Thursday , December 14 2017
Home / کھیل کی خبریں / ہند ، پاک کو ہاکی تنازع مل بیٹھ کر حل کرلینے ایف آئی ایچ کا مشورہ

ہند ، پاک کو ہاکی تنازع مل بیٹھ کر حل کرلینے ایف آئی ایچ کا مشورہ

گزشتہ سال چمپینس ٹروفی کا واقعہ دونوں بورڈز کا آپسی معاملہ ۔ ایف آئی ایچ کی نظر میں یہ تنازع ختم ہوچکا ، سی ای او فیئرویدر کا بیان

اسلام آباد ، 17 سپٹمبر (سیاست ڈاٹ کام) انٹرنیشنل ہاکی فیڈریشن نے پاکستان ہاکی فیڈریشن(پی ایچ ایف)اور ہاکی انڈیا(ایچ آئی) کے درمیان چمپینس لیگ کے واقعے پر جاری لفظی جنگ کو آپس میں مل بیٹھ کر حل کرنے کا مشورہ دیا ہے۔ پاکستان ہاکی فیڈریشن نے ہاکی انڈیا کے صدر نریندر بترا کی جانب سے معافی مانگنے کے مطالبے کو مسترد کرتے ہوئے انٹرنیشنل ہاکی فیڈریشن (ایف آئی ایچ) سے اس معاملے میں مداخلت کی درخواست کی تھی۔ بترا نے اپنے ایک بیان میں کہاتھاکہ انھیں ہاکی انڈیا لیگ میں پاکستانی کھلاڑیوں کی شرکت پر خوشی ہوگی لیکن پی ایچ ایف کو گزشتہ سال ہندوستان میں منعقدہ چمپینس ٹرافی میں اپنے کھلاڑیوں کے رویے پر معافی مانگنی ہوگی۔ واضح رہے کہ گزشتہ سال چمپینس ٹرافی کے سیمی فائنل میں پاکستان نے ہندوستان کو اسی کی سرزمین پر شکست سے دوچار کیا تھا۔ بھوبنیشور میں منعقدہ چمپینس ٹروفی ہاکی ٹورنمنٹ کے سیمی فائنل میں پاکستان نے ہندوستان کو 4-3 سے شکست دے کر فائنل میں جگہ بنائی تھی۔ لیکن اصل تنازع اس وقت کھڑا ہوا جب فتح کا جشن مناتے ہوئے پاکستانی کھلاڑیوں نے اپنی شرٹس اتار کر اسٹیڈیم میں موجود تماشائیوں کی جانب لہرائے جبکہ ایک دو کھلاڑیوں نے صحافیوں اور تماشائیوں کی طرف نازیبا اشارے بھی کئے۔ پاکستانی ٹیم کے اس رویے پر عالمی ہاکی تنظیم ایف آئی ایچ نے بھی سرزنش کی تھی جس پر پاکستانی ٹیم کے کوچ شہناز شیخ نے معافی مانگ لی تھی۔ تاہم بترا کی جانب سے گزشتہ ہفتے یہ بیان سامنے آیاکہ پی ایچ ایف بھی معافی مانگے۔

انھوں نے واضح کرتے ہوئے کہاتھا کہ دوسری صورت میں ہندوستان، پاکستان کے ساتھ کوئی دوطرفہ سیریز نہیں کھیلے گا اورنہ ہی ہاکی انڈیا لیگ میں پاکستانی کھلاڑیوں کو نمائندگی دی جائے گی۔ پی ایچ ایف کے حال ہی میں منتخب سکریٹری شہباز سینئر نے جواب میں کہا تھا کہ بترا سے معافی نہیں مانگیں گے، اگر انھیں کوئی مسئلہ ہے تو پی ایچ ایف کو تحریری طور پر مطلع کرے لیکن اس طرح کا طرز عمل ناقابل برداشت ہے۔ 1994ء ورلڈ کپ کے ہیرو شہباز نے کہا کہ بترا کابیان مکمل طور پر کھیلوں کے آداب کے منافی ہے اور ایف آئی ایچ کو اس کا سخت نوٹس لینا چاہئے۔ اس معاملے پر ایف آئی ایچ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر کیلی فیئر ویدر نے کسی بھی قسم کا کردار ادا کرنے سے معذرت کرتے ہوئے دونوں بورڈز کو آپس میں معاملہ حل کرنے کا مشورہ دیا۔ ہاکی انڈیا لیگ میں کھلاڑیوں کی نیلامی کے سلسلے میں ہندوستانی دارالحکومت نئی دہلی میں موجود فیئر ویدر نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ گزشتہ سال کی چمپینس ٹروفی میں پیش آئے واقعے پر دونوں بورڈز آپس میں مل بیٹھ کر کوئی حل نکال لیں۔ ایف آئی ایچ اُن کے درمیان مفاہمت کا ارادہ نہیں کرے گی۔ انھوں نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہاکہ یہ دونوں بورڈز کا آپسی معاملہ ہے اور ایف آئی ایچ کی نظر میں یہ واقعہ ختم ہوچکا ہے۔ اس موقع پر انہوں نے مزید کہا کہ ہماری اصل دلچسپی پاکستانی ہاکی کی نئی قیادت اور انتظامیہ میں ہے اور ہمیں امید ہے کہ وہ پاکستان ہاکی کو نئی سوچ کے ساتھ لے کر آگے بڑھیں گے اور اسے دوبارہ فتوحات کی جانب گامزن کر دیں گے۔

TOPPOPULARRECENT