Sunday , December 17 2017
Home / دنیا / یہودیوں کو بچانے والے عرب مسلم کیلئے اسرائیلی اعزاز

یہودیوں کو بچانے والے عرب مسلم کیلئے اسرائیلی اعزاز

تل ابیب۔ 27 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) اسرائیل نے پہلی بار ایک ایسے عرب مسلم باشندے کو احتراماً ایک اعزاز دیا ہے، جس نے کئی دہوں پہلے نازی جرمن دور میں ہولوکاسٹ کے دوران بہت سے یہودیوں کی جان بچائی تھی۔ دوسری عالمی جنگ کے دوران یہ عرب باشندہ برلن میں مقیم تھا۔یہ اعزاز ڈاکٹر محمد حلمی کے رشتے کے ایک پوتے ناصر قطبی نے وصول کیاجرمن دارالحکومت برلن سے جمعہ 27 اکٹوبر کو ملنے والی رپورٹوں کے مطابق یہ عرب ڈاکٹر ایک مصری مسلمان تھا، جسے اس کی بے مثال انسان دوستی کے اعتراف میں یہ منفرد اعزاز اس کے انتقال کے 35 برس بعد دیا گیا ہے۔ڈی پی اے کے مطابق اس مصری شہری کا نام ڈاکٹر محمد حلمی تھا، جو جولائی 1901ء￿ میں خرطوم میں پیدا ہوا تھا اور جس کا انتقال جنوری 1982ء میں ہوا تھا۔ ڈاکٹر حلمی وہ پہلے عرب شہری ہیں، جن کے قابل تعریف اقدامات کے باعث اسرائیل نے ان کا نام ہزاروں افراد کے ناموں کی ایک سرکاری یادگاری فہرست میں شامل کیا ہے۔جرمن دارالحکومت برلن میں اسرائیلی سفارت خانے میں منعقدہ ایک تقریب میں جمعرات 26 اکٹوبر کی شام ڈاکٹر محمد حلمی کو Righteous Among the Nations یا ’اقوام میں سے راست قدم‘ کے خطاب سے نوازا گیا۔کئی سال تک جاری رہنے اور کروڑوں انسانوں کی ہلاکت کا سبب بننے والی دوسری عالمی جنگ کے دوران، جب جرمنی میں برسراقتدار نازی یہودیوں کے قتل عام یا ہولوکاسٹ کے مرتکب ہو رہے تھے، ڈاکٹر محمد حلمی برلن ہی میں رہتے تھے۔اسرائیل میں یہ اعزاز ہولوکاسٹ کی ’یاد واشیم‘ کہلانے والی قومی یادگار کی طرف سے دیا جاتا ہے۔ برلن منعقدہ تقریب میں جرمنی میں تعینات اسرائیلی سفیر جیریمی اِساشاروف نے بعد از مرگ دیا جانے والا یہ اعزاز ڈاکٹر محمد حلمی کے رشتے کے ایک پوتے کے حوالے کیا۔ڈی پی اے نے لکھا ہے کہ ’یاد واشیم‘ ہولوکاسٹ میموریل 35 برس قبل انتقال کر جانے والے اس مصری مسلمان ڈاکٹر کو 2013ء میں ہی یہ ایوارڈ دینا چاہتا تھا لیکن ابتدا میں حلمی کے خاندان نے یہ اعزاز وصول کرنے سے انکار کر دیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT