہ میں ضروری اقدامات کئے جائیں ۔ یشونت سنہا نے یہاں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دون

نئی دہلی 2 فبروری ( سیاست ڈاٹ کام ) یہ واضح کرتے ہوئے کہ ہندوستان و پاکستان کے مابین معاشی تعلقات سیاست کی وجہ سے متاثر رہے ہیں سابق وزیر فینانس یشونت سنہا نے آج کہا کہ دونوں ملکوں کے مابین تجارت 12 تا 15 بلین ڈالرس سالانہ تک پہونچ سکتی ہے اگر اس سلسلہ میں ضروری اقدامات کئے جائیں ۔ یشونت سنہا نے یہاں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دونوں ملکوں کے مابین تجارتی و معاشی تعلقات سیاست کا شکار رہے ہیں۔ جب تک ہم سیاست کو ان سے علیحدہ نہیں کرینگے اس وقت تک ہم ہندوستان و پاکستان کے مابین تجارت کو بہتر نہیں بناسکتے ۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ملکوں کے مابین 2004 میں تجارت 0.6 بلین ڈالرس تک تھی جو 2014 میں بڑھ کر 2017 بلین ڈالرس تک پہونچ گئی تھی ۔ اگر دونوں ملکوں کے مابین درکار ضروری اقدامات کئے جائیں تو تجارتی تعلقات بڑھ کر 15 – 20 بلین ڈالرس تک پہونچ سکتے ہیں۔ انہوں نے یاد دہانی کروائی کہ ہندوستان نے پاکستان کو 1996 میں انتہائی پسندیدہ قوم کا موقف دیدیا تھا اور پاکستان نے ابھی تک جواب میں ایسی کارروائی نہیں کی ہے ۔ سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کی حکومت میں وزیر خارجہ رہ چکے یشونت سنہا نے دونوں ملکوں سے خواہش کی کہ وہ اپنی اپنی کرنسی میں تجارت کرنا شروع کریں۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے ابھی تک تجارت میں کرنسی کے تعلق سے کوئی معاہدہ نہیں کیا ہے ۔ کیوں نہیں دونوں ملک اپنی خود کی کرنسی میں تجارت شروع نہیں کرسکتے اور زیادہ سے زیادہ تجارت کو یقینی نہیں بناسکتے ؟ ۔ سابق وزیر فینانس نے یہ بھی تجویز کیا کہ ہندوستان ‘ پڑوسی ملک کے ساتھ غیر متناسب تعلقات کو آگے بڑھائے اور وہ مساوات و یکسانیت پر اصرار نہ کرے۔ انہوں نے کہا کہ اگر پاکستان کے پاس ایسی اشیا ہیں جو ہندوستان کی ممنوعہ فہرست میں شام ہیں تو ہندوستان کو پاکستان سے ہر ایک شئے کو برآمد کرنے سے گریز نہیں کرنا چاہئے ۔

TOPPOPULARRECENT