Thursday , September 20 2018
Home / ہندوستان / یکساں سیول کوڈ کے معاملہ میں عقیدہ کو مسلط نہیں کیا جاسکتا : سپریم کورٹ

یکساں سیول کوڈ کے معاملہ میں عقیدہ کو مسلط نہیں کیا جاسکتا : سپریم کورٹ

نئی دہلی ۔ 19 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ نے آج کہا کہ شخصی ایقان اور عقیدہ کا احترام کیا جانا چاہئے لیکن قانون پر عمل آوری کے معاملہ میں انہیں مسلط نہیںکیا جاسکتا۔ عدالت نے یکساں سیول کوڈکے تصور کو حقیقی شکل دینے کے معاملہ میں مختلف فرقوں کے مابین بڑھتے متضاد نقطہ نظر پر تشویش ظاہر کی۔ چیف جسٹس پی ستہ سیوم نے مرکز کی جانب سے گود

نئی دہلی ۔ 19 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ نے آج کہا کہ شخصی ایقان اور عقیدہ کا احترام کیا جانا چاہئے لیکن قانون پر عمل آوری کے معاملہ میں انہیں مسلط نہیںکیا جاسکتا۔ عدالت نے یکساں سیول کوڈکے تصور کو حقیقی شکل دینے کے معاملہ میں مختلف فرقوں کے مابین بڑھتے متضاد نقطہ نظر پر تشویش ظاہر کی۔ چیف جسٹس پی ستہ سیوم نے مرکز کی جانب سے گود لینے کے قانون کی منظوری کی ستائش کی، جس میں کسی بھی مذہب سے تعلق رکھنے والے کو بچہ گود لینے کی اجازت ہے اور یہ یکساں سیول کوڈ کی سمت ایک چھوٹا سا قدم ہے۔ عدالت نے کہا کہ دستور کی دفعہ 44 (یکساں سیول کوڈ) کے معاملہ میں شخصی ایقان اور عقیدہ کا احترام کیا جانا چاہئے لیکن انہیں قانون کی عمل آوری کے معاملہ میں مسلط نہیں کیا جاسکتا۔ عدالت نے کہا کہ یکساں سیول کوڈ کو قابل عمل بنانے کے معاملہ میں اب تک کوئی پیشرفت نہیں ہوئی اور مختلف فرقوں کے مابین اختلاف رائے بڑھتا جارہا ہے۔

جیہ للیتا کے پیروں پر گرجاؤں گی
نلنی کی ماں
چینائی ۔ 19 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) راجیو گاندھی قتل مقدمہ میں مجرم نلنی کی ماں پدما نے اسے رہا کرنے حکومت ٹاملناڈو کے فیصلہ کا خیرمقدم کیا اور اسے غیرمعمولی قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ جیہ للیتا سے جہاں بھی ان کی ملاقات ہو وہ ان کے پیروں میں گر پڑیں گی۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ نلنی اس جرم میں ملوث نہیں ہے۔

TOPPOPULARRECENT