Tuesday , December 11 2018

یوسف پٹھان کے کے آر کیلئے ’’ٹرمپ کارڈ‘‘

نئی دہلی 19 اپریل (سیاست ڈاٹ کام ) یوسف پٹھان کو آئی پی ایل کے جاری ایڈیشن میں اپنی جارحانہ بیٹنگ کے مظاہرے کا موقع نہیں مل سکا لیکن کولکتہ نائیٹ رائیڈرس بولنگ کنسلٹنٹ وسیم اکرم کا یہ احساس ہے کہ ’’آل راونڈر‘‘ اب بھی ٹیم کے ’’ٹرمپ کارڈ‘‘ ثابت ہوں گے ۔ وہ مختصر ترین کرکٹ فارمٹ میں ایک عظیم دھواں دار بیٹسمین ہیں۔ دولت سے مالا مال آئ

نئی دہلی 19 اپریل (سیاست ڈاٹ کام ) یوسف پٹھان کو آئی پی ایل کے جاری ایڈیشن میں اپنی جارحانہ بیٹنگ کے مظاہرے کا موقع نہیں مل سکا لیکن کولکتہ نائیٹ رائیڈرس بولنگ کنسلٹنٹ وسیم اکرم کا یہ احساس ہے کہ ’’آل راونڈر‘‘ اب بھی ٹیم کے ’’ٹرمپ کارڈ‘‘ ثابت ہوں گے ۔ وہ مختصر ترین کرکٹ فارمٹ میں ایک عظیم دھواں دار بیٹسمین ہیں۔ دولت سے مالا مال آئی پی ایل میں یوسف پٹھان نے ابتدئی تین سیزن کے دوران شین وان کی قیادت میں راجستھان رائلز کی نمائندگی کی اور بہترین کھیل کا مظاہرہ کیا ۔ 2011 میں کے کے آر نے 2.1 ملین ڈالرس میں انہیں حاصل کیا تھا۔ اس کے بعد سے وہ شاہ رخ خاں کی ملکیت کے کے آر کی نمائندگی کررہے ہیں اور 2012 و 2014 میں ٹیم کو ٹائٹل کامیابی دلانے میں انہوں نے اہم رول ادا کیا ۔

بروڈہ سے تعلق رکھنے والے یوسف پٹھان جاری سیزن میں اب تک کوئی خاص مظاہرہ نہیں کرپائے لیکن کنگس الیون پنجاب کے خلاف ٹیم کی چار وکٹس سے کامیابی کے وقت انہوں نے 28 ناٹ آوٹ کے ذریعہ اہم رول ادا کیا تھا اور اینڈرے رسل (66) کے ساتھ 95 رنز کی پارٹنر شاپ نبھائی تھی۔ وسیم اکرم نے کہا کہ یوسف پٹھان پھر ایک بار بڑا اسکور کرنے کے لئے تیار ہیں۔ وہ 32 کے ہیں اور اب بھی ٹیم میں ٹرمپ کارڈ کی حیثیت رکھتے ہیں۔ 20ٹوئنٹی فارمٹ کے وہ جارحانہ بیٹسمین ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹیم میں یوسف پٹھان کی موجودگی کافی اہمیت رکھتی ہے ۔ وہ بولنگ بھی کرسکتے ہیں اور اُن کی فیلڈنگ بھی کافی اچھی ہے ۔ سلطان آف سوئنگ وسیم اکرم کو آف اسپنر سنیل نارائن کے تبدیل شدہ بولنگ ایکشن پر بھی کافی بھروسہ ہے ۔ ان کے ’’دوسرا ‘‘ پرگذشتہ سال چیمپئنس لیگ 20 ٹوئنٹی میں کئی سوالات اٹھائے گئے تھے ۔

ویسٹ انڈیز کے ایک کھلاڑی نے تین مقابلوں میں اب تک صرف ایک وکٹ لی ہے لیکن وسیم اکرم کا کہنا ہے کہ چیمپئن بولر نے اپنا ایکشن تبدیل کیا ہے اس لئے انہیں اس کا عادی ہونے میں کسی قدر وقت درکار ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ سنیل نارائن کو مزید دو یا تین میچس کھیلنے دیجئے اس کے بعد اُن کا مظاہرہ خود بہ خود بہتر ہوگا۔ وسیم اکرم کو اس بات کی بھی خوشی ہے کہ انہیں نے باصلاحیت کھلاڑیوں کو تیار کرنے میں اہم رول ادا کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کوئی بولر اسپنر ہو یا فاسٹ بولنگ کرتا ہو اُن کا کام یہی ہے کہ کھلاڑی میں اعتماد پیدا کرے اور متعلقہ شعبہ میں مہارت لائے ۔ انہوں نے مختلف کھلاڑیوں کے نام لئے اور کہا کہ نیٹ پریکٹس کے دوران ان سب کو ایک دوسرے سے سیکھنے کا موقع ملا۔

TOPPOPULARRECENT