Monday , January 22 2018
Home / Top Stories / ’’جھوٹ بولنے والوں کو وزیراعظم منتخب نہ کریں‘‘

’’جھوٹ بولنے والوں کو وزیراعظم منتخب نہ کریں‘‘

رام گڑھ 4 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) نریندر مودی کی جانب سے فرقہ پرستی کا زہر گھول دینے کا الزام عائد کرنے کے ایک دن بعد صدر کانگریس سونیا گاندھی نے جوابی وار کرتے ہوئے سوال کیاکہ کیا کسی ایسے شخص کو وزیراعظم کے عہدے کیلئے موزوں سمجھا جاسکتا ہے جو ’’جھوٹ بولتا ہو‘‘۔ اُنھوں نے کہاکہ کانگریس پارٹی فرقہ وارانہ ہم آہنگی میں یقین رکھتی ہے۔

رام گڑھ 4 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) نریندر مودی کی جانب سے فرقہ پرستی کا زہر گھول دینے کا الزام عائد کرنے کے ایک دن بعد صدر کانگریس سونیا گاندھی نے جوابی وار کرتے ہوئے سوال کیاکہ کیا کسی ایسے شخص کو وزیراعظم کے عہدے کیلئے موزوں سمجھا جاسکتا ہے جو ’’جھوٹ بولتا ہو‘‘۔ اُنھوں نے کہاکہ کانگریس پارٹی فرقہ وارانہ ہم آہنگی میں یقین رکھتی ہے۔ ہم ملک کو متحد کرنے میں یقین رکھتے ہیں۔ منقسم کرنے میں نہیں۔ اُنھوں نے کہاکہ اگر کوئی شخص بلند بانگ دعوے کرتا ہے اور کھل کر جھوٹ بولتا ہے تو کیا وہ وزیراعظم کے عہدہ کا اہل ہوسکتا ہے۔ وہ رام گڑھ میں ایک انتخابی جلسہ سے خطاب کررہی تھیں۔ مودی کا نام لئے بغیر جنھوں نے کل سونیا گاندھی کو شاہی امام جامع مسجد دہلی سے ملاقات پر تنقید کا نشانہ بنایا تھا، واضح حوالہ دیتے ہوئے سونیا گاندھی نے کہاکہ ملک کو کئی سنگین مسائل درپیش ہیں جن سے اُسے نمٹنا ہے۔ وہ واضح طور پر کرپشن کے بارے میں کانگریس پر مودی کی تنقید کا حوالہ دے رہی تھیں۔

سونیا گاندھی نے کہاکہ یہ ایک سنگین مسئلہ ہے اور اگر کسی پارٹی نے اِسے کچلنے کے اقدامات کئے ہیں تو یہ یقینی طور پر کانگریس پارٹی ہے۔ وزیراعظم منموہن سنگھ کی زیرقیادت کانگریس نے کئی ترقیاتی اقدامات کئے ہیں اور انفراسٹرکچر کے استحکام کے لئے کئی پروگرام شروع کئے ہیں۔ اُنھوں نے کہاکہ کسی بھی ملک میں غذائی طمانیت قانون کے مماثل قانون نہیں ہے جو رعایتی قیمتوں پر غذائی اجناس کی فراہمی اور بچوں کو ناقص تغذیہ سے تحفظ فراہم کرنے کی ضمانت دیتا ہو۔ اُنھوں نے کہاکہ دیہی روزگار طمانیت اسکیم ملازمت کے مواقع فراہم کرتی ہے۔ صدر کانگریس نے کہاکہ کانگریس نے جنگلات کے حقوق کا قانون بھی منظور کیا ہے تاکہ قبائیلیوں کے مفادات کا تحفظ کیا جاسکے۔ جھارکھنڈ میں ماؤسٹ تشدد کا حوالہ دیتے ہوئے جہاں کے 24 میں سے 20 اضلاع نکسل ازم سے متاثر ہیں۔ سونیا گاندھی نے ان سے اپیل کی کہ ہتھیار ڈال دیں اور اصل دھارے میں واپس آجائیں۔ اُنھوں نے کہاکہ ملک کی ترقی میں تشدد ایک بڑی رکاوٹ ہے اِس لئے وہ اپنے تمام بھائیوں اور بہنوں سے اپیل کرتی ہیں کہ اصل دھارے میں شامل ہوجائیں۔

TOPPOPULARRECENT