Saturday , September 21 2019

اہم خبر: کشمیرپرپاکستان کی طرف سےاقوام متحدہ کو سونپے گئے دستاویزمیں راہل گاندھی اورعمرعبداللہ کا بیان شامل

Pakistani Prime Minister Imran Khan attends a meeting with Chinese Premier Li Keqiang, not pictured, on April 28, 2019 at the Diaoyutai State Guesthouse in Beijing, China. Parker Song/Pool via REUTERS

جموں وکشمیرسےدفعہ 370 ہٹانےکے بعد پاکستان کی بوکھلاہٹ کا اندازہ اسی بات سے لگایا جاسکتا ہےکہ اس نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل (یواین ایچ آرسی) میں اس موضوع کو اٹھایا۔ حالانکہ پاکستان کی نمائندگی کررہے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے یہ اعتراف کیا کہ جموں وکشمیرہندوستان کا صوبہ ہے۔ پاکستان نے یواین ایچ آرسی میں پیش کرنےکےلئے کشمیرموضوع پر115 صفحات کے دستاویزتیارکئے تھے۔ یہ دستاویزپاکستان کی میڈیا میں لیک ہوگئے۔ ان دستاویزوں میں کشمیرکولےکردیئےگئےکانگریس لیڈرراہل گاندھی اورنیشنل کانفرنس لیڈرعمرعبداللہ کے بیانات کا بھی ذکرکیا ہے۔

پاکستانی میڈیا کے مطابق دستاویزکے پہلے صفحہ پرہی کانگریس کے سابق صدرراہل گاندھی اورجموں وکشمیرکے سابق وزیراعلی عمرعبداللہ کے جموں وکشمیرمیں کشیدہ حالات کولے کردیئے گئے بیانات کا ذکرکیا گیا ہے۔ دستاویزمیں راہل گاندھی کے اس بیان کو شامل کیا گیا ہے جوانہوں نے دفعہ -370 ہٹائے جانے کے بعد 20 دن بعد دیا تھا۔ راہل گاندھی نے کہا تھا کہ کشمیرکے لوگوں کی آزادی اورجمہوری حقوق کو ختم کئے آج 20 دن ہوچکے ہیں۔ اپوزیشن لیڈراورمیڈیا برسراقتدارکے سفاکانہ ظلم کو دیکھ رہے ہیں۔ جموں وکشمیرکے شہریوں پربریت سے طاقت کا استعمال کیا جارہا ہے۔

عمرعبداللہ کے حوالے سے پاکستانی دستاویزمیں کہا گیا ہے کہ مرکزی حکومت کے یکطرفہ اورحیران کرنے والے فیصلے کے خطرناک نتائج برآمد ہوں گے۔ یہ کشمیریوں کے خلاف ناراضگی ہے۔ یہ فیصلہ یکطرفہ، غیرقانونی اورغیرآئینی ہے۔ ایک بہت مشکل اورلمبی لڑائی سامنے کھڑی ہے۔ ہم اس کے لئے تیارہیں۔ یواین ایچ آرسی میں پاکستان نے ہندوستان کے خلاف تجویزلانے کی بھی تیاری کی ہے۔

پاکستان کے دستاویزپروزیرخزانہ نرملا سیتا رمن نے راہل گاندھی اورعمرعبداللہ کی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ کانگریس ملک کی قدیم پارٹی ہے۔ کانگریس قیادت کو دھیان رکھنا چاہئے کہ جموں وکشمیراورقومی تحفظ سے متعلق موضوعات پرسبھی کوایک آوازمیں بولنا چاہئے۔ کانگریس لیڈروں کی طرف سے جاری کچھ بیانات سے پاکستان کومدد ملی ہے۔ پرانے سیاسی جماعتوں کے طورپرکانگریس کوکسی بھی موضوع پربیان دینے سے قبل کم ازکم پارٹی کے اندرصلاح ومشورہ کرلینا چاہئے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT