Monday , January 22 2018
Home / دنیا / یورپی قائدین انسداد دہشت گردی کے ’ایکشن پلان‘ پر متفق

یورپی قائدین انسداد دہشت گردی کے ’ایکشن پلان‘ پر متفق

برسلز ، 13 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) فرانس میں گزشتہ ماہ کے دہشت گردانہ واقعات کے تناظر میں یورپی قائدیننے دہشت گردانہ واقعات کی حوصلہ شکنی کیلئے وسیع پیمانے پر نئے اقدامات کی منظوری دی ہے۔ نئے ’ایکشن پلان‘ کے چند حصوں کی یورپی پارلیمنٹ سے منظوری ابھی باقی ہے۔ کل یہاں یورپی یونین قائدین نے انسدادِ دہشت گردی کیلئے مختلف اقدامات کی منظ

برسلز ، 13 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) فرانس میں گزشتہ ماہ کے دہشت گردانہ واقعات کے تناظر میں یورپی قائدیننے دہشت گردانہ واقعات کی حوصلہ شکنی کیلئے وسیع پیمانے پر نئے اقدامات کی منظوری دی ہے۔ نئے ’ایکشن پلان‘ کے چند حصوں کی یورپی پارلیمنٹ سے منظوری ابھی باقی ہے۔ کل یہاں یورپی یونین قائدین نے انسدادِ دہشت گردی کیلئے مختلف اقدامات کی منظوری دی۔ اِن کے حوالے سے قائدین کی جانب سے مشترکہ بیان میں کہا گیا کہ یورپ میں تمام شہریوں کا یہ حق ہے کہ وہ خوف کے بغیر اور آزادی کے ساتھ زندگی بسر کرنے کے علاوہ گھومیں پھریں۔ اِس بیان میں یورپی شہریوں کے ان کے عقیدے اور اپنی رائے رکھنے کے کامل حق کا بھی ذکر کیا گیا ہے۔

قائدین نے واضح کیا کہ وہ اپنی مشترکہ اقدار کا تحفظ کریں گے اور اِن کو مذہبی بنیادوں پر نقصان پہنچانے کے پُرتشدد اقدامات سے محفوظ رکھیں گے۔ یورپی یونین کے انسدادِ دہشت گردی کے نگران اعلیٰ ترین عہدہ دار ژِل ڈی کیرشوف نے نیوز ایجنسی اے پی کو بتایا کہ یورپی قائدین نے جس لائحہ عمل پر اتفاق کیا ہے، اُس میں شامل کچھ اقدامات کی ابھی یورپی پارلیمنٹ سے منظوری حاصل کرنا باقی ہے۔

کیرشوف کے مطابق منظوری کے بعد اِن اقدامات کے نفاذ سے یورپ میں عام لوگ خود کو زیادہ محفوظ خیال کریں گے۔ اس یورپی اہلکار کا خیال ہے کہ نئے ایکشن پلان سے یونین کے رکن ممالک کی داخلی سلامتی میں دراڑوں کو بند کرنے میں آسانی ہو گی۔ کیرشوف نے 28 رکنی یورپی یونین کو گزشتہ ماہ ایک خصوصی رپورٹ بھی پیش کی تھی اور اِس رپورٹ میں انہوں نے یورپی یونین کی رکن مملکتوں کو درپیش خطرات اور داخلی سلامتی کے بارے میں تجاویز پیش کی تھیں۔ رواں برس جنوری میں پیش کردہ رپورٹ میں کیرشوف نے یورپی اقوام کو متنبہ کیا تھا کہ اِس وقت یورپ کو ناقابلِ یقین حد تک سنگین نوعیت کے کثیرالجہتی دہشت گردانہ خطرات کا سامنا ہے اور اگر اِن پر قابو نہ پایا گیا تو حالات بہت زیادہ بگڑ سکتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT