Saturday , November 25 2017
Home / سیاسیات / یو پی میں انتخابی نعروں کی مسابقت

یو پی میں انتخابی نعروں کی مسابقت

پرکشش نعروں کے لیے ماہرین کی خدمات سے استفادہ ، تمام سیاسی پارٹیوں میں نعروں کا مقابلہ

لکھنو۔18 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) یو پی میں تمام سیاسی پارٹیاں پرکشش نعروں کے ذریعہ اپنی حریف سیاسی پارٹی کو شکست دینا چاہتی ہیں۔ چنانچہ آج کل برقی میڈیا اور سوشل میڈیا پر پرکشش نعروں کی بھرمار ہے۔ جیسے ’’اکھلیش کا جلوہ قائم ہے، اس کا باپ ملائم ہے‘‘ ،  ’’بیٹیوں کو مسکرانے دو بہن جی کو آنے دو‘‘ ، ’’اب کی بار تین سو کے پار‘‘ وغیرہ وغیرہ۔ اس کا آغاز سابقہ برسوں میں سادہ انداز میں ہوا تھا لیکن آج رائے دہندوں کو ترغیب دینے کے لیے ماہرین کی خدمات حاصل کی جارہی ہیں جو سیاسی پارٹیوں کے لیے پرکشش نعرے اچھے الفاظ میں تحریر کرتے ہیں۔ تاہم اس میں حریف سیاسی پارٹیوں پر طنز ہوتا ہے۔ نائب صدر کانگریس راہول گاندھی نے ارہرمودی کا نعرہ دیا تھا کیوں کہ بی جے پی والے ہرہر مودی گھر گھر مودی کا نعرہ لگارہے تھے۔ علاوہ ازیں انہوں نے مودی حکومت کو ہمیشہ سوٹ بوٹ کی سرکار کہا ہے تاکہ بی جے پی کی مرکزی حکومت کے دور میں افراط زر میں اضافہ کو تنقید کا نشانہ بنایا جاسکے۔ نوٹوں کی تنسیخ کے بعد کانگریس نے نیا نعرہ غریبوں کو کھینچو امیروں کو سینچوں اور قبل ازیں نعرہ دیا گیا تھا قرضہ معاف بجلی بل ہاف اور ایم ایس پی کا کرو حساب۔ یو پی میں جہاں بجلی طویل وقفہ کے لیے بند ہوتی رہتی ہے اور جہاں انتخابی نعرہ دیا گیا ہے ’’27 سال یو پی بے حال‘‘ ۔

بی جے پی اب بھی مودی کے چہرے پر انحصار کررہی ہے۔ یو پی میں کسی کو بھی چیف منسٹری کا امیدوار ظاہر نہیں کیا گیا ہے۔ صرف ریاست میں تبدیلی لانے کی بات کی جارہی ہے۔ وہ چاہتے ہیں کہ گزشتہ 14 سال کے بن واس کے بعد اقتدار پر قبضہ کرنے ایک اور نعرہ یہ بھی ہے ’’ اب کی بار مودی سرکار‘‘ اور ’’اب کی بار تین سو کے پار‘‘ یعنی قطعی اکثریت حاصل ہوگی۔ ایک نعرہ دیا گیا ہے کہ ساتھ آئیں پریورتن لائیں ، کمل کھلائیں اور جن جن کا سنکلپ پریورتن ایک وکلپ اس کے علاوہ دو باتیں کہنا نہ بھول نریندر مودی اور کمل کا پھول۔ بی جے پی کے قائدین وسیع پیمانے پر 403 رکنی اسمبلی میں قطعی اکثریت کے لیے زور دے رہے ہیں تاکہ یہ کسی دبائو کے بغیر کام کرسکے چنانچہ بی جے پی کا نیا نعرہ ہے ۔ نہ یکائی نہ دہائی پورے دوتہائی اور گلی گلی میں ہے شور جنتاچلی بھاجپا کی اوور۔ اس بار بی ایس پی نے بھی بعض دلچسپ نعرے تخلیق کیے ہیں۔ بی جے پی زیادہ تر ترقی پر زور دے رہی ہے۔ ذات پات اور فرقہ وارانہ سیاست سے گریز کررہی ہے۔ پارٹی نے نعرے دیئے ہیں چھوڑ غنڈوں کا ساتھ مہر لگے گی ہاتھی پر۔

TOPPOPULARRECENT