Friday , January 24 2020

آسام، اروناچل پردیش، منی پور اور میگھالیہ میں آزادی نعرے رکنے کانام نہیں لے رہے ہیں

شہریت ترمیمی بل کے خلاف شمال مشرق کی ریاستوں میں احتجاج رکنے کا نام نہیں لے رہا جبکہ کل پولیس کی فائرنگ سے دو افراد ہلاک بھی ہو چکے ہیں۔

دہلی میں بھی مختلف علاقوں سے لوگ اکر احتجاج کر رہے ہیں، اور لوگ یہ ثابت کر رہے ہیں کہ قانون آئین کے بنیادی ڈھانچے کے خلاف ہے۔

ہندوستان میں رہنے والے لوگ اپنے ہی علاقہ میں اقلیت میں آئیں گے، اور اس میں خاص طور پر مسلم برادری کے ساتھ وقت کی حکومت نے متعصبانہ سلوک کیا ہے۔

جمعرات کے دن یہ خبر موصول ہوئی کہ آسام کے گوہاٹی میں سیکیورٹی فورسز کی فائرنگ سے تین افراد کو گولی مار دی گئی۔ جبکہ اس علاقہ کرفیو نافذ کردیا گیا ہے ، لوگ مرنے والوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لئے اب اور زیادہ تعداد میں سامنے آرہے ہیں۔

اروناچل پردیش میں کے دارالحکومت اتانگر میں راجیو گاندھی یونیورسٹی سے راج بھون تک پہاڑی خطوں پر ہزاروں طلباء 30 کلومیٹر سے زیادہ پیدل سفر کرکے سی اے بی کے احتجاج اور اس کی فوری اور مکمل تنسیخ کا مطالبہ کررہے ہیں۔

اس کے نتیجے میں ان سیکڑوں شہریوں نے شرکت کی جنھوں نے آسام کی صورتحال کی وجہ سے ایندھن کی کمی کی وجہ سے سڑکوں پر چلنا ایک آسان کام پایا تھا ، جہاں مظاہرے جاری ہیں اور اس سے زیادہ کی منصوبہ بندی پورے ریاست میں کی گئی ہے۔

آج احتجاج کے دوران ’’ آزادی ‘‘ کے نعرے بھی لگائے گئے۔

میگھالیہ کے دارالحکومت شیلونگ میں بھی ہزاروں افراد بل کے خلاف کھڑے ہو گئے ہیں۔

آسام ، میگھالیہ اور تریپورہ کی ریاستی حکومتوں نے موبائل ڈیٹا اور ایس ایم ایس خدمات کو بند کردیا ہے۔

صورتحال اتنی ہی غیر مستحکم ہے اور یہ غم و غصہ ظاہر ہوتا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کا منی پور کا 17 دسمبر کا دورہ ملتوی کردیا گیا ہے اور وزیر داخلہ امیت شاہ کا اروناچل پردیش اور میگھالیہ کا دورہ ملتوی کردیا گیا ہے۔ لیکن غصہ کیوں ہے؟ آئین کے مطابق آسام ، میگھالیہ ، میزورم اور تری پورہ کے قبائلی اکثریتی علاقوں کو چھٹے نظام الاوقات میں شامل کیا گیا ہے اور اندرونی لائن پرمٹ (آئی ایل پی) حکومت کے تحت شامل علاقوں کو بنگال ایسٹرن فرنٹیئر ریگولیشن 1873 کے تحت مطلع کیا گیا ہے۔

اروناچل پردیش ، ناگالینڈ ، میزورم ، اور منی پور میں آئی ایل پی حکومت نافذ ہے جسے حال ہی میں جب سی اے بی کے پاس ہونے کے بعد اس کے دائرہ کار میں لایا گیا۔

شمال مشرق جو خود ہمیشہ موضوع کا بحث بنا رہتا ہے وہاں پر سیکڑوں برادریوں ، قبائلی اور غیر قبائلیوں کا گھر ہے ، جن میں سے ہر ایک کی اپنی تاریخ ، ثقافت اور زبان ہے۔ جبکہ کچھ برادریوں کی تعداد لاکھوں میں ہے ، لیکن زیادہ تر قبائلی برادریوں میں صرف چند ہزار افراد ہیں۔

اس کا موازنہ کچھ یوں کیا جا سکتا ہے کہ آسام جس کا رقبہ 78،438 مربع کلومیٹر ہے اس کی کل آبادی تین کروڑ سے زیادہ (2011 کی مردم شماری کے مطابق) ہے۔ اس کے برعکس صرف 1،484 مربع کلومیٹر رقبے کے ساتھ دہلی میں 1.6 کروڑ سے زیادہ لوگ آباد ہیں۔

ثقافتی اعتبار سے متضاد آبادی کو اس میں شامل کریں ، اور ہمارا یہ حال ہے کہ ہر کمیونٹی ل اپنے حصے کے لئے لڑ رہی ہے۔

اس بات کی حقیقت یہ ہے کہ ہندوستان بنگلہ دیش کے ساتھ ایک متزلزل حدود ہے جس کی وجہ سے آسام کئی دہائیوں سے غیر قانونی امیگریشن کررہا ہے جس نے آسام ایجی ٹیشن کا آغاز کیا اور 1979 میں متحدہ لبریشن فرنٹ آف اسوم (الفا) کو پاس کیا گیا۔

اگرچہ آسام کو سی اے بی کے اثرات کو برداشت کرنا سب سے زیادہ مشکل ہے ، لیکن بنگلہ دیش سے مہاجرین سے پیدا ہونے والی آبادیاتی تبدیلیوں کے اثرات کے بارے میں بھی خدشات پہلے سے موجود ہیں ، اروناچل پردیش اور ناگالینڈ کی ہمسایہ ریاستوں میں بھی ان کی آبادی پھیل جائے گی ، جہاں غیر مقامی آبادی پہلے ہی ایک بڑی تعداد میں آکر بسی ہے۔

اروناچل پردیش اور میزورم میں ایک اور اضافی مسئلہ موجودہ چکما اور حاجنگ آبادی میں بہت سے لوگ اۓ ہیں جو مقامی افراد کےلیے ایک مسئلہ بنے ہوئے ہیں۔

آل اروناچل پردیش اسٹوڈنٹس یونین (اے اے پی ایس یو) کے صدر ہوا باگنگ نے آج دونوں برادریوں کی شہریت کی حیثیت سے حکومت سے ایک ’’ واضح جواب ‘‘ کا مطالبہ کیا۔

آئی ایل پی اور چھٹے شیڈول جیسے ’حفاظتی اقدامات‘ کے باوجود اس طرح کے خدشات بڑھ گئے ہیں۔

اگرچہ ان دفعات کا مطلب یہ ہے کہ جو شہری ان علاقوں اور ریاستوں سے تعلق نہیں رکھتے انہیں خصوصی اجازت نامہ حاصل کرنے کی ضرورت ہے اور وہ غیر منقولہ جائیداد (زمین) کے مالک نہیں ہوسکتے ہیں ، لیکن اس نے مقامی آبادی کے ‘تحفظ’ کے لئے بہت کم کام کیا گیا ہے ، جن میں سے بہت سے افراد کی تعداد ایک لاکھ بھی نہیں ہے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT