Saturday , December 5 2020

ہندو جاگرن منچ کے صدر نے تاج محل کے احاطے میں پوجا کی

آگرہ: ہندو جاگرن منچ کے ممبران نے تاج محل میں داخل ہوکر مبینہ طور پر تاریخی یادگار کے احاطے میں شیو کے پوجا کی۔

گنگا جل ، زعفران پرچم

اطلاعات کے مطابق ہندو جاگرن منچ یوتھ ونگ کے صدر گوراو ٹھاکر پانی کی بوتل میں گنگا جل کے ساتھ احاطے میں داخل ہوئے اور اپنی جیب میں بھگوا جھنڈا جوڑ دیا۔

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ویڈیو میں پوجا کرتے ہوئے نظر آرہے ہیں جبکہ منچ کے ایک اور ممبر نے بھگوا پرچم تھامے ہوئے ہیں۔

سی آئی ایس ایف

جلد ہی سی آئی ایس ایف کے اہلکار موقع پر پہنچ گئے اور انہیں اپنے دفتر لے گئے۔ ممبروں کو ایک گھنٹے کی تفتیش کے بعد جانے کی اجازت دی گئی۔

بعدازاں میڈیا افراد سے گفتگو کرتے ہوئے گوراو نے دعوی کیا کہ تاج محل اصل میں شیو مندر تھا وہ تیجو مہالایا تھا۔ انہوں نے یہ بھی انکشاف کیا کہ انہوں نے ماضی میں کم سے کم پانچ بار یادگار کے احاطے میں شیو کی پوجاکی تھی۔

گوراو نے مزید کہا کہ وہ مستقبل میں بھی احاطے میں پوجا کریں گے جب تک کہ حکومت اس یادگار کو ہندوؤں کے حوالے نہیں کرتی ہے۔

تیجو مہالیا

اس طرح کے واقعات پہلے بھی پیش آئے تھے۔ ٹائمز ناو کی خبر کے مطابق 2008 میں شیوسینا کے کارکنان یادگار کے احاطے میں داخل ہوئے تھے اور مذہبی رسومات ادا کیں۔

2018 میں خواتین کے ایک گروپ نے یادگار کے اندر پوجا کی۔

معاشرے کے ایک حصے کا دعوی ہے کہ اس یادگار کو موگال شہنشاہ شاہ جہاں نے ایک ہندو مندر پر تعمیر کیا تھا جسے ’تیجو مہالیا‘ کہا جاتا ہے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT