Sunday , December 17 2017
Home / شہر کی خبریں / یونیفارم سیول کوڈ یا یکساں سیول کوڈ فسطائی طاقتوں کا نظریہ

یونیفارم سیول کوڈ یا یکساں سیول کوڈ فسطائی طاقتوں کا نظریہ

یکساں سیول کوڈ پر شعور بیداری اجلاس، جناب عثمان شہید ایڈوکیٹ کا خطاب

حیدرآباد۔12ڈسمبر(سیاست نیوز)یونیفارم سیول کوڈ یا پھر یکساں سیول کوڈ فسطائی طاقتوں کا ایک نظریہ ہے جس کو قانون کی شکل دیکر مسلمانو ںکے مذہبی معاملات میںمداخلت کی جاسکے گی مگر دستور ہند کے مطابق اس قسم کے قانون کا نفاذ جمہوری ہندمیںممکن نہیںہے ۔ سینئر ایڈوکیٹ ہائی کورٹ و صدر کل ہند مسلم فرنٹ عثمان شہید نے اُردو گھر مغل پورہ میں یکساں سیول کوڈ کے خلاف شعور بیداری اور دفعہ 498-Aخاندانوں کی تباہی کا سبب کے عنوان سے منعقدہ جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے ان خیالات کا اظہار کیا۔ عثمان شہیدنے کہاکہ نفرت کی سیاست کرنے والوں نے اقتدارحاصل کرنے کے لئے یکساں سیول کوڈ کی حمایت کرتے ہوئے اقتدار میں آنے کے بعد اس کو نافذ کرنے کا بھی عوام سے وعدہ کیا تھا ۔ یونیفارم سیول کوڈ یا پھر یکساں سیول کوڈ ایک نظریہ ہے جس کا مقصد ایک ملک‘ ایک مذہب اور ایک زبان کو قانونی شکل دیکر اکھنڈ بھارت کا قیام عمل میںلانا ہے، جس کوہند و راشٹر کانام دیا جاسکے۔عثمان شہید نے کہاکہ آر ایس ایس کے لئے لوگ1933سے یہ خواب دیکھتے آرہے ہیں اور اب مرکز میںنریندر مودی حکومت کے اقتدار میں آنے کے بعد آرایس ایس کی فرقہ پرست ذہنیت تیزی کے ساتھ اس پر کام کرنے لگی ہے۔صدر تحریک مسلم شبان مشتاق ملک نے کہاکہ معاشرتی خرابیوں کو دور کرتے ہوئے فرقہ پرستوں کے منصوبوں کو ناکام بنایاجاسکتا ہے۔ شادیوں میں بیجا اصراف کے سبب حساس شہر حیدرآباد میں ہزارو ںکی تعداد میںلڑکیاں کنواری ہیں۔ معاشرے میںجہاں تین لاکھ روپئے تک کی رقم صرف شادی خانوں کے کرایوں میںصرف کی جاتی ہے تو وہاں پر شادی کے دیگر اخراجات کتنے مہنگے ہوں گے ۔شادیوںکو بیجا اصراف کے ذریعہ مشکل بنانے کی وجہہ سے آج ہزار وں کی تعداد میںلڑکیاں اپنے گھروں میںکنواری بیٹھی ہیں ۔ صدر دکن وقف پروٹکشن سوسائٹی عثمان بن محمد الہاجری نے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے یونیفارم سیول کوڈ کے خلاف چلائی جارہی تحریک میںہر ممکن تعاون کرنے کا اعلان کیا۔مسلمانوں کے مذہبی معاملات میں مداخلت ہمارے لئے ناقابلِ برادشت ہے ۔ انہوں نے مزیدکہاکہ کل ہند مسلم فرنٹ کی جانب سے جو تحریک شروع کی گئی ہے اس میں دکن وقف پروٹکشن سوسائٹی کا ہر ممکن تعاون رہے گا۔ انہوں نے اس موقع پر اوقافی جائیدادوں کی صیانت کے لئے حکومت تلنگانہ کی جانب سے موثر اقدامات کو بھی ضروری قراردیا۔مولوی علا الدین انصاری ایڈوکیٹ‘ سیدکریم الدین شکیل ایڈوکیٹ‘ مجاہد ہاشمی‘ محمدعلی تنظیم آواز او ردیگر نے بھی اس جلسہ عام سے خطاب کیا۔

TOPPOPULARRECENT