Sunday , January 19 2020

فرانس، جرمنی اور برطانیہ ، ایران نیوکلیئر معاہدے پر پابند عہد

پیرس، 13 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) فرانس کے صدر امینوئل میکروں، جرمنی کی چانسلر انجیلا مرکل اور برطانیہ کے وزیر اعظم بورس جانسن نے اتوار کے روز ایک مشترکہ بیان میں کہا کہ وہ ایران جوہری معاہدے کے مشترکہ ایکشن پلان (جے سي پي اواے ) کے سلسلے میں پابند عہد ہیں۔ تینوں رہنماؤں نے ایران سے جوہری معاہدے کے خلاف سبھی اقدامات سے روکنے کی اپیل کی ہے ۔فرانس کے صدر دفتر کے پریس ڈیپارٹمنٹ نے ایک بیان جاری کرکے یہ اطلاع دی۔بیان کے مطابق تینوں رہنماؤں نے کہا کہ ‘‘ہم جے سي پي اواے اور اس کے تحفظ کے سلسلے میں پابند عہد ہیں۔ ہم ایران سے ایسی سبھی سرگرمیوں کو ختم کرنے کی اپیل کرتے ہیں جس سے اس نیوکلیئر معاہدے کو نقصان پہنچتا ہو’’۔فرانس، جرمنی اور برطانیہ نے ایران سے یورینیم کی افزودگی کو آگے نہ بڑھانے اور خطے میں امن اور استحکام برقرار رکھنے کے لئے مذاکرات شروع کرنے کی اپیل کی ہے ۔واضح رہے کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے مئی 2018 میں ایران نیوکلیئر معاہدے سے امریکہ کے الگ ہونے کا اعلان کیا تھا۔ اس کے بعد سے ہی دونوں ممالک کے تعلقات کافی تلخی آگئی ہے و گئے ۔ اس جوہری معاہدے کی التزمات نافذ کرنے کے سلسلے میں بھی شبہ کی صورتحال بنی ہوئی ہے ۔ امریکہ نے ایران پر کئی طرح کی پابندیاں بھی عائد کردی ہیں۔قابل ذکر ہے کہ سال 2015 میں ایران نے امریکہ، چین، روس، جرمنی، فرانس اور برطانیہ کے ساتھ ایک معاہدے پر دستخط کئے تھے ۔ معاہدے کے تحت ایران نے اُس پر عائد اقتصادی پابندیاں ہٹانے کے بدلے اپنے نیوکلیئرپروگرام کو محدود کرنے پر اتفاق ظاہر کیا تھا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT