Saturday , January 20 2018
Home / ہندوستان / ’پدم ایوارڈس ‘ کا سلسلہ روک دیا جائے، شرد یادو کا متنازعہ تبصرہ

’پدم ایوارڈس ‘ کا سلسلہ روک دیا جائے، شرد یادو کا متنازعہ تبصرہ

نئی دہلی ۔ 13 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) پدم ایوارڈس غیر دیانتدار افراد کو دیئے جانے کا الزام عائد کرنے کے بعد جنتادل (یو) صدر شرد یادو نے یہ کہتے ہوئے ایک نیا تنازعہ کھڑا کردیا ہے کہ پدم ایوارڈس دینے کا سلسلہ روک دیا جانا چاہئے کیونکہ یہ عوام کی اکثریت کے ساتھ امتیاز برتنے کے مترادف ہے۔ شرد یادو نے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ پدم ایوارڈس دینے کا سلسلہ روک دیا جائے۔ یہ ایوارڈس صرف ان لوگوں کو دیئے جاتے ہیں جو حکومت کے حاشیہ بردار ہوتے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ جنتا پریوار دورحکومت میں کسی کو بھی یہ سرکاری اعزاز نہیں دیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت کے صدر جمہوریہ اے پی جے عبدالکلام نے سابقہ وزیراعظم اٹل بہاری واجپائی کو ایوارڈس کے معاملہ میں بے قاعدگیوں کے تعلق سے نوٹ روانہ کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ جاریہ سال ایس سی، ایس ٹی، اقلیتوں اور کسان برادری میں سے کسی کو بھی یہ ایوارڈ نہیں دیا گیا۔ جب انہیں بتایا گیا کہ افسانوی اداکار دلیپ کمار کو جاریہ سال پدم وبھوشن دیا گیا ہے تو شرد یادو نے کہا کہ دلیپ کمار یا امیتابھ بچن جیسی شخصیتیں اپنا منفرد و ممتاز مقام رکھتی ہیں۔ سوشلسٹ لیڈر نے گذشتہ ہفتہ یہ کہتے ہوئے تنازعہ کھڑا کردیا تھا کہ پدم ایوارڈس صرف غیر دیانتدار افراد کو دیئے جارہے ہیں اور انہیں یہ اعزاز دیا جاتا ہے جن کا تعلق سماج کے متمول طبقہ سے ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سماجی اور معاشی طور پر پسماندہ عوام کے ساتھ امتیاز طویل عرصہ سے موجود ہے لیکن جاریہ سال اس نے تمام حدوں کو پار کردیا ہے۔ یہ نریندر مودی زیرقیادت بی جے پی حکومت کا پہلا سال تھا۔ تاہم انہوں نے کسی ایک کا بھی نام لینے سے انکار کیا اور کہا کہ چند افراد یقیناً ایوارڈس کے مستحق تھے لیکن عوام کی اکثریت کو نظرانداز کیا گیا ہے۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ میڈیا نے ان کی بات کو غلط انداز میں پیش کیا۔ انہوں نے کہا تھا کہ ان ایوارڈس کیلئے انتخاب کے طریقہ کار میں دیانتداری نہیں پائی جاتی۔ وہ کبھی بھی اس بحث میں الجھنا نہیں چاہتے۔ کسی بھی ملک میں اس قدر امتیازی رویہ نہیں اپنایا جاتا، جتنا ہندوستان میں ہے۔ انہوں نے جو کچھ کہا وہ کوئی نئی بات نہیں ہے اور طویل عرصہ سے ہمارا یہی موقف ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایوارڈس جنتا پارٹی دورحکومت میں بھی نہیں دیئے گئے۔ جس وقت 1977ء وہ اقتدار پر تھی، ان ایوارڈس سے گریز کیا گیا۔ اسی طرح یونائیٹیڈ فرنٹ حکومت نے بھی 1991ء میں اقتدار سنبھالنے کے بعد یہ ایوارڈس نہیں دیئے۔ شرد یادو نے آر ایس ایس پر بھی تنقید کی ، جس نے جنتا پریوار پر مودی حکومت کے خلاف چھوت چھات کو بڑھاوا دینے کا الزام عائد کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی اقتدار پر آنے کے بعد سے مسلمانوں اور عیسائیوں کے خلاف امتیازی سلوک میں اضافہ ہوگیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT