Tuesday , December 11 2018

4 مرتبہ کی چمپین اٹلی 59 برس بعد ورلڈکپ میں رسائی سے محروم

سویڈن سابق چمپئن کے خلاف کامیاب اور ورلڈکپ میں داخل
ناکامی پر دلبرداشتہ اطالوی کپتان بوفون فٹبال سے سبکدوش
روم ۔14 نومبر(سیاست ڈاٹ کام) فیفا فٹ بال ورلڈ کپ 4 مرتبہ اپنے نام کرنے والی اٹلی کی ٹیم تاریخ میں پہلی مرتبہ ایونٹ میں رسائی حاصل کرنے میں ناکام ہوگئی۔کوالیفائنگ راؤنڈ میں سویڈن کے خلاف کھیلا گیا اہم مقابلہ جس میں اٹلی بغیر کسی گول کے برابر رہا، پہلے میچ میں سویڈن نے اٹلی کو ایک شکست دے چکا تھا اسی لیے وہ اب ورلڈ کپ میں رسائی حاصل کرچکاہے۔اٹلی کی فٹبال ٹیم سویڈن سے میچ برابر ہونے کی وجہ سے 59 سال کے بعد پہلی مرتبہ ورلڈکپ میں رسائی حاصل نہ کر سکی، 2018ء کا ورلڈ کپ روس میں کھیلا جائیگا۔اٹلی کی ٹیم یورپ سے پہلے راونڈ میں راست رسائی حاصل نہیں کرپائی تھی، جس کی وجہ سے اسے 2 میچز سویڈن سے کھیلنے پڑے۔ پہلے مقابلے میں سویڈن کی اٹلی کے مقابلے نسبتاً کمزور ٹیم نے اٹلی کو اپنی سر زمین پر ایک گول سے شکست دی تھی۔جس کے بعد اٹلی کی ٹیم کو امید ہو گئی تھی کہ روم میں وہ سویڈن کو ایک سے زائد گول سے شکست دیکر فائنل ورلڈکپ میں رسائی حاصل کرلے گی۔سویڈن نے اس مرتبہ 4 مرتبہ ورلڈ چیمپیئن اٹلی کو ورلڈ کپ سے باہر کردیا۔ اٹلی کی ٹیم 1934، 1938، 1982 اور 2006 میں ورلڈ چیمپئن رہ چکا ہے۔سویڈن فٹ بال ٹیم جو صرف ایک مرتبہ 1958 میں اپنی سرزمین پر کھیلے گئے ورلڈ کپ کے فائنل میچ تک رسائی حاصل کرسکی تھی، لیکن برازیل سے 2 گول کے مقابلے میں 5گول سے شکست برداشت کی تھی۔فٹبال ورلڈ کپ میں رسائی سے محروم ہونے پر اٹلی کے کپتان اور دنیا کے نمبر ون گول کیپر بوفون نے سبکدوشی کا اعلان کر دیا۔ انہیں رواں سال فیفا نے بہترین گول کیپر کے ایوارڈ سے بھی نوازا تھا۔ اطالوی فٹبال ٹیم کی ورلڈ کپ کھیلنے کی امید ختم ہونے کیساتھ اٹلی کے کپتان بوفون کے کیریئر کا بھی اختتام ہوگیا۔ 39 سالہ گول کیپر نے دلبرداشتہ ہو کر سبکدوشی کا اعلان کر دیا۔ بوفون کا شمار دنیا کے بہترین گول کیپرز میں ہوتا ہے۔ انہیں 20 سال کے کیریئر کے دوران متعدد ایوارڈز سے نوازا گیا۔ رواں برس بھی فیفا نے انہیں سال کا بہترین گول کیپر قرار دیا تھا۔ بوفون نے کہا کیریئر ختم ہونے سے قبل آخری مرتبہ ورلڈ کپ کھیلنے کی خواہش تھی جو پوری نہ ہوئی ، وہ فٹبال لیگز میں شائقین کو نظر آتے رہیں گے۔

TOPPOPULARRECENT