Friday , May 25 2018
Home / مذہبی صفحہ / ۱۲ ربیع الاول یوم میلاد یا یومِ وصال…؟

۱۲ ربیع الاول یوم میلاد یا یومِ وصال…؟

سوال : وضاحت فرمادیں کہ ۱۔ عیدمیلادالنبیﷺ کس حد تک منانا جائز ہے ؟
۲۔ کیا اس موقع پر جلوس نکالنا ، آتش بازی کرنا ، دف اور ڈھول وغیرہ بجانا جائز ہے ۔ ۳۔ کیا حضور اکرم ﷺ کی
حیات ظاہری میں اور آپ کے بعد صحابہ کرامؓ نے بھی جشن میلاد منایا ؟ ۴۔ ۱۲ ربیع الاول یوم میلاد منایا جائے یا یومِ وصال؟

رسول اﷲ ﷺ کی آمد و پیدائش کی خوشیاں منانا نہ صرف جائز بلکہ فرض ہیں۔ فرمان باری تعالیٰ ہے : قل بفضلک
’’فرمادیجئے : ( یہ سب کچھ ) اﷲ کے فضل اور اس کی رحمت کے باعث ہے ( جو بعثتِ محمدی ﷺ کے ذریعے تم پر ہوا ہے ) پس مسلمانوں کو چاہئے کہ اس پر خوشیاں منائیں، یہ اس ( سارے مال و دولت) سے کہیں بہتر ہے جسے وہ جمع کرتے ہیں‘‘۔
مذکورہ آیت میں فلیفرحوا صیغہ امر مذکر غائب معروف ہے اور شریعت میں امر ، وجوب کے لئے آتا ہے ، لہذا سرکارﷺ کی تشریف آوری پر اور میلادپاک پر خوشیاں منانا حکم خداوندی کے مطابق فرض ہے۔ جیسے نماز فرض ہے ۔ رہی یہ بات کہ کس حد تک ؟ اسلامی احکامات و ہدایات کی بنیاد ہی اعتدال و توازن پر ہے اور اس کے احکام افراط و تفریط سے پاک ہیں۔ جیسے ارشاد باری تعالیٰ ہے : ’’کھاؤ اور پیو اور حد سے زیادہ خرچ نہ کرو ‘‘۔ (الاعراف:۳۱)
نماز قائم کرو مگر حد سے آگے نہ بڑھو ، اس سے مراد اوقات مکروہہ میں ادا نہ کرنا ۔ نیند کاغلبہ ہو ، بھوک کی شدت ہو ، قضائے حاجت کی ضرورت ہو تو پہلے ان سے فارغ ہو پھر نماز پڑھو، نماز پڑھ چکو تو وہیں فضول بیٹھے نہ رہو بلکہ زمین میں پھیل جاؤ اور رزق تلاش کرو ۔ روزی کماؤ ۔ پس فلیفرحوا کے تحت خوشی منائیں مگر جس قدر ممنک ہے اور جس کیشرعاً اجازت ہے ، جس سے باقی فرائض کی ادائیگی متاثر نہ ہو ۔ حسب توفیق کھانے کھلائیں، چراغاں کریں ، بیماروں ، عیالداروں اور فقراء و مساکین کی حسب توفیق مالی ، جسمانی ، علمی اور روحانی مدد کریں۔ اس میں ( ماسوائے جارحین و مرتدین کے) انسان ، حیوان ، مسلمان اور غیرمسلم سبھی شامل ہیں۔ جلسہ و جلوس کریں، سیمنارز کریں ، اجتماعات کریں، غریبوں ، مسکینوں کی مالی اعانت کریں ، طلبہ کے تعلیمی اخراجات پورا کرنے میں ان کی مدد کریں ، قرآن اصولی ہدایت دیتا ہے اسی طورپر خوشیاں منائیں ، کس انداز سے خوشیاں منائیں ہر دور اور ہرعلاقے کے اپنے طورطریقے اور تقاضے ہیں۔ لیکن اس امر کا لحاظ رہے کہ خوشی منانے کا کوئی ایسا طریقہ نہ ہو جو شرعاً منع ہے ۔
۲۔ حضور اکرم ﷺ کی آمد کی خوشی میں جلوس نکالنا بھی اظہار مسرت کا ایک اندازہے اور شرعاً بالکل جائز ہے ۔ آج تو ہر فرقہ ، جماعت اور گروہ جلسہ و جلوس ، سیمینار ، مدارس کے سالانہ اجتماعات ، سیرۃ النبی ﷺ کے جلسے وغیرہ کرتے ہیں۔ میلادشریف پر کیوں اور کس دلیل شرعی سے اعتراض کیا جاتا ہے حالانکہ اس کو منانے کا اﷲ پاک اور اس کے رسول ﷺ نے قرآن و حدیث میں حکم دیا۔ خوشی منانے کے تمام طریقے جن سے احکام شریعت کی خلاف ورزی نہ ہو جائز بلکہ مناسب تر ہیں۔ خوشیاں منانے کا یہ بھی ایک انداز ہے اور اﷲ پاک نے اس کا حکم دیا ہے جو منع کرے وہ دلیل قرآن و سنت سے لائے ۔
۳۔ آدم علیہ السلام سے لے کر مسیح علیہ السلام تک اور صحابہ کرام سے لے کر آج تک سبھی نے ذکر رسول ﷺ کیا۔ خوشخبریاں دیں ، دعائیں مانگیں۔ نیز جائز و ناجائز کا تعلق زمان و مکان سے نہیں دلیل شرعی سے ہے ۔ یہ اصول سرے سے غلط ہے کہ جو کچھ اس دور میں تھا جائز تھا اور جو بعد میں ہو وہ ناجائز ہے۔ یہ اصول قرآن و سنت میں کہیں بھی نہیں۔ اصول یہ ہے کہ جو قرآن و سنت کی دلیل سے درست ہے تب ہو یا اب ، جائز ہے اور جو قرآن و سنت کے خلاف ہے وہ ناجائز ہے خواہ اُس دور میں ہو خواہ آج… گناہ گناہ ہیں ، جرائم ، جرائم ہیں، دورِ صحابہؓ میں ہوں یا آج … اس دور میں بھی بدکاری ہوئی اور حد قائم ہوئی۔ چوری کا گناہ ہوا اور حد سرقہ جاری ہوئی، قذف یعنی بدکاری کا جھوٹا الزام لگا اور ثبوت پیش نہ کرنے کی صورت میں حد قذف لگی ( اسّی کوڑے) … فساد فی الارض ہوا اور حد شرعی لگی، یہ نہیں کہ حضور ﷺ کے زمانہ میں گناہ نیکیاں بن جاتی تھیں۔ آج بھی جائز و ناجائز کے وہی اصول و قواعد ہیں۔
۴۔ اپنا اپنا مزاج ہے ، سرکارﷺ کی ولادت باسعادت بھی نرالی ہے اور وفات بھی نرالی ہے ۔ ہم دونوں بے مثال موقعوں کا ذکر کرتے ہیں۔ دونوں میں ایک شان و فضیلت ہے اور اصل تو فضائل کا ذکر کرنا ہے، خوشیاں منانے کا حکم تو قرآن کریم سے ہم نے پیش کردیا ہے ، مانعین اور منکرین اپنے دعوے پر دلیل لائیں۔ جائز ہونے کیلئے اتنا ہی کافی ہے کہ شریعت میں خوشیاں منانے کاحکم ہے ، جو منع کرے اس سے ممانعت کی شرعی دلیل مانگیں۔ عیدمیلادالنبی پر علمائے حق کے ویڈیو ، آڈیو ، سی ڈیز وغیرہ سنیں ، خاص طورپر شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہرالقادری کی ’’میلادالنبیﷺ ‘‘ کتاب کا خود بھی مطالعہ کریں اور دوستوں کو بھی مطالعہ کرنے کی دعوت دیں۔ ان تمام سوالات کے تفصیلی جوابات ملیں گے ۔

TOPPOPULARRECENT