Wednesday , January 22 2020

حیدرآباد انکاونٹر کے بارے میں کیا کہتے ہیں عدالت عظمیٰ کے سابق چیف جسٹس؟…

سابق چیف جسٹس آف انڈیا (سی جے آئی) آر ایم لودھی نےحیدرآباد میں ایک 27 سالہ ویٹرنریرین کے ساتھ اجتماعی عصمت دری اور اس کے قتل کے بعد پولیس کے ‘انکاؤنٹر’ سے چاروں ملزموں کے قتل کا حوالہ دیتے ہوئے۔ لودھا نے منگل کے روز کہا کہ جب ہم یوم انسانی حقوق منا رہے ہیں تو اس معاملے میں ہم کو سوچنا ہوگا کہ ہم صحیح معنوں میں انسانی حقوق کا تحفظ کر پا رہے ہیں؟۔۔۔

کیا ہم قانون کو پامال کرنے والے معاشرے کی طرف جارہے ہیں؟ کیا قانون اپنا کام صحیح سے کر رہا ہے؟ آئینی حقوق اور طریقہ کار سے متعلق حفاظتی اقدامات کا اس ملک میں کیا ہو رہا ہے؟، “لودھا نے یہاں انسانی حقوق کے بین الاقوامی انسٹی ٹیوٹ کے زیر اہتمام انسانی حقوق کے عالمی دن کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے یہ سوالات پوچھے۔

انہوں نے مزید کہا کہ لوگ سترہویں صدی میں ہمورابی کے ضابطہ اخلاق پر واپس جا رہے ہیں۔

سپریم کورٹ کے جج جسٹس ڈی وائی۔ چندر چوڑ جو اس تقریب میں موجود تھے انہوں نے انناو عصمت دری سے زندہ بچ جانے والی خاتون کو سڑک پر جلانا اور ملک کے دو پہلوؤں کو پیش کرنے کے لئے حیدرآباد کیس میں مبینہ ملزم کی لاشوں کے منظر کا حوالہ دیا۔

سابق سی جے آئی لودھا نے کہا کہ مجرم گھناؤنے جرائم کرنے سے نہیں ڈرتے اور یہاں تک کہ افسوسناک بات یہ ہے کہ پولیس ‘انکاؤنٹر’ میں چاروں ملزمین کا انکاونٹر کر دیا۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ پولیس اہلکار بھی پوری طرح قصوروار نہیں ہے بلکہ ان کو تلنگانہ کی وزارت کی طرف سے کہا گیا تھا اور انہوں نے وہی کیا جو انہیں کہا گیا تھا۔

انہوں نے سوال کیا کہ کیا ہم انصاف کے صحیح نظام کو قائم کر رہے ہیں؟ لودھا نے کہا ، انناو عصمت دری اور قتل کیس کے ملزموں ساتھ بھی ایسے ہی سلوک کے مطالبے سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ معاشرے میں ہجوم کی ذہنی فضا قائم ہے۔

انہوں نے ملک میں خواتین کی حالت کی حفاظت کے بارے میں بھی بات کرتے ہوئے کہا کہ نربھیا فنڈز میں سے 92 فیصد فنڈز ریاستی حکومتوں کے ذریعہ ابھی تک نہیں پہونچ پاۓ ہیں۔

جسٹس چندرچود نے آرے درختوں کی کٹائی کے واقعے کا حوالہ دیا اور کہا کہ جمہوریت اور عدالتیں مل کر ہی انسانی حقوق کے تحفظ کا باعث بن سکتی ہیں۔

انہوں نے تاکید کی کہ ایک محفوظ اور سستی پبلک ٹرانسپورٹ سسٹم کی ضرورت ہے ، لیکن یہ ایسے ملک میں ماحولیاتی اثرات کو نظرانداز کرکے سامنے نہیں آسکتا جہاں ماحولیاتی تبدیلی ایک اہم مسئلہ بن کر ابھری ہے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT