Friday , January 24 2020

شہریت بل کے خلاف ستیہ گرہ، سابق آی اے ایس افسر نے امت شاہ کو لکھا خط

سابق آئی اے ایس آفیسر ایس ساشیکنت سینتھل نے شہریت ترمیمی بل 2019 نیشنل رجسٹر آف سٹیزنز (این آر سی) کے خلاف ستیہ گرہ کا عوام سے مطالبہ کیا۔

مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ کو سخت الفاظ میں لکھے گئے خط میں ، سینتھل نے اعلان کیا کہ وہ اپنی شہریت ثابت کرنے کے لئے مطلوبہ دستاویزات پیش نہیں کریں گے اور این آر سی کے گنتی کے عمل کو قبول کرنے سے انکار کرتے ہیں۔

انہوں نے یہ بھی کہا ، “اگر ریاست نے مجھے غیر شہری قرار دینے کا انتخاب کیا تو مجھے بھی بہت سارے حراستی مراکز جو آپ پورے ملک میں بنا رہے ہیں کو پُرخوش کرتے ہوئے خوش ہوں گے۔”

انہوں نے شاہ کو نظربند مراکز کی گنجائش بڑھانے کا مشورہ دیا کیونکہ بہت سے لوگ جنوبی افریقہ میں ’’ بابائے قوم ‘‘ کے راستے پر چل رہے ہیں انکے لیے بھی کچھ گنجائش پیدا ہونی چاہیے۔

انہوں نے مزید لکھا کہ آنے والے وقت میں لوگ ایک دوسرے کے لئے کھڑے ہوں گے اور ان کو تقسیم کرنے کی کسی بھی کوشش کے خلاف لڑیں گے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل سینتھل نے یہ کہتے ہوئے سول سروس سے استعفیٰ دے دیا تھا کہ “جب جمہوریت کے بنیادی ڈھانچے کو بے مثال انداز میں سمجھوتہ کیا جارہا ہے تو اس سسٹم کا حصہ بنے رہنا غیر اخلاقی ہے۔

حال ہی میں مہاراشٹر کے آئی پی ایس افسر جناب عبد الرحمن نے شہریت ترمیمی بل 2019 کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے استعفیٰ دے دیا۔

ذرائع کے مطابق ، وہ ممبئی میں آئی جی پی کے عہدے پر تعینات تھے۔ اس بل کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے انہوں نے ٹویٹ کیا کہ یہ بل آئین کی بنیادی حقوق کے خلاف ہے ۔ میں اس بل کی مذمت کرتا ہوں۔ میں نے کل سے دفتر نہ آنے کا فیصلہ کیا ہے۔ میں اپنے عہدے سے استعفی دے رہا ہوں۔

راجیہ سبھا نے بدھ کے روز یہ بل منظور کیا جس میں پاکستان ، بنگلہ دیش ، اور افغانستان سے غیر مسلم تارکین وطن کو شہریت دینے کی کوشش کی گئی ہے۔

لوک سبھا پہلے ہی اس بل کو منظور کرچکی ہے۔

جمعرات کے دن صدر جمھوریہ نے بھی اس بل کو منظوری دی اب یہ بل قانونی شکل اختیار کر چکا ہے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT