Sunday , November 19 2017
Home / کھیل کی خبریں / دوسرے مقابلہ تک پنچ کی طاقت میں اضافہ کرونگا 30 اکٹوبر کو دوسرے مقابلہ کا انتظار ۔ اسٹار ہندوستانی باکسر وجئیندر کا اظہار خیال

دوسرے مقابلہ تک پنچ کی طاقت میں اضافہ کرونگا 30 اکٹوبر کو دوسرے مقابلہ کا انتظار ۔ اسٹار ہندوستانی باکسر وجئیندر کا اظہار خیال

نئی دہلی 11 اکٹوبر ( سیاست ڈاٹ کام ) اپنے پروفیشنل کیرئیر کی شاندار شروعات کے بعد ہندوستان کے اسٹار باکسر وجیندر سنگھ اب 30 اکٹوبر کو اپنے دوسرے مقابلہ کیلئے بے چین ہیںاور ان کا کہنا ہے کہ وہ اس مقابلہ تک اپنے پنچس کے پاور میں کئی گنا اضافہ کرنا چاہتے ہیں۔ وجئیندر نے مانچسٹر سے پی ٹی آئی سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ یہ صرف شروعات ہے ۔ مزید دیکھئے کہ وہ کیا کرتے ہیں اور کیسی پیشرفت کرتے ہیں۔ ان کا آئندہ مقابلہ 30 اکٹوبر کو ہونیو الا ہے ۔ جاریہ ہفتے یا آئندہ ہفتے کے اوائل میں ان کے آئندہ چیلنجر کا نام معلوم ہوگا اور وہ اپنی کارکردگی میں بہتری لانے کی کوشش کرتے رہیں گے ۔ وہ سخت پنچس پر زیادہ توجہ دینگے اور اپنی تکنیک کو بھی بہتر بنائیں گے ۔ کل ہوئے اپنے کیرئیر کے افتتاحی مقابلہ میں وجئیندر نے مقامی سطح پر پسندیدہ باکسر سونی وائیٹنگ کو چار راونڈ کے مقابلہ میں شکست سے دوچار کردیا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ وہ اپنے مقابلوں کے تعلق سے کبھی بھی نروس نہیں ہوتے تاہم ان میں زیادہ جوش تھا اور یہ حقیقت تھی کہ کئی لوگ ہندوستان میں اور مانچسٹر میں بھی ان کا مقابلہ دیکھ رہے ہیں۔لیکن بالآخر سخت مقابلہ اور طاقتور پنچس کی اہمیت تھی اور وہ ایسا کرنے میں کل رات کامیاب بھی رہے ہیں۔ اس مقابلہ کو تیسرے راونڈ میں روک دیا تھا جب وجیندر نے اپنے حریف کو تقریبا پچھاڑ دیا تھا ۔ جس وقت وائیٹنگ سانس درست کرنا چاہ رہے تھے اسی وقت وجیندر نے ان پر پئے در پئے مکے رسید کئے تھے تاہم ریفری نے اسی وقت میچ روک دیا تھا ۔ چوتھے راونڈ میں حیرت انگیز طور پر وائیٹنگ زیادہ جارحیت کے ساتھ میدان میں آئے تھے اور وجیندر کو مشکل پیش آ رہی تھی ۔ لیکن وجیندر نے اپنے اوسان قابو میں رکھے اور بہتر تکنیک کے ساتھ ان کا مقابلہ کیا اور بالآخر کامیابی حاصل کرلی ۔ وجیندر نے کہا کہ مقابلہ سے قبل وائیٹنگ نے بلند بانگ دعوے کئے تھے ۔ وہ سب ان کے ذہن میں تھے تاہم وہ اپنی کارکردگی کے ذریعہ ہی جواب دینا چاہتے تھے اور انہیں خوشی ہے کہ وہ ایسا کرنے میں کامیاب رہے ہیں۔ کل میچ کی حکمت عملی کے تعلق سے وجیندر نے کہا کہ وہ صرف یہ چاہتے تھے کہ اپنے حریف کو مکہ رسید کرنے کی جگہ نہ دی جائے اور وہ اس میں کامیاب رہے ۔ اگر ان کی حکمت عملی درست نہ ہوتی اور وہ اس پر موثر انداز میں عمل آوری کرنے میں کامیاب نہیں ہوتے تو صورتحال مختلف ہوسکتی تھی ۔

TOPPOPULARRECENT